PDA

View Full Version : وسیم اختر 12 مئی ہنگامہ آرائی مقدمے میں نامزد



سید انور محمود
07-27-2016, 11:43 PM
تاریخ: 27 جولائی، 2016
1903
وسیم اختر 12 مئی ہنگامہ آرائی مقدمے میں نامزد
بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی


متحدہ قومی موومنٹ کا دعویٰ ہے کہ وسیم اختر نے کوئی بھی اعترافی بیان نہیں دیا
کراچی پولیس نے ایم کیو ایم کے رہنما وسیم اختر کو 12 مئی سنہ 2007 کے ہنگامہ آرائی کے مقدمے میں نامزد کر دیا ہے۔
ایس ایس پی ملیر راؤ انوار کا دعویٰ ہے کہ ان کے پاس شواہد موجود ہیں کہ وسیم اختر اس واقعے میں ملوث ہیں اور انھوں نے اس حوالے سے جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم (جی آئی ٹی) بنانے کے لیے بھی حکومت کو تحریر کیا ہے۔
ایئر پورٹ پولیس کے تفتیشی افسر نظر محمد منگریو نے منگل کو انسداد دہشت گردی کی عدالت میں وسیم اختر اور اسلم عرف کالا کے ریمانڈ کی درخواست کی تھی۔
ریمانڈ رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ 12 مئی سنہ 2007 کو اس وقت کے چیف جسٹس افتحار محمد چوہدری کی کراچی آمد کے موقعے پر سٹار گیٹ پر فائرنگ کر کے سڑکیں بلاک کی گئیں۔
ریمانڈ رپورٹ کے مطابق دوران تفتیش وسیم اختر نے اعتراف کیا ہے کہ افتخار چوہدری کے استقبال کے لیے جانے والے لوگوں کو روکنے کا فیصلہ کیا گیا تھا اور اس کے لیے ایم کیو ایم کے کارکنوں کی ذمہ داری لگائی گئی تھی۔
عدالت نے پولیس کی درخواست مسترد کر کے وسیم اختر اور اسلم عرف کالا کو جیل بھیج دیا اور حکم دیا کہ ان سے جیل میں بھی تفتیش کی جا سکتی ہے۔