PDA

View Full Version : غزل۔۔



رحمان علی
03-13-2015, 12:47 AM
سنا تھا ادھورے لفظوں کو ذیادہ دیر ادھورا نھیں چھوڈتے.
سو آج کافی عرصه سے اپنی ایک ادھوری غذل کے بھٹکتے لفظوں کو منزل دیدی
تاکے میری لفظوں کیساتھ عقیدت مجھے مذید نہ کوسے۔۔
نیک خواھشات کیساتھ اپنے با ذوق احباب کی نظر کر رھا ھوں، رحمــــــــٰن علی

رفیقِ ذندگی تنھائیاں ھیں
یہ سناٹے میری شھنائیاں ھیں

میرا وجدانِ محرم ھے راذِ پنہھاں
میری تنہھا ئی میں بھی گہرائیاں ھیں،،

حقیقت جوبھی ہے،ھے میرے آگے
جو پیچھے رہ گئیں سب پرچھائیاں ھیں،،

حسین ھیں منظرِ عالم انہی سے مشعال
تیرے پیکر کی جو رعنائیاں ھیں

تلاشِ ھیر ہے بیلے میں مجھکو
کہ طعنے دے رھيں بھرجائیاں ھیں

نصیبِ عا شقاں یہی ہے رحمــــــــٰن
زمانے بھر کی جو رسوائیاں ھیں