PDA

View Full Version : سو لفظوں کی کہانیاں۔۔۔ اکیس سے پچیس



سید انور محمود
03-20-2016, 02:16 PM
تاریخ: 20 مارچ، 2016

http://urdulook.info/forum/attachment.php?attachmentid=1889&d=1457860675
سو لفظوں کی کہانیاں۔۔۔ اکیس سے پچیس
تحریر: سید انور محمود

سو لفظوں کی کہانی نمبر 21۔۔۔۔بھوکنا۔۔۔۔۔۔
دیوار برلن موجود تھی
مشرقی برلن سے ایک کتا مغربی برلن کے ایک کتے کے پاس مہمان آیا
میزبان نے مہمان کو اپنے پرا ٓسائش جھولے میں آرام کرنے کو کہا
مہمان نے کہا نہیں میں سرمایہ دارانہ آسائش والا جھولا استمال نہیں کرتا
میزبان نے مہمان کو اپنے کھانے میں سے سب سے اچھی ہڈی دی
مہمان بولا نہیں میں سرمایہ داروں کی دی ہوئی ہڈیاں قطعی نہیں کھاتا
میزبان کتے نے پوچھا پھر تم یہاں کیا کرنے آئے ہو؟
مہمان کتے نے جواب دیا میں تھوڑی دیر بھونکنا چاہتا ہوں
جس کی میرئے ملک میں قطعی اجازت نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 22۔۔۔۔آرزو۔۔۔۔۔۔
سبیر بھاٹیا نے1995 میں ہاٹ میل ایجاد کی
مایکروسوفٹ کو 400 ملین ڈالر میں بیچ دی
دو سال مایکروسوفٹ کے ساتھ کام کیا
ہاٹ میل بہت کامیاب ہوئی
سبیر بھاٹیا بھارت واپس آگئے
بھارت میں ‘آرزو ڈاٹ کام’ لانچ کی
کسی بڑے ادارئے کی پشت پناہی نہیں تھی
جلد سبیر بھاٹیا کی ‘آرزو’ دم توڑ گئی
مصطفی کمال ایم کیو ایم کے نمائندے کے طور
پر 2005 سے 2009 تک کراچی کے کامیاب ناظم رہے
تین سال پہلے الطاف حسین سے اختلاف ہوا
ایم کیو ایم سے علیدہ ہوکر دبئی چلے گئے
تین سال بعد واپس آئے ہیں کچھ‘آرزو’ لیکر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 23۔۔۔۔حقوق نسواں۔۔۔۔۔۔
کچھ دن پہلےفرہاد نے شریں کو فون پر بتایا کہ
وہ اس سے شادی نہیں کرئے گا
کیونکہ اب اسے لیلی پسند آگی ہے
کل فرہاد کا فون آیا تو اس نے بتایا کہ
شریں نے اسکو آخری ملاقات کے لیے بلایا ہے
آج میں سرگودھا کے ایک اسپتال میں
فرہاد کے بیڈ کے ساتھ کھڑا تھا
فرہاد نے بتایا کہ کل شریں نے مجھ پر تشدد کیا
اور مجھے نیم بے ہوش کرکے فرار ہوگئی
بس مجھے ایک بات یاد ہےمجھ پر تشدد کرتے ہوئے
وہ بار بار پوچھ رہی تھی کیا تم نے حقوق نسواں بل نہیں پڑھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 24۔۔۔۔گلشن اقبال۔۔۔۔۔۔
آپ کا نام اقبال ہے اور آپ شاعر بھی ہیں
خدا نے آپ کو سب کچھ دے رکھا ہے
لیکن آپ کی ہوس ختم نہیں ہورہی ہے
اقبال توزندگی بھر انا اور خوداری کا درس دیتے رہے
وہ بولا اتفاق سے آج پوری قوم کا یہی حال ہے
میرے نام کے ساتھ اقبال لگا ہوا ہے
میں نے اس حوالے سے ایک قطعہ لکھا ہے
" کیا کام عقابوں سے ، نشیمن سے، انا سے
دن رات کے جنجال میں رہتے ہیں بہت ہے
اقبال کے افکار سے تعلق ہے بس اتنا
ہم گلشن اقبال میں رہتے ہیں بہت ہے"​
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سو لفظوں کی کہانی نمبر 25۔۔۔۔کھانا کھل گیا۔۔۔۔۔۔
مونا باجی سے ملنے کا بہت دل چاہ رہا تھا
کل ان کے بیٹےکا ولیمہ تھا
ولیمہ میں گیا تو دیکھا مونا باجی مہمانوں میں گھری ہوئی ہیں
میں اپنے بچوں کے ساتھ بیٹھ گیا
بہت سارئے رشتہ داروں سے ملاقات ہوئی
اچانک ایک طرف سے آواز آئی ‘کھانا کھل گیا ہے’
ایک منٹ بعد دیکھا تو میرئے قریب کوئی نہیں تھا
اور سامنے موجود مونا باجی بھی اکیلی تھیں
سارئے مہمان کھانے کے حصول میں مصروف تھے
تب میں مونا باجی کے پاس پہنچ گیا
ملتے ہی بولیں میں تم سے ملنے کےلیے کھانا کھلنے کا انتظار کررہی تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔
نوٹ: منظر امام صاحب نے اپریل 2011 میں سسپنس ڈائجسٹ میں ‘ زر پرست’ کے عنوان سے ایک چھوٹا سا مضمون لکھا تھا، کہانی نمبر 24 ‘گلشن اقبال’ اسی مضمون کی مدد سے بنائی ہے۔