PDA

View Full Version : پاکستان اور ھندوستان میں مذاکرات معطل



بےباک
08-23-2015, 08:06 AM
’بھارتی شرائط پر مشیران کی بات چیت کا کوئی فائدہ نہیں‘http://ichef.bbci.co.uk/news/ws/660/amz/worldservice/live/assets/images/2015/06/11/150611060708_india_pakistan_indo_pak_640x360_think stock_nocredit.jpg

پاکستان نے کہا ہے کہ بھارتی وزیر خارجہ سشما سوراج کی جانب سے پیشگی شرائط کے بعد دونوں ممالک کے قومی سلامتی کے مشیروں کی دہلی میں مذاکرات کا کوئی فائدہ نہیں ہو گا۔
پاکستان کے اس بیان کے فوری بعد بھارتی وزارتِ خارجہ کے ترجمان وکاس سوروپ نے ٹوئٹر پر اپنے پیغامات میں کہا ہے کہ پاکستان کا یہ فیصلہ بدقسمتی ہے اور بھارت نے کوئی پیشگی شرائط نہیں رکھی تھیں۔
ان کا کہنا ہے کہ’ہم نے صرف اس بات کو دہرایا تھا کہ شملہ اور اوفا معاہدوں کی روح کا خیال رہے جس پر دونوں پہلے سے متفق ہیں۔‘
’مذاکرات کے لیے کشمیریوں سے نہ ملنے کی یقین دہانی لازمی‘ (http://www.bbc.com/urdu/regional/2015/08/150822_india_pak_nsa_talks_would_continue_mb)
’کسی شرط کے بغیر مذاکرات کے لیے بھارت جانے کو تیار ہوں‘ (http://www.bbc.com/urdu/regional/2015/08/150822_sartaj_aziz_press_on_nsa_meeting_sr.shtml)
’سفارت کاری کا معیار بہتر ہونے کی بجائے زوال پذیر‘ (http://www.bbc.com/urdu/multimedia/2015/08/150822_arif_nizami_pak_india_zz)
سنیچر کو پاکستان کے قومی سلامتی کے مشیر سرتاج عزیز کی جانب سے کسی شرط کے بغیر مذاکرات کے لیے بھارت جانے کے اعلان کے بعد بھارتی وزیر خارجہ نے دہلی میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان کی جانب سے دہلی میں حریت رہنماؤں سے ملاقات نہ کرنے اور بات چیت کا دائرہ کار دہشت گردی تک ہی محدود رکھنے کی یقین دہانی کے بعد ہی قومی سلامتی کے مشیروں کے مذاکرات ممکن ہو سکیں گے۔
انھوں نے پاکستان کو یہ یقین دہانیاں کروانے کے لیے سنیچر کی رات تک کی مہلت دی تھی۔
سنیچر کی شب پاکستان کے دفترِ خارجہ کی جانب سے جاری کیے گئے ردعمل میں کہا گیا ہے کہ پاکستان اپنے اس موقف کو دہرا رہا ہے کہ بھارت کی جانب سے عائد کی گئی شرائط کی بنیاد پر دونوں ممالک کے قومی سلامتی کے مشیروں کی ملاقات ممکن نہیں ہے۔
بیان میں کہا گیا ہے کہ سشما سوراج کی نیوز کانفرنس (http://www.bbc.com/urdu/regional/2015/08/150822_india_pak_nsa_talks_would_continue_mb.shtml ) سے یہ نتیجہ اخذ کیا گیا ہے کہ اگر دہلی میں دونوں ممالک کے قومی سلامتی کے مشیروں کی ملاقات ان شرائط کی بنیاد پر ہوتی ہے تو اس کا کوئی فائدہ نہیں ہے۔
دفترِ خارجہ کا کہنا ہے کہ یہ مدِنظر رکھتے ہوئے کہ دہشت گردی کے ایسے کئی واقعات جن میں بھارت کی جانب سے پاکستانی پر الزامات لگائے گئے جعلی ثابت ہوئے، یہ ممکن ہے کہ بھارت ایک، دو واقعات گھڑ کر اور ایل او سی پر محاذ گرم رکھ کر مذاکرات کی بحالی کو غیر معینہ مدت کے لیے ٹال دے۔
پاکستان نے کہا ہے کہ دہشت گردی کا مسئلہ پاک بھارت جامع مذاکرات کا ہمیشہ سے حصہ رہا ہے اور سیکریٹری سطح کی بات چیت میں بھی اس پر ہمیشہ بات ہوتی رہی ہے۔ اس لیے یہ غیر مناسب ہے کہ بھارت اب یکطرفہ طور پر فیصلہ کرے کہ دہشت گردی پر بات چیت اور اس کے خاتمے کے بعد ہی دیگر معاملات پر بات ہو سکتی ہے۔
http://ichef-1.bbci.co.uk/news/ws/624/amz/worldservice/live/assets/images/2015/08/22/150822122648_sushma_swaraj_640x360_ap_nocredit.jpg سشما سوراج نے کہا تھا کہ پاکستان اور بھارت کی بات چیت میں کسی تیسرے فریق کی موجودگی کا کوئی امکان ہی نہیں ہے۔بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ’پاکستان اور بھارت کے درمیان کسی بھی بات چیت کا بنیادی مقصد کشیدگی میں کمی اور اعتماد کی بحالی ہے۔ اگر قومی سلامتی کے مشیروں کی ملاقات کا واحد مقصد دہشت گردی پر بات کرنا ہے تو اس سے صرف الزام تراشی میں اضافہ ہوگا اور ماحول مزید خراب ہی ہوگا۔‘
مزید کہا کہ پاکستان نے تجویز دی تھی کہ دہشت گردی پر بات کے ساتھ ساتھ اوفا کے اعلامیے کے تناظر میں فریقین کو کشمیر، سیاچن اور سرکریک سمیت تمام حل طلب معاملات پر بات چیت کے طریقۂ کار اور ممکن ہو تو نظام الاوقات پر بھی بات کرنی چاہیے کیونکہ اسی سے دونوں ممالک کے درمیان امن کے امکانات بہتر بنائے جا سکتے ہیں۔
کشمیری رہنماؤں سے ملاقات کے بارے میں بھارتی شرط کی بات کرتے ہوئے بیان میں کہا گیا ہے کہ پاکستان بارہا کہہ چکا ہے کہ گذشتہ 20 برس سے دورۂ بھارت کے دوران پاکستانی رہنماؤں کی حرّیت رہنماؤں سے ملاقات ایک معمول رہی ہے۔ اس لیے بھارت کے لیے اب اس روایت کو تبدیل کرنے کی شرط غیر مناسب ہے۔
اس سے پہلے بھارتی خارجہ سشما سوراج نے کہا تھا کہ پاکستان اور بھارت کی بات چیت میں کسی تیسرے فریق کی موجودگی کا کوئی امکان ہی نہیں ہے۔
ان کا کہنا تھا کہ دونوں ممالک کے مذاکرات سے پہلے کبھی بھی بھارت نے حریت رہنماؤں کی پاکستانی رہنماؤں کی ملاقات نہیں ہونے دی۔
’مذاکرات سے پہلے کا ملنے کا مطلب یہ ہے کہ آپ انھیں سٹیک ہولڈر مانتے ہیں۔‘
سشما کا کہنا تھا کہ ’عام طور پر ملنے اور مذاکرات سے پہلے ملنے میں بہت فرق ہے اور اس بار تو پاکستان نے ڈنکے کی چوٹ پر کہا ہے کہ حریت رہنما کشمیر کے نمائندے ہیں اور یہ تیسرا فریق بنانے والی بات ہے۔‘
۔۔۔۔۔۔۔۔
بی بی سی اردو سروس

بےباک
08-23-2015, 08:19 AM
http://ummat.net/2015/08/23/images/news-03.gif