PDA

View Full Version : کمپیوٹر برق رفتاری



گلاب خان
12-21-2010, 06:46 PM
سائنسداں ہزار گنا تیز کمپیوٹروںکے فراق میں
تیز رفتار سواریوں‘جلد بننے والے کھانوں‘تیز رفتار قلموںاورجلد اثر کرنے والے میک اپ سامان کا دور اب نسبتاّ کم ہے جبکہ امریکی فوج ایک منصوبے کے تحت ایسے کمپیوٹروںکی تیاری پر کام شروع کر رہی ہےجو موجودہ کمپیوٹروںسے ایک دو نہیں بلکہ ہزار گنا تیز ہوں گے۔امریکی فوج کے تحقیقاتی ادارے ’ڈیفنس ریسرچ پروجیکٹس ایجنسی‘ یعنی ڈارپا نے ’ایکسا سکیل‘ نامی نئے تیز رفتار کمپیوٹرز بنانے کے لیے کئی کپمنیوں کو تحقیقات کے لیے رقم فراہم کر دی ہے۔یہاں یہ بتاتے چلیں کہ آج کے سب سے تیز کمپیوٹر کی رفتار ایک ’پیٹا فلاپ‘ یعنی ایک ہزار کھرب کیلکولیشن فی سکینڈ ہے جبکہ ’ایکسا سکیل‘ کمپیوٹروں کی رفتار اس سے ہزار گنا زیادہ یعنی دس لاکھ کھرب کیلکولیشن فی سکینڈ ہو گی۔یوںامریکی فوج کے اس تحقیقاتی منصوبے کو ’یوبِکویٹس ہائی پرفارمنس کمپیوٹنگ پروگرام‘ یعنی ’یو ایچ پی سی‘ کے نام سے جانا جاتا ہے۔اس سلسلے میںامریکی دفاعی ادارے ڈارپا کا کہنا ہے کہ توقع ہے یہ ایکسا سکیل کمپیوٹر 2018 تک تیار ہو جائیں گے۔ ڈارپا کے مطابق اس منصوبے کا مقصد ایسے کمپیوٹر تیار کرنا ہے جو آج کل کے دفاعی اور سکیورٹی ضروریات کو پورا کرنے کے اہل ہو سکیں۔
اس منصوبے کی خاص بات یہ ہے کہ اس میں ایسے کمپیوٹر ہارڈ ویئر تیار کرنے کی کوشش کی جائے گی جو اب تک کے تمام کمپیوٹروںکی ترقیاتی اصولوں سے کہیں بڑھ کر ہوگی۔کمپیوٹر ٹیکنالوجی کے موجودہ اصولوں کے مطابق سلیکون کے ایک ٹکڑے پر ٹرانزسٹروں کی تعداد کو ہر دو سال میں دوگنا کیا جا سکتا ہے۔ اس اندازے کو موؤر کے قانون یعنی ’موؤرز لا‘ کے نام سے جانا جاتا ہے۔اس منصوبے پر کام کرنے والی کمپنیوں کو یہ چیلنج درپیش ہے کہ وہ ایسے سلیکون چِپ ایجاد کریں جو ٹیکنالوجی کی بڑھتی ہوئی ضروریات سے تیز ترین انداز میں نمٹ سکیں۔امریکہ میں فوجی تحقیقاتی ادارے ڈارپا کا کہنا ہے کہ اس منصوبے سے کمپیوٹر ٹیکنالوجی کا ایک نیا اور انقلابی دور شروع ہو جائے گا۔ ڈارپا کے مطابق اس کی کوشش یہ ہے کہ یہ نئی ٹیکنالوجی ’کمپیوٹروںکے ایسے نئے ماڈل تیار کرے جو موجودہ کمپیوٹروں سے نہ صرف زیادہ تیز کام کر سکیں گے بلکہ پروگرامِنگ کے لحاظ سے زیادہ آسان بھی ہوں گے اور بجلی بھی کم خرچ کریں۔‘واضح رہے کہ ایکسا سکیل مشینوں کی ٹیکنالوجی کے ماڈل تیار کرنے کے لیے منتخب کی جانے والی کمپنیوں اور اداروں میں اِنٹیل، نِویڈیا، ایم آئی ٹی اور سینڈیا نیشنل لیبارٹری شامل ہیں۔

تانیہ
12-21-2010, 09:38 PM
نائس شیئرنگ