PDA

View Full Version : اک تلاطم میں ھوں شورش میں ھوں چکر میں ھوں



گلاب خان
01-21-2011, 05:19 PM
اک تلاطم میں ھوں شورش میں ھوں چکر میں ھوں

رقص کرتا ھوں مگر ترشے ھوئے پتھر میں ھوں

میرے اندر دو صفیں ھیںصرف تیرے واسطے

روز لڑتا ھوں ھے جو خود سے میں اسی لشکر میں ھوں

میرا مالک بھی مری قیمت سے خود واقف نہیں

اک خزانہ ھو کے میں ٹوٹے ھوئے چھپر میں ھوں

میرے ساتھی ڈھونڈتے ھیں مجھ کو میں ملتا نہیں

اور تیرے واسطے میں پھول میں پتھر میں ھوں

جو تری ھے رہگزر اس راستے کا پھول ھوں

جو پسند آنکھیں کریں تیری اسی منظر میں ھوں

خود ھی منزل خود ھی رستہ خود ھی خواہش خود امید

اس سے یوں بچھڑا ھوں جیسے عرصہ محشر میں ھوں

تم جہاں بھی جاؤ گے تم کو نظر آؤں گا میں

خواہش روشن کی صورت اب میں دنیا بھر میں ھوں

تانیہ
01-22-2011, 12:00 AM
واہ....

این اے ناصر
03-31-2012, 01:20 PM
واہ بہت خوب۔ شکریہ

نگار
02-12-2013, 06:47 PM
میرے اندر دو صفیں ھیںصرف تیرے واسطے
روز لڑتا ھوں ھے جو خود سے میں اسی لشکر میں ھوں

میرے ساتھی ڈھونڈتے ھیں مجھ کو میں ملتا نہیں
اور تیرے واسطے میں پھول میں پتھر میں ھوں

تم جہاں بھی جاؤ گے تم کو نظر آؤں گا میں
خواہش روشن کی صورت اب میں دنیا بھر میں ھوں




واہ بہت خوب ، زبردست
بہترین شاعری ارسال کرنے پہ آپ کا بہت بہت شکریہ