PDA

View Full Version : عالم اسلام کی خبریں



گلاب خان
11-26-2010, 09:06 PM
مکہ مکرمہ ....خوبصورت شہر
مکہ ۔ مکہ مکرمہ کے گورنر شہزادہ خالد الفیصل نے مکہ مکرمہ کو دنیا کاانتہائی خوبصورت ، صاف ستھرا اور عصری شہروں میں سے ایک شہر بنانے کی اہمیت پر زور دیا۔شہزادہ فیصل اور سعودی قیادت مکہ کودنیا کے انتہائی ترقی یافتہ اور خوبصورت شہر بنانے میں دلچسپی رکھتی ہے۔ شہزادہ کے مطابق ہمیں اللہ کے گھر کی خدمت کااعزاز حاصل ہے ، اورمکہ کوترقی دینا ہماری بنیادی ذمہ داری ہے تا کہ اقطاع عالم سے آنے والے زائرین کو امن وسلامتی فراہم کی جاسکے ۔
بین الاقوامی فٹ بال کھلاڑی کا قبول اسلام
دبئی ۔ موزمبیق میں پیداہونے والا اور پرتگال ، اٹلی ، اسپین ، نیوزی لینڈ ، برطانیہ ، ترکی ، جرمنی اور امریکہ کے مختلف کلبوں اور ٹیموں کے لیے کھیلنے والا اور اب بحیثیت پرتگال کے عالمی شہرت یافتہ فٹ بالر ایبل زاویر نے متحدہ عرب امارات میں اسلام قبول کرلیا ہے ۔ زاویر نے انسانیت کی فلاح وبہبود کے لیے کام کرنے کا ارادہ ظاہر کیاہے۔
انہوں نے اپنانام فیصل زاویر رکھا ہے ۔۸۳ سال کی عمر میں فٹ بال کے کھیل کو خیرباد کہنے پر زاویر نے افسوس کا اظہار کیاہے، لیکن خوشی اس بات کی ہے کہ وہ اپنی زندگی کے ایک نئے مرحلے میں داخل ہورہے ہیں۔ فیصل کا کہنا ہے کہ افراتفری کے اس دور میں مجھے قبول اسلام میں عافیت ملی ہے ۔ اب وہ ایک ایسے دین کو سیکھنا اور سمجھنا چاہتے ہیں جو امن ، مساوات ، آزادی اور امید کی بات کرتاہے۔
فٹ بالر نے بتایا کہ وہ اب اقوام متحدہ کے تعاون سے انسانی بھلائی کے منصوبوں پر کام کر یں گے۔
”اللہ “کااستعمال عیسائیوں کے لیے بھی
کوالالمپور۔ملیشیا کی ایک عدالت نے فیصلہ کیا ہے کہ ملک کے عیسائیوں کو خدا کے لیے لفظ اللہ کے استعمال کا دستوری حق ہے ۔ عدالت نے ملیشیا کے کیتھولک چرچ کے اخبار ہیرالڈ کی ایک درخواست پر یہ فیصلہ دیا ہے ۔واضح رہے کہ یہ رسالہ عیسائیوں میں شعور وآگہی پیدا کرنے کے مقصد سے نکالا جاتاہے ۔اخبار نے عدالتی فیصلے کا خیرمقدم کرتے ہوئے اسے ملیشیا کے پچاسی ہزار عیسائیوں کے لیے تابناک نیاسال قراردیاہے۔ملیشیا میں پچاس فیصد سے زیادہ آبادی مسلمانوں کی ہے جب کہ وہاں چین اور ہندوستان سے تعلق رکھنے والے افراد کی بڑی تعداد عیسائیت،ہندومت اور بدھ مت کے ماننے والوں کی ہے۔
دنیاکی سب سے اونچی عمارت
دبئی ۔۴ جنوری ۰۱۰۲ءکودنیا کی بلند ترین عمارت برج دبئی جس کا نیانام برج خلیفہ کا شاندار افتتاح چھ ہزار خصوصی مدعویین کے درمیان ہوا۔
اس ٹاور کانام متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زید النیہان کے نام پر برج خلیفہ رکھا گیا۔ اس کا افتتاح امارات کے حکمراں شیخ محمد بن راشد المکتوم نے کیا،اس ٹاور کی اونچائی ۸۲۸ میٹر ہے ،اوراس میں ۰۰۲ فلورس میں سے ۰۶۱ منزل میں مکانات ودفاتر قائم ہوں گے، اور بقیہ ۰۴ فلورس کو سروسیزکے لیے چھوڑدیا گیاہے۔اس ٹاورمیں ۴۴۰۱ اپارٹ منٹس اور ۹۴ فلورس پر دفاتر ہونگے ،اس کی ۶۷ ویں منزل پر دنیا کا سب سے بلند سوئمنگ پول ہوگا ، ا س کے علاوہ ۸۵۱ ویں منزل پر ایک مسجد ہوگی جو سب سے بلند ترین عبادت گاہ ہوگی ۔اس ٹاورکی تعمیر کا آغاز۴۰۰۲ءمیں ہواتھا، اس ٹاورکے بنانے میں ۵٬۱ بلین ڈالر کے اخراجات آئے ہیں۔
ٹاورکے۴۲۱ویں فلور تک جانے والے زائرین کے بڑے افراد کے لیے ۰۰۱ درہم اور ۲۱ سال تک کے بچوں کے لیے ۵۷ درہم ہیں۔
امارات میں ایک مشہورہندوستانی نے اس ٹاورکی۰۰۱ ویں منزل کوخرید لیا ہے، وہ اسکو اپنے خاندان اور احباب کے لیے ایک مہمان خانہ میں بدلنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔یہ منزل زائد از ۵۱ ہزار مربع فٹ پر محیط ہے اورانہوں نے بحساب۰۶۸ ڈالر فی مربع فٹ جملہ ۰۵ کروڑ روپئے اداکی ہے۔
لاکھوں افریقی مشرف بہ اسلام
کویت ۔براعظم افریقہ میں جہاں لوگ غربت ومفلسی کی وجہ سے مررہے ہیں وہیں کچھ اللہ کے ایسے بندے بھی ہیں جنہوں نے اپنی شان وشوکت والی زندگی چھوڑ کر اللہ کی خاطر اور دعوت تبلیغ کے لیے گھر سے نکل پڑے ، اس میں ایک خلیج کی مشہور ومعروف شخصیت ڈاکٹر عبدالرحمن السمیط کی ہے ، جو جمعیة العون المباشرکویت کے سرپرست ہیں ، یہ سوسائٹی برعظم افریقہ میں دعوت کے کام کے لیے مختص ہے، ڈاکٹر السمیط کی دینی خدمات کو سراہتے ہوئے انہیں فیصل ایوارڈسے بھی نوازا جا چکا ہے ۔
ڈاکٹر السمیط کے مطابق افریقہ میں ۰۰۹۵ مساجد کی تعمیر اور پانچ یونیورسٹی کا قیام اور اس سوسائٹی کے داعیوں کی کوششوں سے ۵٬۹ ملین افراد مشرف بہ اسلام ہوچکے ہیں۔ ڈاکٹر السمیط کاکہنا ہے کہ داعیوں کو چاہیے کہ وہ سیرت نبوی کوزیادہ سے زیادہ پڑھیں کیونکہ دعوت الی اللہ کے لیے سیرت نبوی کا مطالعہ ایک اہم اور بنیادی چیز ہے ،اس سے بے نیاز ہوکر داعی اپنے ہدف کو حاصل نہیں کرسکتا ۔
خانہ کعبہ کواسلامی سال کا پہلا غسل
مکہ مکرمہ ۔ خادم الحرمین الشریفین کی ہدایت پرخانہ کعبہ کو اسلامی سال کاپہلاغسل گورنرمکہ مکرمہ شہزادہ خالد الفیصل کی نگرانی میں دیا گیا۔اس موقع پر معزز شخصیات ، سفارتکار، ممتاز علماءدین کے علاوہ سوڈان کے صدر عمر حسن البشیر بھی موجود تھے ، خانہ کعبہ کو ہرسال دو مرتبہ ۵۱ شعبان اور حج کی ادائیگی کے بعد محرم الحرام کے وسط میں غسل دیا جاتاہے ، حج کے موقع پر ۹ ذی الحجہ کو جب عازمین میدان عرفات کے لیے روانہ ہوئے تب خانہ کعبہ کو نیا غلاف پہنایا گیا۔غسل کعبہ کے لیے آب زم زم میں عرق گلاب اور عود کاعطر ملاکر ایک مرکب تیار کیاجاتاہے اور اس مرکب میں کپڑے کو گیلا کرکے اس سے خانہ کعبہ کی اندرونی دیواروں اور فرش کو صاف کیا جاتاہے۔خانہ کعبہ کا دروازہ لکٹری کاہے جس پر ۰۸۲ گرام خالص سونے سے قرآنی آیات کی کشیدہ کاری گی گئی ہے۔