PDA

View Full Version : ریشم اور سونے کی تاروں سے غلاف کعبہ تیار کر لیا گیا



اذان
05-11-2011, 04:19 PM
بیس ملین ریال کی لاگت سے
ریشم اور سونے کی تاروں سے غلاف کعبہ تیار کر لیا گیا

http://i55.tinypic.com/15s0nye.jpg

سعودی حکومت میں ہر سال کی طرح حج سے پہلے کعبة اللہ کی تزئین و آرائش اور غلاف "کسوہ" تبدیل کرنے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔
سعودی خبر رساں ایجنسی "ایس پی اے" کے مطابق الحرمین الشریفین امور کے نگران شیخ صالح بن عبدالرحمان الحصین کی نگرانی میں نیا غلاف کعبہ تیار کیا گیا ہے، جسے 09 ذی الحج یوم عرفہ کو کعبہ اللہ کی زینت بنایا جائے گا۔
رپورٹ کے مطابق حکومت کی نگرانی میں تیار کیے گئے غلاف کعبہ کے لیے نہایت قیمتی کپڑا استعمال کیا گیا ہے۔ غلاف کے لیے خالص ریشمی کپڑے پر سونے کے پانی سے آیات اور دیگر کلمات مقدسہ منقش کیے گئے ہیں۔ سیاہ رنگ کے غلاف کی تیاری پر 20 ملین ریال لاگت آئی ہے جو سعودی حکومت نے برداشت کیے ہیں۔
غلاف کعبہ کی اونچائی 14 میٹر اور لمبائی 47 میٹر ہے۔ چار کونوں والے غلاف میں ریشمی کپڑے کے 16 مختلف حصوں کو باہم ملایا گیا ہے۔ اونچائی میں اوپر کے ایک تہائی حصے کا عرض 95 سینٹی میٹر رکھا گیا ہے۔
کعبة اللہ کی چھت سے ملحقہ غلاف کی پٹی پر چاروں اطراف میں آیات قرآن منقش کی گئی ہیں، ان کے نیچے ایک قندیل کی شکل "یا حی یاقیوم، یارحمٰن یارحیم، الحمد للہ رب العٰلمین" کے الفاظ درج ہیں"۔
غلاف کعبہ میں سونے کے پانی سے مختلف آیات کی تحریر کے ساتھ خالص سونے کے دھاگے سے بھی کلمات طیبات کی کڑھائی کی گئی ہے، جس سے غلاف کعبہ کی خوبصورتی اور اس کی زیبائش کو چار چاند لگ گئے ہیں۔
غلاف کعبہ کے اوپر والےحصے میں تہہ در تہہ غلاف کے چار پَرت جوڑے گئے ہیں جبکہ بابِ کعبہ کے ساتھ الگ سے ایک پرت بھی لگایا گیا ہے۔ یہ تمام پَرت ایک دوسرے کے ساتھ نہایت خوبصورتی کے ساتھ جوڑے گئے ہیں۔
غلاف کعبہ کو تین مراحل میں تیار کیا گیا ہے۔ سب سے پہلے اس کے لیے اعلیٰ معیارکے ریشمی کپڑے کا انتخاب کیا گیا اور پہلے مرحلے میں سیاہ، سرخ اور سبز رنگوں کو ملا کر اس کے رنگ کر پختہ کیا گیا۔ دوسرے مرحلے میں اس کی سلائی کی گئی۔ سلائی میں عام دھاگے کے علاوہ سونے کی زنجیر بھی استعمال کی گئی ہے۔
تیسرے مرحلے میں اس پر مختلف رسم الخطوں میں آیات قرآنی اور کلمات طیبات کی نقش نگاری تھی۔ ان تمام امور کی انجام دہی کے لیے روایتی انداز یعنی ہاتھوں سے سلائی کڑھائی کے ساتھ جدید ترین تکنیک بھی استعمال کی گئی ہیں۔ سلائی کڑھائی کے لیے استعمال ہونے والی جدید مشینوں کے علاوہ نقش نگاری اور آیات کی تحریر کے لیے جدید نوعیت کے پرنٹرز سے استفادہ کیا گیا ہے۔

تانیہ
05-12-2011, 12:17 AM
جزاک اللہ
بہت دلچسپ اور معلوماتی شیئرنگ ہے
بہت اچھا لگا

بےباک
05-17-2011, 01:04 AM
شکریہ امین فیصل صاحب ، آپ نے بہت ہی زبردست شئیرنگ کی ہے ،

عبادت
05-17-2011, 02:07 AM
ماشاءاللہ نائس شیرنگ امین فیصل

نورمحمد
05-17-2011, 11:58 AM
ماشاء اللہ

اذان
05-18-2011, 04:20 AM
http://rajafamily.com/lib/00051A012.gif
آپ سب کا بہت بہت شکریہ