PDA

View Full Version : اتنا شعور تو غمِ پنہاں میں آگیا آغوشِ دل سے دامنِ مژگاں میں آگیا



گلاب خان
01-21-2011, 04:25 PM
اتنا شعور تو غمِ پنہاں میں آگیا
آغوشِ دل سے دامنِ مژگاں میں آگیا

دل اشک بن کے دیدۂ گریاں میں آگیا
خورشید جیسے روزنِ زنداں میں آگیا

پھر میرے اپنے آپ میں رہنے کا کیا سوال
جب وہ مرے حریمِ دل و جاں میں آگیا

مجھ کو تو رنگ و بو میں الجھنے سے تھا گریز
میں نے یہ کیا کیا، کہ گلستاں میں آگیا

مرہم کا نام لے کے نہ زخموں کو چھیڑیے
مرہم بھلا کہاں سے نمک داں میں آگیا

عکسِ جمالِ یار بتدریج ذوقِ دید
آنکھوں سے دل میں، دل سے رگِ جاں میں آگیا

کچھ سردمہریِ بتِ کافر کا لطف بھی
پیمائشِ حرارتِ ایماں میں آگیا

وحشت اثر فضا ہے نہ دیوار و در یہاں
بیکار ہی میں گھر سے بیاباں میں آگیا

وہ آگئے تو محفلِ خوباں میں یوں لگا
بدرِ منیر جشنِ چراغاں میں آگیا

پھر بزمِ ناز میں مری توہین کی گئی
ایک اور بال آئینۂ جاں میں آگیا

اخگرؔ جنونِ دشت نوردی کدھر گیا
مجنوں تو میرے خانۂ ویراں میں آگیا

این اے ناصر
03-31-2012, 01:19 PM
واہ بہت خوب۔ شکریہ