PDA

View Full Version : رہِ خزاں میں تلاشِ بہار کرتے رھے



گلاب خان
01-21-2011, 05:06 PM
رہِ خزاں میں تلاشِ بہار کرتے رھے

شبِ سیہ سے طلب حسنِ یار کرتے رھے

خیالِ یار، کبھی ذکرِ یار کرتے رھے

اسی متاع پہ ہم روزگار کرتے رھے

نہیں شکایت ہجراں کہ اس وسیلے سے

ہم ان سے رشتہ دل استوار کرتے رھے

وہ دن کہ کوئی بھی جب وجہ انتظار نہ تھی

ہم ان میں تیرا سوا انتظار کرتے رھے

ھم اپنے راز پہ نازاں تھے شرمسار نہ تھے

ھر ایک سے سخن رازدار کرتے رھے

ضیائے بزم جہاں بار بار ماند ھوئی

حدیث شعلہ رکاں بار بار کرتے رھے

انہی کے فیض سے بازار عقل روشن ھے

جو گاہ گاہ جنوں اختیار کرتے رھے

این اے ناصر
03-31-2012, 01:19 PM
واہ بہت خوب۔ شکریہ