PDA

View Full Version : غزل



گلاب خان
12-21-2010, 03:57 PM
اب آ گئی ہے ذرا آب و تاب آنکھوں میں

بسا ہے یوں ترا عکس شباب آنکھو ں میں

بہ شکلِ دریا نظر آ رہا ہے صحرا بھی

رواں ہی رہتی ہے موجِ سراب آنکھوں میں

کہا تو تھا نہ نظر بھر کے دیکھ دُنیا کو

اُتر گیا ہے نا آخر عذاب آنکھوں میں

تری نگاہ کی مستی بھی خوب مستی ہے

کہ جیسے رقص کناں ہو شراب آنکھو ں میں

زبان کھولنا محفل میں ہو محال اگر

مرے سوال کا دیدے جو اب آنکھو ں میں

حقیقتوں نے ہر امید کو فسانہ کیا

بہت سجائے تھے ہم نے بھی خواب آنکھوں میں

زباں سے سننے کی حاجت نہیں ہے عابدؔ کو

کھلی ہے آپ کے دل کی کتاب آنکھوں میں

تانیہ
12-21-2010, 04:12 PM
واہ....

این اے ناصر
03-31-2012, 01:35 PM
واہ بہت خوب۔ شکریہ