PDA

View Full Version : آنکھیں بھیگ جاتی ھیں



این اے ناصر
03-18-2011, 09:05 PM
آنکھیں بھیگ جاتی ھیں
سمندر میں اترتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں
تیری آنکھوں کو پڑھتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں

تمھارا نام لکھنے کی اجازت چھن گئی جب سے
کوئی بھی لفظ لکھتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں

تیری یادوں کی خوشبو کھڑکیوں میں رقص کرتی ھے
تیرے غم میں سلگھتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں

نہ جانےھو گیا ھوں اس قدر حساس میں کب سے
کسی سے بات کرتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

وہ سب گزرے ھوئے لمحات مجھکو یاد آتے ھیں
تمھارے خط جو پڑھتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں

میں سارا دن بہت مصروف رھتا ھوں مگر جونہی
قدم چوکھٹ پررکھتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں

ھر ایک مفلس کے ماتھے پر الم کی داستانیں ھیں
کوئی چہرہ بھی پڑھتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں

بڑے لوگوں کے اونچے بدنما اور سرد محلوں کو
غریب آنکھوں سے تکتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں

تیرے کوچے سے میرا تعلق واجبی سا ھے
مگر جب بھی گزرتا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں

ہزاروں موسموں کی حکمرانی ھے میرے دل پر
وصی میں جب بھی ہنستا ھوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ھیں
(وصی شاہ)