PDA

View Full Version : لطیفے ہی لطیفے



اذان
06-15-2011, 08:13 PM
http://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpghttp://rajafamily.com
/lib/00051A08R.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpg
http://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gif

عیدالاضحی کے موقع پر ایک شخص نے ایک دینی مدرسے کے بزرگ (مہتمم صاحب) سے فون پر کہا: ”برائے مہربانی کوئی بندہ بھیج کر چرم قربانی اٹھوا لیجئے۔“
مہتمم: ”تھوڑی دیر کے لئے آپ ہی بندے بن جایئے اور کھال خود ہی مدرسہ پہنچا دیجئے۔
...............................................
ایک راہگیر: (دیہاتی سے) یہ آپ کے حقّے کا پائپ اتنا لمبا کیوں ہے؟
دیہاتی: ڈاکٹر صاحب نے مجھے تمباکو سے دور رہنے کے لیے کہا ہے

..............................................
ایک شخص (ریس دیکھتے ہوئے، دوسرے شخص سے)یار! انعام کون سے والے کو ملے گا؟
دوسرا شخص: سب سے آگے والے کو ملے گا۔
پہلا شخص: تو پھر پیچھے والے کیوں بھاگ رہے ہیں۔
................................................
گاہک (بیرے سے) ”یہ دیکھو، یہ گوشت بالکل نہیں گلا۔“
بیرا: ”جی ہاں! ہمارے یہاں کوئی چیز گلی سڑی نہیں ہوتی۔“
.................................................
ڈاکٹر: اس دوا کے دو چمچے صبح، دو چمچے دوپہر، دو چمچے شام اور دو چمچے رات کو لینا۔
مریض: (گھبرا کر) جناب! چمچے کچھ کم کر دیں۔ میں اتنے چمچے کہاں سے لاؤں گا
...............................................
ایک سائیکل سوار پولیس والے کے سامنے سے گزرا۔ کچھ آگے جا کر وہ واپس پلٹا اور پولیس والے سے کہنے لگا:
”آپ نے مجھے پہچانا، میں کون ہوں۔“
وہ بے چارہ سوچ میں پڑ گیا، کوئی جواب نہ دے سکا۔ اس پر اس نے کہا۔
”آپ کا حافظہ بہت کمزور ہے، میں وہی تو ہوں جو ابھی کچھ ہی دیر پہلے آپ کے سامنے سے گزرا تھا۔“
................................................
ایک شخص خیالات میں گم چلا جا رہا تھا‘ ایسے میں ایک گدھے نے اسے دولتّی رسید کر دی‘ اس نے گدھے کو دو تین لاتیں رسید کیں اور بولا
”کیا میں تجھ سے کم ہوں؟ “
................................................
بھکاری : اللہ کے نام پر پلاو کھلادو
ایک شخص: تم روزانہ تو روٹی مانگتے ہو‘ آج پلاؤ کیوں؟
بھکاری: آج میری سالگرہ ہے۔
.................................................
راہ گیر (بھکاری سے) ”تم بھیک کیوں مانگتے ہو؟“
بھکاری: ”یہ دیکھنے کے لیے کہ اس دنیا میں سخی کتنے اور کنجوس کتنے ہیں۔
................................................

بےباک
06-16-2011, 11:01 AM
بہت ہی خؤب ، زبردست لطیفے شئیر کیے آپ نے

ھھھھھھھھھھھھھھھا

تانیہ
06-16-2011, 04:02 PM
ہاہا
ہاہا:)

اذان
06-16-2011, 09:20 PM
http://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpghttp://rajafamily.com
/lib/00051A08R.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpg
http://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gif

ایک دوست: یار یہ قوالی والے قوالی کے وقت اپنے دونوں ہاتھ کانوں پر کیوں رکھ لیتے ہیں۔
دوسرا دوست: تاکہ اپنی آواز خود نہ سن سکیں۔

.................................................. ..
باپ: جب کوئی بچہ شرارت کرتا ہے تو باپ کاایک بال سفید ہوجاتا ہے۔
بیٹا:اب پتا چلا، دادا جان کے سارے بال کیوں سفید ہیں۔
.................................................. ..
بیوی: (تھانے دار سے) جناب! ایک ہفتہ ہوگیا، میرے شوہر آلو خریدنے گئے تھے، اب تک لوٹ کر نہیں آئے۔
تھانے دار:آپ کوئی اور سبزی پکالیں۔
.................................................. ...
استاد: سب لڑکوں نے دودھ پر دو صفحات کا مضمون لکھا ہے، اور تم نے دو سطر کا۔
شاگرد: جناب! میں نے خالص دودھ پر مضمون لکھا ہے۔
.................................................. .
ایک بھکاری ہاتھ میں تختی لیے بھیک مانگ رہا تھا۔ اس پر لکھا تھا، میں بہرہ اور گونگا ہوں۔ ایک آدمی نے اس سے پوچھا، آپ کب سے گونگے اور بہرے ہیں۔
اس نے فوراً کہا:
” پیدائشی گونگا اور بہرہ ہوں۔“
.................................................. .
ایک دوست: (دوسرے پر رعب ڈالتے ہوئے) اگر میں صبح اپنی کار میں بیٹھ کر اپنی زمین دیکھنے نکلوں تو شام تک پوری زمین نہیں دیکھ پاتا۔
دوسرا: چچ چچ! بہت عرصہ پہلے ہمارے پاس بھی ایک ایسی ہی کھٹارا کار تھی
.................................................
استاد: دستک کو جملے میں استعمال کرو۔
شاگرد: ہمارے منے کو دس تک گنتی آتی ہے۔
..................................................
بیوی (فون پر) جلدی گھر آئیے، منے نے سوئی نگل لی ہے۔
پروفیسر شوہر: میں بہت مصروف ہوں، پڑوسن سے سوئی لے کر کام چلا لو۔
..................................................
ایک بچے نے اپنی ماں سے پاکستان کا جھنڈا خریدنے کی فرمائش کی۔ ماں نے دکان دار سے جھنڈا دکھانے کے لیے کہا۔ اس نے جھنڈا دکھایا تو وہ بولی:
”کسی اور رنگ میں دکھاؤ۔“

عبادت
06-17-2011, 03:38 AM
سیما جی اپ نے ایسی کار رکھی تو نہیں جو اتنا خوش ہوئی
ھاھاھاھاھاھاھا:P:P:P:P:P



باپ: جب کوئی بچہ شرارت کرتا ہے تو باپ کاایک بال سفید ہوجاتا ہے۔
بیٹا:اب پتا چلا، دادا جان کے سارے بال کیوں سفید ہیں۔

ھاھاھاھاھاھاھا میں نے کل اپنے دادا کو یہ لطیفہ سنا دینا ھاھاھاھاھاھا
ھاھاھاھاھاھاھا

اذان
06-18-2011, 03:38 AM
http://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpghttp://rajafamily.com
/lib/00051A08R.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpg
http://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gif

بیوی (فون پر) جلدی گھر آئیے، منے نے سوئی نگل لی ہے۔
پروفیسر شوہر: میں بہت مصروف ہوں، پڑوسن سے سوئی لے کر کام چلا لو۔
................................................
ایک دیہاتی کسی بڑے ہوٹل میں گیا اور چائے کا آرڈر دیا۔ بیرا ایک چھوٹے سے کپ میں ذرا سی چائے لے آیا۔ اس نے ایک ہی گھونٹ میں چائے ختم کر دی اور بولا:
”میٹھا ٹھیک ہے، چائے لے آؤ۔“
...............................................
باپ: بیٹا میں آپ کے لیے دوسری امی لے آؤں۔
بیٹا:وہ مجھے اسکول جانے کے لیے تو نہیں کہیں گی۔
...............................................
ہاسٹل میں رہنے والے ایک دوست نے دوسرے سے پوچھا:
”کیا بات ہے، تم بہت پریشان ہو؟“
دوسرے نے جواب دیا:
”کیابتاؤں یار،میں نےگھروالوں کوخط لکھاتھاکہ ٹیبل لیمپ خریدنےکےلیے500 روپے بھیج دیں، انھوں نے ٹیبل لیمپ بھیج دیا۔“
..................................................
استاد: آپ کے بیٹے نے اسکول کے تمام ریکارڈ توڑ دیے۔
باپ: نالائق کہیں کا... گھر میں برتن توڑتا رہتا ہے اور یہاں ریکارڈ
.................................................
ایک کنجوس آدمی اپنی بائیں آنکھ پر ہاتھ رکھ کر جارہا تھا۔ ایک شخص نے پوچھا:
”کیا ہوا بھائی! آنکھ کو کیا ہوا۔“
اس نے جواب دیا:
”کچھ بھی نہیں! جب ایک آنکھ سے کام چل جاتا ہے تو دوسری کیوں استعمال کروں۔
.................................................. .....
ایک دوست دوسرے سے کہہ رہا تھا:
”یار وہ اپنے دوست وکیل احمد خان تھے نا... وہ جنھیں ہر چیز کی تہ تک پہنچنے کا شوق تھا۔“
دوسرے نے چونک کر پوچھا:
”کیا ہوا انھیں۔“
پہلے نے جواب دیا:
”وہ ڈوب کر مر گئے؟“

بےباک
06-20-2011, 12:48 AM
ایک سردار ہوٹل میں سوپ پی رہا تھا ۔
لڑکا : سردار جی سوپ میں مکھی ہے ۔۔۔
سردار: دل وڈا ہونا چاہیے مکھی نے کتنا سوپ پی لینا ہے .
:P:P:P:P:P

اذان
06-20-2011, 11:38 PM
http://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpghttp://rajafamily.com
/lib/00051A08R.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpg
http://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gif


ایک صحافی دوسرے سے کہہ رہا تھا:
”فلاں صحافی بک گیا، فلاں نے اتنی رقم لے کر اپنا قلم بیچ دیا، اس نے صحافت کے مقدس پیشے کو بدنام کیا ہے۔ غرض ہر صحافی اور ادیب بک گیا، لیکن میں آج تک نہیں بکا۔“
دوسرے نے یہ ساری بات سن کر کہا:
”بھائی تم جس اخبار میں لکھتے ہو، وہ اخبار کبھی فروخت نہیں ہوا، پھر تم کیسے فروخت ہوسکتے ہو۔“
.................................................. .........

ایک شخص کو کتے نے کاٹ لیا، وہ ڈاکٹر کے پاس گیا۔ ڈاکٹر نے انجکشن لگانے کے 60 روپے طلب کیے۔ وہ بولا:
” کتے نے تو مجھے مفت میں کاٹا اور آپ مجھ سے 60 روپے مانگ رہے ہیں۔
.................................................. .....
ایک پاگل نے راستے میں پڑے کیلے کے چھلکے کو دیکھ کر اپنے ساتھی سے کہا:
” یار! یہ بھی بڑی مصیبت ہے۔ مجھے پہلے کی طرح آج پھر پھسل کر گرنا پڑے گا۔
...............................................
استاد: دنیا میں کوئی بڑا چھوٹا نہیں، سب برابر ہیں۔
شاگرد: تب پھر آپ کل ہمارے ساتھ گلی ڈنڈا کھیلیے گا۔
...........................................
جج: تم نے اپنی بیوی کو کرسی کیوں ماری۔
ملزم: جناب! صوفہ مجھ سے اٹھا نہیں۔
..................................................
دولت مندر مغرور گاہک: آج کے بعد میرا کتا تمہاری دکان پر آئے تو تمہیں اس کی بھی عزت کرنا ہوگی۔
دکان دار: بہت بہتر جناب! آپ کا کتا آئے گا تو میں سمجھوں گا کہ آپ آئے ہیں۔
...............................................
استاد: (شاگرد سے) مکھی اور مچھر میں کیا فرق ہے۔
شاگرد: مکھی معائنہ کرتی ہے، مچھر انجکشن لگاتا ہے۔
............................................
ماں:بیٹا! تم کتاب کی جلد کو صابن سے کیوں دھورہے ہو۔
بیٹا:اس لیے کہ صابن جلد کی حفاظت کرتا ہے۔
.................................................. ..
ایک شخص نے حضرت امام ابوحنیفہ رحمہ اﷲ سے پوچھا:
”میں اگر دریا میں نہاﺅں تو منہ کس طرف رکھوں۔“
جواب میں امام صاحب نے فرمایا:
” اپنے کپڑوں کی طرف۔“
.............................................
ایک بلی نے اون کا گولا کھالیا... بچے نے ماں سے پوچھا:
” اب کیا ہوگا۔“
جواب میں ماں نے کہا:
” ہوگا کیا، بلی کے بچے سویٹر پہن کر پیدا ہوں گے۔“
...............................................
مالک: بھناکر! یہ تم نے کیسی چائے بنائی۔
نوکر:جناب! آپ نے کہا تھا جب دودھ نہ ہو تو ملک پاؤڈر سے بنالیا کرو۔ آج ملک پاؤڈر بھی نہیں تھا، سو میں نے ٹالکم پاؤڈر سے بنالی۔
..................................................
شوہر: بیگم تم ابھی تک تیار نہیں ہوئیں۔
بیوی: ایک گھنٹے سے کہہ تورہی ہوں کہ بس ابھی تیار ہوتی ہوں۔
.................................................. ..
ایک آدمی کپڑے کی دکان پر گیا۔ ایک کپڑے کے بارے میں اس نے پوچھا:
” یہ کپڑا گرم ہے یا ٹھنڈا۔“
اس نے جواب دیا:
” جناب! یہ کوسہ کوسہ ہے۔“
.................................................
مریض: کیا عینک لگوانے کے بعد میں پڑھ سکوں گا۔
ڈاکٹر: بالکل۔
مریض: اس سے زیادہ خوشی کی بات کیا ہوسکتی ہے۔ میرے والد بھی میری طرح ان پڑھ ہیں، ایک عینک ان کے لیے بھی بنوا دیں۔
.................................................. ........
دو دیہاتی پہلی مرتبہ شہر گئے۔ ایک بڑی سی بس پر نظر پڑی تو ایک نے کہا: ”دیکھو کتنا بڑا جانور بھاگا جا رہا ہے۔“
دوسرے کی نظر ایک کار پر پڑی تو وہ بولا:
”اور اس کے پیچھے اس کا بچہ بھی بھاگا جارہا ہے۔“
.................................................. ......
دو لڑکے آپس میں لڑ رہے تھے۔
ایک نے کہا: ”تم مجھے نہیں جانتے؟“
دوسرے نے کہا: ”جانتا ہوں، تم وہی ہو جو مار کھا کر بھاگ جاتے ہو۔“
................................................
ایک گلو کار محفل میں گانا گا رہا تھا: ”کس نام سے پکاروں کیا نام ہے تمہارا۔“
محفل سے ایک دیہاتی نے اٹھ کر کہا: ”شیخ اللہ وسایا۔“
.................................................. ..
ایک آدمی (دوسرے سے) ”وہ نوجوان وکیل جو تمہارا کرایہ دار تھا اس کا کیا بنا؟“
دوسرا آدمی: ”وہ بہت اچھا وکیل ہے، گزشتہ سال سارے مقدموں میں اس نے میری وکالت کی۔
پہلا آدمی: ”کیا وہ کامیاب ہوا؟“
دوسرا آدمی:”اس سے بڑھ کر اس کی کامیابی اور کیا ہوسکتی ہے کہ آج میں اس کا کرایہ دار ہوں۔“
.............................................
بازار میں ایک پھل والا آواز لگا رہا تھا:
”لنگڑے آم پچاس روپے کلو۔“
ایک چھوٹا بچہ: ”اورٹانگوں والے آم کتنے روپے کلو ہیں؟“
.................................................. ..
استاد: سیب کے فائدے بتاؤ۔
شاگرد: پھل والا ان کو بیچ کر پیسے کماتا ہے۔
.................................................. ...
ایک صاحب ایک بھکاری کو روزانہ پانچ روپے دیتے تھے۔ کچھ عرصے بعد دو اور پھرصرف ایک روپیہ دینے لگے۔ ایک دن بھکاری نے اس کی وجہ پوچھی، تو صاحب کہنے لگے:
”جب میری شادی نہیں ہوئی تھی تو تمہیں پانچ روپے دے دیتا تھا۔ شادی کے بعد دو روپے اور بچے کے پیدا ہونے کے بعد ایک روپے پر آگیا۔“
بھکاری بولا: ”یہ کیوں نہیں کہتے کہ میرے ہی پیسوں سے گھر چلا رہے ہو۔“
.................................................. .......

بلال جٹ
06-21-2011, 07:55 AM
ہاہاہاہاہاہا :D:D

اذان
07-01-2011, 12:29 AM
http://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpghttp://rajafamily.com
/lib/00051A08R.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpg
http://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gif

پولیس والا: لائسنس دکھاؤ۔
موٹر سائیکل سوار نے فوراً پچاس کا نوٹ نکال دیا۔
پولیس والا: میری جیب میں ڈال دو، میں حرام کو ہاتھ نہیں لگاتا۔
.............................................
ڈاکو: رقم دو گے یا جان؟
مسافر: جان لے لو، رقم میرے بڑھاپے کا سہارا ہے۔
..............................................
مالک: آج کا اخبار کہاں ہے؟
ملازم: میں تو خود کل سے تلاش کررہا ہوں۔
...............................................
تھانے کے ایک انسپکٹر نے ایک کانسٹیبل کو ایک ملزم کی چھے تصاویر دکھا کر کہا، جاؤ ملزم کو تلاش کرو۔ شام کو کانسٹیبل واپس لوٹا اور فخر سے بتایا:
”جناب! پانچ ملزم گرفتار ہوچکے ہیں، چھٹے کی تلاش ہے۔“
..............................................
جج ملزم سے: تم نے دن دیہاڑے چوری کی۔
ملزم: کیا کروں جناب! رات کو مجھے نیند آجاتی ہے۔
..............................................
استاد: تم نے تاریخ یاد کی؟
شاگرد: جی ہاں! آج دس تاریخ ہے۔
...........................................
ماں: بیٹا! آج تمہارا اسکول میں پہلا دن تھا، کیا کچھ سیکھا۔
بچہ: کچھ بھی نہیں ماں! کل پھر جانا پڑے گا۔
............................................
امی: یاد رکھو بیٹا! ہم دنیا میں دوسروں کی خدمت کے لیے آئے ہیں۔
بیٹا: اور دوسرے دنیا میں کس لیے آئے ہیں؟
..........................................
ایک شخص بھرے مجمعے میں چلایا: لوگو! مجھے معلوم ہے، کل کیا ہوگا۔
مجمع بول اٹھا: کیا ہوگا۔
وہ شخص: آج منگل ہے، کل بدھ ہوگا۔
.................................................
مجسٹریٹ: تم نے یہ واردات بہت ہوشیاری سے کی۔
ملزم: شکر ہے، کوئی تو قدر داں ملا۔
...........................................
استاد: بخیل کی تعریف کرو۔
شاگرد: جناب! بھلا کوئی بخیل کی بھی تعریف کرتا ہے۔
............................................
شوہر: آخر کب تک تم میرے بلیڈ سے بچوں کی پنسلیں تراشتی رہوگی۔
بیگم: جب تک تم میری لپ اسٹک سے بچوں کی کاپیاں چیک کرتے رہوگے۔
..............................................
بچہ : امی امی! سیڑھی گرگئی ہے۔
امی: مجھے کیا کہہ رہے ہو، اپنے ابا سے کہو۔
بچہ: وہ تو چھت والے پنکھے سے لٹک رہے ہیں۔
..............................................
ڈاکٹر نے مریض کے لیے نسخہ تجویز کیا کہ وہ ہر روز دس میل پیدل چلے، سات دن کے بعد بتائے کہ کیا فرق پڑا ہے۔ ساتوءں دن مریض نے فون کیا تو ڈاکٹر نے پوچھا، کچھ فرق محسوس ہوا، جواب میں مریض نے کہا:
”پتا نہءں! میں تو اس وقت گھر سے ستر میل دور سے بات کررہا ہوں، یہ بتائیں، اب کیا کرنا ہے۔“
................................................
دہلی کی ایک سڑک پر ایک سردار اچانک دوڑنے لگے، ٹریفک سارجنٹ بھی سکھ تھا، وہ اس کی طرف لپکا اور پکڑ کر پوچھا:
”سردار جی! کیا بات ہے، تم اچانک دوڑنے کیوں لگے۔“
سردار جی نے ایک بورڈ کی طرف اشارہ کیا۔ اس پر لکھا تھا، کم از کم رفتار 20 کلو میٹر فی گھنٹہ۔ یہ پڑھتے ہی سارجنٹ نے بھی دوڑ لگادی۔
..............................................
ڈاکٹر: آپ کی طبیعت آج کیسی ہے؟
مریض: آج تو وہ چیزیں بھی کھانے کو جی نہیں چاہتا جن کے کھانے سے آپ نے روکا ہوا ہے۔
............................................
حجام بہت تیزی سے بال کاٹ رہا تھا، ایسے میں اس نے گاہک سے پوچھا:
” آپ کتنے بھائی ہیں۔“
اس نے فوراً جواب دیا:
”میں آپ کے استرے سے بچ گیا تو ہم تین بھائی ہیں، ورنہ دو۔“
..................................................
استاد: بتاؤ! تم بڑے ہوکر کیا بنوگے؟
شاگرد: مریض بن کر ڈاکٹروں کی خدمت کروں گا۔
.................................................. ....
ایک شخص خود کشی کے عنوان پر تقریر کررہا تھا۔
”خود کشی حرام ہے، اس سے بہتر ہے، آدمی زہر کھاکر مرجائے۔“
.................................................. ...
دروازے پر دستک ہوئی۔ باپ نے بیٹے سے کہا، دیکھو دروازے پر کون ہے؟ بیٹے نے دروازے پر جاکر ملاقاتی سے پوچھا، آپ کون ہیں، اس نے اپنا نام ریاض بتایا۔ بیٹے نے واپس آکر کہا:
”ابا جان! باہر سعودی عرب کے دارالخلافہ کھڑے ہیں۔“

بےباک
07-01-2011, 01:41 AM
بہت ہی زبردست لطیفے ہیں ، مزا آگیا ،
واہ جی واہہہہ

اذان
07-05-2011, 02:12 AM
http://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpghttp://rajafamily.com
/lib/00051A08R.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpg
http://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gif


ٹرین کی لائٹ چلی گئی۔ ایک مسافر عورت گھبراگئی۔ اس نے اٹھ کر زنجیر کھینچ دی۔ ساتھ ہی اس کے گال پر ایک تھپڑ لگا۔ ٹرین نہ رکی تو اس نے پھر زنجیر کھینچ دی۔ اس کے گال پر پھر زوردار تھپڑ لگا، اتنے میں لائٹ آگئی، اس نے جھلا کر کہا:
” یہ کون جانور مجھے اندھیرے میں تھپڑ ماررہا تھا۔“
اوپر لیٹی ہوئی ایک عورت نے تلملاکر کہا:
” اوہ تو یہ تم تھیں، جو بار بار میری چوٹی کھینچ رہی تھیں۔“
.............................................
ٹیکسی ڈرائیور: جناب! میں میٹر چلانا بھول گیا تھا، اب سمجھ میں نہیں آرہا کہ آپ سے کتنے پیسے لوں۔
مسافر: کوئی بات نہیں، میں بھی اپنا بٹوہ گھر بھول آیا ہوں۔
.............................................
ڈاکو (ٹرین پر سفر کرتے ہوئے ایک شخص سے): جو کچھ تمہارے پاس ہے، فوراً نکال دو۔
مسافر: بھائی آہستہ بات کرو، میرے پاس تو ٹکٹ بھی نہیں ہے۔
.................................................. ...
ایک آدمی: بیٹا! تمہارا خاندان کون سا ہے؟
بچہ: بس نہ پوچھیے۔
آدمی: کیوں، کیوں۔
بچہ:ابا جان مجھے الو کہتے ہیں، امی گدھا کہتی ہیں، استاد صاحب روزانہ مرغا بنادیتے ہیں جب کہ دادا جان کہتے ہیں، میرا پوتا شیر ہے۔
.................................................. ......
گاہک (غصے کی حالت میں): آپ کے ہاں سے کرسی خرید کر لے گیا تھا، گھر جاتے ہی ٹوٹ گئی۔
فرنیچر والا: اس پر کوئی بیٹھ گیا ہوگا، ہمارے ہاں تو سالہا سال نہیں ٹوٹتیں۔
.................................................. ............
ڈاکٹر: (پہلوان سے) آپ کا کندھا کیسے اتر گیا۔
پہلوان: میں نے اپنے بیٹے کا بستہ کندھے سے لٹکالیا تھا۔
.................................................. ....
آقا: اس طرح جاؤ جیسے کمان سے تیر نکل کر جاتا ہے اور اسی طرح سے واپس آنا۔
نوکر: لیکن جناب! آپ تو صبح کہہ رہے تھے ، کمان سے نکلا ہوا تیر واپس نہیں آتا۔
..............................................
ایک مداری تماشا دکھا رہا تھا۔ اس نے مجمعے میں سے ایک لڑکے کو بلایا اور اس سے کہا:
”اے لڑکے! بتاؤ! تم میرے رشتے دار تو نہیں ہو۔“
لڑکے نے جواب دیا:
” نہیں ابا جان!“
.................................................. ..
ایک شخص ریڈیو فروخت کرنے والے سے بری طرح جھگڑ رہے تھے۔ ان کا مطالبہ تھا کہ وہ ریڈیو نصف قیمت پر دیں۔ دکان دار نے تنگ آکر پوچھا:
” آخر آپ اس پر کیوں اڑ گئے ہیں کہ ریڈیو نصف قیمت پر ہی لیں گے۔“
اس شخص نے جواب دیا:
”اس لیے کہ میں ایک کان سے بہرہ ہوں۔“
..................................................
جج: کیا تم اقرار کرتے ہو کہ جیبیں کاٹتے ہو۔
ملازم: بالکل جناب! میں درزی ہوں۔
.................................................
شاعر: (بیوی سے) میری آواز کتنی درد بھری ہے؟
بیوی: تبھی آپ کے اشعار سن کر میرے سر میں درد ہوجاتا ہے۔
..................................................
ایک دوست: کیا کررہے ہو؟
دوسرا: چھوٹے بھائی کو خط لکھ رہا ہوں۔
پہلا: لیکن تمہیں تو لکھنا آتا ہی نہیں۔
دوسرا: تو اسے کون سا پڑھنا آتا ہے؟
.................................................. ..

بےباک
07-05-2011, 09:09 AM
واہ جی واہ ، سیما صاحب ،میں ریاض میں ہوتا ہوں
مجھ پر لطیفہ لگا رہی ہیں آپ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ھاھاھاھاھا
امین فیصل آپ کے لطیفے خاصے زبردست تھے

اذان
07-16-2011, 01:15 AM
http://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpghttp://rajafamily.com
/lib/00051A08R.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08Q.jpg
http://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gifhttp://rajafamily.com/lib/00051A08P.gif

ایک عورت ملازمت کے لیے آئی۔ گھر کی مالکن نے اس سے پوچھا:
”تمہیں پچھلی ملازمت سے کیوں نکال دیا گیا؟“
”میں اکثر ان کے بچوں کو نہلانا بھول جاتی تھی۔“
یہ سن کر مالکن کا بیٹا بول اٹھا:
”امی! یہ بہت اچھی ہیں، انہیں رکھ لیں۔“
.................................................. ..........
باپ: (ڈاکٹر بیٹے سے) جب میں اپنے انگوٹھے سے کام کرتا ہوں تو یہ بہت درد کرتا ہے۔
ڈاکٹر بیٹا: آپ اس انگوٹھے سے کام کرتے ہی کیوں ہیں، باقی آٹھ انگلیاں اور ایک انگوٹھا کس لیے ہیں؟
.................................................. .....
ڈاکٹر: آپ کو کیا تکلیف ہے۔
مریض: کھانا کھانے کے بعد بھوک نہیں لگتی۔
................................................
بیٹا: ابو! کیا سب باپ اپنے بیٹوں سے زیادہ عقل مند ہوتے ہیں؟
باپ: ہاں بیٹا۔
بیٹا: اچھا یہ بتائیں، ریڈیو کس نے ایجاد کیا؟
باپ: مارکونی نے۔
بیٹا: لیکن اس کے باپ نے کیوں ایجاد نہ کیا؟
.................................................. ........
ایک دوست: کس قدر عجیب بات ہے کہ انڈے میں سے چوزہ نکلتا ہے۔
دوسرا: اس سے زیادہ عجیب بات یہ ہے کہ وہ اس میں داخل کیسے ہوتا ہے؟
.................................................. .....
دو مسافر ایک ٹرین میں سفر کررہے تھے۔ایک نے دوسرے سے کہا:
” میں شاعر ہوں۔“
یہ سن کر دوسرا گھبراگیا۔ اس نے فوراً کہا:
” میں بہرہ ہوں۔“
.............................................
ایک پروفیسر صاحب رات کو گھر آتے تو اپنی چھڑی کو کونے میں کھڑا کردیتے اور خود بستر پر لیٹ جاتے، ایک رات وہ گھر آئے تو چھڑی کو بستر پر لٹادیا اور خود تمام رات کونے میں کھڑے رہے۔
.................................................. ...
مہمان: (میزبان کے لڑکے سے) یہ ساتھ والے کمرے میں کون رورہا ہے؟
لڑکا: ابو گانا گارہے ہیں۔
....................................
استاد: محمد بن قاسم کہاں پیدا ہوئے؟
شاگرد: اپنے گھر میں۔
.................................................. .
ایک بچہ زخمی کان لیے گھر پہنچا، ماں نے اس سے پوچھا۔
تم اس لڑکے کو پہچان لوگے جس نے تمہیں مارا ہے؟
بچے نے جواب دیا:
”کیوں نہیں! اس کا ناک میری جیب میں ہے۔“
.................................................
استاد: جب بادل آئیں تو کیا امید کرنی چاہیے؟
شاگرد: چھٹی کی۔
.................................................. ........
ایک عورت: میں جب سویٹر بُنتی ہوں، پہلا اچھا بنا جاتا ہے، دوسرا بالکل خراب، کیا کروں؟
دوسری: تم پہلا سویٹر بُنا ہی نہ کرو۔
...............................................
جج: تمہیں بار بار چوریاں کرنے سے کیا ملتا ہے؟
چور: آپ سے ملاقات کا موقع۔
.............................................
عورت: انڈے کیا بھاؤ ہیں۔
دکان دار: ٹوٹے ہوئے پانچ روپے درجن، ثابت دس روپے درجن۔
عورت: تو یہ انڈے توڑ کر ایک درجن دے دو۔
.................................................. ......
بیٹا: میں امتحان میں پاس ہوگیا تو آپ کیا لے کر دیں گے۔
باپ:موٹر سائیکل۔
بیٹا:اور اگر میں فیل ہوگیا؟
باپ:رکشہ
............................................
بچہ: ابو وہ دیکھیے! اس شخص کے سر پر بال نہیں ہیں۔
ابو:خاموش، ایسی باتیں نہیں کرتے۔
بچہ:کیوں ابوجان! کیاانہیں یہ بات معلوم نہیں ہے۔
...............................................
ایک بزرگ نے مرزا غالب کو خط لکھا۔ تحریر بہت خراب تھی۔ مرزا سے نہ پڑھی گئی۔ اس کے جواب میں ان بزرگ کو لکھا:
” آپ کا خط ملا، اس کو چوما، آنکھوں سے لگایا، آنکھیں پھوٹیں جو ایک لفظ بھی پڑھا ہو، تعویز بناکر تکیے کے نیچے رکھ لیا ہے۔ آپ کا عقیدت مند ہوں، مرزا غالب۔
.................................................
گاہک: تمہاری گائے کتنا دودھ دیتی ہے۔
گوالا: جی! پانچ کلو۔
گاہک: اس میں سے کتنا بیچتے ہو۔
گوالا: جی آٹھ کلو۔
.........................................
ایک دولت مند کے بیٹے سے استاد نے کہا، پڑھو الف سے انار، اس نے جواب میں کہا، پہلے انار لوں گا، اس کو کھاؤں گا، پھر پڑھوں گا، استاد نے باپ کو یہ بات کہلوا بھیجی۔ اس نے انار بھیج دیا۔ دوسرے دن استاد نے کہا، پڑھو ب سے بکری، شاگرد نے جواب دیا، پہلے بکری لوں گا پھر پڑھوں گا۔ باپ کو پیغام ملا تو اس نے استاد سے کہلوابھیجا:
”یہ سوچ لیں، آگے ج سے جہاز آرہا ہے۔“
............................................
ایک نشے باز گھومتا پھرتا باغ میں تالاب کے کنارے جاپہنچا۔ پانی میں چاند کا عکس دیکھ کر اس نے قریب کھڑے شخص سے پوچھا:
”بھیا! یہ پانی میں کیا چیز چمک رہی ہے۔“
اس نے بتایا کہ یہ چاند ہے۔ یہ سن کر وہ بولا:
” حیرت ہے، میں چاند پرکیسے جاپہنچا۔
.................................................. .........
ماں: بیٹا! کیا کررہے ہو؟
بیٹا: جغرافیے کے سوال حل کررہا ہوں۔
ماں: کوئی سوال نہ آئے تو مجھ سے پوچھ لینا۔
بیٹا: اچھا تو بتادیں، دریائے نیل کہاں واقع ہے۔
ماں: غسل خانے میں۔
.................................................. ..............
استاد: بتاؤ! دنیا میں کون سی چیز سب سے زیادہ کھائی جاتی ہے۔
شاگرد: استاد کی مار۔ (ن۔ رمضان۔ اعوان ٹاؤن لاہور)
ایک شخص اپنا مضمون لے کر اخبار کے دفتر میں گیا اور فخر کے انداز میں ایڈیٹر سے بولا:
”ایسے بہت سے مضامین میری الماری میں رکھے ہیں۔“
ایڈیٹر نے مضمون پڑھنے کے بعد کہا:
” تب پھر اس کو بھی الماری ہی میں رکھ دیں۔“
.................................................. ..........
شیطان نے فرعون کے دروازے پر دستک دی۔ اس نے پوچھا:
” کون ہے؟“
جواب میں شیطان نے کہا:
” خدائی دعویٰ کرتے ہو اور پوچھتے ہو ،کون ہے؟“
.................................................. .....
ایک سیاسی لیڈر حج کرنے گیا۔ شیطان کو کنکریاں مارنے کی باری آئی، کنکریاں شیطان کو ماریں تو آواز آئی:
”تم تو اپنے ہی آدمی ہو، تمہیں کیا ہوگیا ہے۔“
.................................................. ....
ایک آدمی نے مرتے وقت کہا:
”دوست! تمہارے پچاس ہزار روپے میں نے غبن کیے تھے، تمہاری فیکٹری میں آگ میں نے لگوائی تھی، تم پر جھوٹے الزامات بھی میں نے ہی لگوائے تھے، اب تم مجھ سے بدلہ لینا چاہو تو لے لو۔“
دوسرے نے جواب دیا:
” کوئی بات نہیں، میں نے بدلہ لے لیا ہے، تمہیں زہر میں نے ہی دیا ہے۔“
.................................................. ....
نئے قیدی نے پرانے قیدی سے پوچھا:
” کیا بات ہے، تمہارا کوئی بھی رشتے دار کبھی جیل میں تم سے ملنے نہیں آتا۔
پرانے قیدی نے جواب دیا:
”اﷲ کا شکر ہے، میرے سارے رشتے دار یہیں ہیں۔“
............................................
استاد: امجد سال کی جمع بتاؤ۔
امجد: جناب سالن۔
..............................................
گاہک: (بیرے سے) یہ دیکھو، گوشت بالکل نہیں گلا۔
بیرا: جی ہاں! ہمارے ہاں کوئی چیز بھی گلی سڑی نہیں ہوتی۔
................................................
استاد: تمہارے پرچے میں انڈا آیا ہے۔
شاگرد: جناب! کچا یا ابلا ہوا۔
..............................................
استاد: شاہ جہاں بادشاہ کہاں دفن ہے۔
شاگرد: اپنی قبر میں۔
.................................................. ....
بھکاری: ایک روپیہ دے دو بیٹا۔
نوجوان: سو کے نوٹ کا کھلا ہے۔
بھکاری: ہاں ہے۔
نوجوان: پہلے وہ خرچ کرلو۔
.................................................. ....
استاد: بتاؤ! انگریز وں نے برصغیر میں پہلا قدم رکھنے کے بعد کیا کیا۔
شاگرد: دوسرا قدم رکھا۔
.................................................
استاد: گرمیوں کے فائدے بتاؤ۔
شاگرد: ان کا فائدہ یہ ہے کہ سردی نہیں لگتی۔
.................................................. .........
ایک اسکول میں نرسری کی استانی بیسویں بچے کو جوتا پہنارہی تھی۔ جھکے جھکے اس کی کمر میں درد ہونے لگا تھا۔ بیسواں بچہ شرمیلا اور خاموش طبع تھا۔ جب استانی پہنا چکی تو بچہ بڑے سکون سے بولا:
” یہ جوتے میرے نہیں ہیں۔“
استانی کا جی چاہا، وہ رو دے مگر پھر خود پر قابو پاکر بچے کے جوتے اتارنے لگی۔ جوتے اتارکر کمر سیدھی کی ہی تھی کہ بچہ بولا:
”یہ جوتے میرے بھائی کے ہیں مگر ماں نے کہا تھا، آج تم یہ پہن کر چلے جاؤ۔“

.................................................. ...
استاد: تمہارا سارا مضمون غلط ہے، میں تمہارے ابو سے شکایت کروں گا۔
شاگرد: یہ انہوں نے ہی تو لکھ کر دیا ہے۔
.................................................. .......................
ایک افیمی: یار یہ راستہ کہاں جاتا ہے۔
دوسرا افیمی: ہسپتال کی طرف۔
پہلا: کیوں! کیا یہ بیمار ہے...
.................................................. ................
ایک دوست: بتاؤ، پرچہ کیسا دے آئے ہو۔
دوسرا: میں تو خالی دے کر آیا ہوں۔
پہلا: میں بھی خالی دے کر آیا ہوں۔
دوسرا: پھر تو غضب ہوگیا، وہ سمجھیں گے ، ہم دونوں نے نقل کی ہے۔
.................................................. ..............
بچہ: امی امی! منا گرگیا ہے۔
ماں: ہائے میرا لال گرگیا۔
بچہ: منا لال نہیں امی! کالا ہے۔
.................................................. ......
ایک شخص کا گدھا مسجد میں آگھسا۔ مالک بھی تلاش کرتا وہاں آگیا۔ دیکھا کہ مولوی صاحب گدھے کو بری طرح مار رہے ہیں۔ اس نے کہا:
” کیوں مارتے ہیں، گدھا تھا، چلا آیا، کبھی ہم بھی تمہاری مسجد میں آئے ہیں۔“
.................................................. .......
آقا: آج تم بہت دیر سے آئے۔
نوکر: میں چھت سے گرگیا تھا۔
آقا: حیرت ہے، چھت سے نیچے آنے میں اتنی دیر لگتی ہے۔
.................................................. ...............
بیرا: کھانے سے پہلے بل ادا کردیں۔
گاہک: وہ کیوں؟
بیرا: کل ایک مسافرکھانا کھاتے ہی مرگیا تھا۔ ہوٹل کے مالک نے اس کا بل مجھ سے وصول کیا۔
.................................................. ...............
ایک آدمی کے گھر میں آگ لگ گئی۔ آس پاس کے لوگ آگ بجھانے کے لیے دوڑے، جب کہ وہ خود آرام سے ایک طرف بیٹھا رہا۔ کسی نے اس سے کہا:
”تم عجیب آدمی ہو، تمہارے گھر میں آگ لگ گئی ہے، دوسرے لوگ آگ بجھا رہے ہیں اور تم آرام سے بیٹھے ہو۔“
اس نے فوراً کہا:
” آرام سے کہاں بیٹھا ہوں، بارش کے لیے دعا کررہا ہوں۔“


اردو منظرمعیاری چیت روم پر جانے کےلئےیہاں کلک کریں
http://urdulook.info/imagehost/?di=513106394975 (http://urdulook.com/chat)

اذان
07-18-2011, 07:08 PM
سیما جی ،،اگر آپ نے نہیں لکھا تو پھر آپ کے علاوہ کون ہو سکتا ؟؟؟مجھے توآپ پر شک تو کیا پکا پکا یقین بھی تھا،، مگر اب؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟:dodgy::s

اذان
07-19-2011, 02:16 AM
ایک دودھ والے کئ بھینس گم ھو گئ۔
کافئ ڈھونڈا پر کہی نہین ملئ۔۔
تو وھ پولئس تھانے رپرٹ درج کرانے چلا گیا۔

دودھ والا، صاحب جی میری بلو نس گئ۔،

تھانے دار، ضرور کوئ لڑائ ھوئ ھو گی،

دودھ والا، نھیں صاھب بلو میری مج دا نام اے۔

تھانیدار،

Oh I See

دودھ والا غصے میں آگیا اور تھانے دار کے گال پے ایک زور دار تھپر مار دیا۔
تھانے دار، یہ کیوں؟
دودھ والا، او آئ سئ تے پھڈی کیوں نہیں سی۔:)
__________________

ایک سردار جی اپنی پتنی کو موٹر سائیکل پر شاپنگ پر لے جا رہے تھے. سردار جی انتہائی تیز رفتاری سے موٹر سائیکل چلا رہے تھے. سردارنی نے کہا کہ سردار جی موٹر سائیکل آہستہ چلائیں مجھے ڈر لگ رہا ہے.

تو سردار جی کہنے لگنے کہ اور پلئے لوکے اگر تجھے ڈر لگ رہا ہے تو تو بھی میری طرح آنکھیں بند کر لے.
....................................
ایک سردار کو اس کا سوہرا پھینٹی لگا رہا تھا تو لوگوں نے کہا کہ آپ اس کو پھینٹی کیوں*لگا رہے ہو۔
تو سردار جی کا سسر کہنے لگا کہ میں نے اس کو ایس ایم ایس کیا تھا کہ تمہاری بیوی کے ہاں لڑکا پیدا ہوا ہے تو اس الو کے پٹھے نے اپنے سارے دوستوں کو فارورڈ کردیا


..................................................
پرنام سنگھ بڑا نامی گرامی پائلٹ تھا ايک دفعہ اسے جہاز کو لندن سے امريکہ لے جانا تھا آٹھ گھنٹے کی اس طويل پرواز ميں جہاز سمندر پر اڑتا ھے۔ جھاز کو پرواز کئے چار گھنٹے گزر چکے تھے کچھ مسافر سو رھے تھے کچھ جاگ رھے تھے۔ اچانک سپيکر پر کپتان کي آواز ابھري "خواتين و حضرات ۔۔۔۔۔۔۔۔ جہاز کا کپتان پرنام آپ سے مخاطب ھے۔ نيويارک جانے والي پرواز پر ھم چار گھنٹے کا سفر کر چکے ہيں، ٣٥ فٹ کي بلندي پر سفر کرتے ھوئے ھم اس وقت بحراوقيانوس کے عين درميان ميں ھيں"

"اگر آپ دائيں بائيں کي کھڑکيوں سے باھر جھانک کر ديکھيں تو آپ کو نظر آئے گا کہ جہاز کے چاروں انجنوں ميں آگ لگي ھوئي ھے"

"اگرآپ جہاز کے پچہلے حصے ميں جاکر ديکھيں تو پتا چلے گا کہ جھاز کي دم چند لمحوں بعد ٹوٹ کر عليحدہ ھو جائے گي"

“اگر آپ جہاز کي کھڑکي سے نيچے سمندر ميں ديکھيں تو آپ کو پيلے رنگ کي چھوٹي سي لائف بوٹ نظرآئے گي، جس ميں سوار تين آدمي آپ کي طرف ديکھ کر ہاتھ ھلا رھے ھيں"

“يہ تين آدمي، ميں پرنام سنگھ، ميرا معاون پائلٹ کورنام سنگھ اور نيوي گيٹر بنتاسنگھ ھيں۔ سپيکر پر جو آواز آپ سن رھے ھيں وہ پہلے سے ريکارڈ شدہ ھے، واہِ گرو آپ کو اپني پناہ ميں کہے، اجازت چاھتا ھوں ست سري اکال"
..................................
ایک سردار جی ویسٹ انڈیز انڈیا سیریز کے میچ دیکھنے کے لئے ویسٹ انڈیز گئے انھوں نے ویسٹ انڈیز کے ساحلوں کے بارے بہت سن رکھا تھا سو وہ سمندر کنارے سن باتھ کے لئے چلے گئے
کچھ دیر گزری تھی کہ ایک انگریز کا گزر ہوا اور اس نے سردار جی سے پوچھا آر یو ریلیکسنگ ؟

سردار جی بولے نو نو آئی ایم ناٹ ریلیکسنگ
آئی ایم ہرنام سنگھ

کچھ دیر مزید گزری کہ ایک سیاہ فام عورت نے گزرتے ھوئے پھر وہی سوال دہرایا

سردار جی کا جواب پھر وہی تھا

خیر جو بھی وہاں سے گزرتا وہ یہی پوچھتارہا سردار جی کا سکون غارت ہو گیا
اور وہ آگ بگولا ہو کر ایک طرف چل دیئے
کچھ دور جانے کے بعد ان کو ایک اور سردار منہ پر ہیٹ لئے لیٹا نظر آیا

ہرنام سنگھ نے اس کے منہ سے ہیٹ پیچھے کیا اور پوچھا


آر یو ریلیکسنگ ؟
دوسرے سردار جی نے جواب دیا
یس آئی ایم ریلیکسنگ

ہرنام سنگھ نے ایک زور کا طمانچہ اس کے منہ پر مارا اور کہا

“اوئے کھوتے دے پتر توں ایتھے پیا ایں تے اوتھے تینوں سارے لب رئے نیں“

........................................
سردار ایئر پورٹ پر پیرا شوٹ بیچ رہے ہوتے ہیں ایک صاحب ان سے خرید لیتے ہیں اور کہتے ہیں اگر یہ جھلانگ لگانے کے بعد نہ کھلا تو ـــــــ
سردار جی بڑی شوق سے جناب کدی اے نہ نہ کھلایا تسی اپنے پیسے لے جانا
.............................
ویسٹ انڈیز سے درگت بننے کے بعد ہرنام سنگھ کو شوق چرایا کہ چلو جرمنی میں فٹ بال کا ورلڈ کپ دیکھنے چلتے ہیں۔
چنانچہ وہ جرمنی پہنچے اور ان کو بڑی مشکل سے میچ دیکھنے کا ٹکٹ مل ہی گیا اور لگے میچ دیکھنے۔ تمام تماشائی اپنی اپنی ٹیموں کا حوصلہ بڑھا رہے تھے۔ ہرنام سنگھ فٹ بال کا میچ دیکھ کر بور ہو رہے تھے ان کی سمجھ میں کچھ نہیں آ رہا تھا کہ تمام کھلاڑی ایک ہی گیند کے پیچھے کیوں لڑ رہے ہیں۔
جب کافی دیر سردار جی کو کچھ سمجھ نہ آئی تو انھوں نے اپنے پاس بیٹھے ہوئے ایک تماشائی سے پوچھے تمام لوگ ایک گیند کے پیچھے لڑ کیوں رہے ہیں؟
تماشائی نے جواب دیا سردار جی یہ لڑ نہیں رہے بلکہ گول کرنے کی کوشش کر رہے ہیں
سردار جی بولے میں تو سمجھتا تھا کہ صرف سردار ہی بے وقوف ہوتے ہیں لیکن انگریز قوم تو ہم سے بھی ذیادہ بے وقوف ہے۔ فٹ بال تو پہلے ہی گول ھے اسے لاتیں مار مار کر اپنا وقت ضائع کر رہی ہے۔

..............................
سردار جی اپنا رشتہ دیکھنے گئے ۔۔

گھروالوں نے کہا کے دونوں کو اکیلا چھوڑ دو۔ بات وات کر لیں آپس میں۔

سردار لڑکی سے " بہن جی آپ کتنے بہن بھائی ہو ؟"

لڑکی غصہ سے " پہلے 3 تھے اب 4 ہوگئے ہیں "

بےباک
07-19-2011, 08:03 AM
ھاھاھاھاھا
سکھوں کو خوب رگڑا ،،:-):-):-):-):-):-):-):-)

اذان
07-25-2011, 05:22 PM
بیوی: میں نے کہا جی ! تم مجھ سے کتنی محبت کرتے ہو؟
شوہر: اتنی محبت جتنی شاہ جہاں کو ممتاز سے تھی
بیوی: (خوشی سے) اوہ سچی ؟ تو کیا تم میرے مرنے کے بعد میری یاد میں تاج محل بنواؤ گے۔
شوہر: میری جان میں نے تو پلاٹ خرید بھی لیا ہے۔ اب تمہاری طرف سے ہی دیر ہے۔
..............................
مرنے کے بعد دو عورتوں کی روحیں آپس میں ملیں ۔ باتوں باتوں میں ایک دوسرے سے مرنے کی وجہ پوچھی ۔ ایک عورت کہنے لگی ۔ میں اپنے شوہر پر خواہ مخواہ شک کرتی رہتی تھی۔ کہ شاید اسکا کسی دوسری لڑکی سے کوئی چکر ہے۔

ایک دن میں دفتر سے جلدی گھر پہنچی کہ دیکھوں* کہیں میرے شوہر نے کسی دوسری لڑکی کو تو گھر میں نہیں گھسا رکھا۔ جب میں اچانک گھر پہنچی تو وہ اکیلا تھا۔ بس مجھے اپنے آپ پر اتنی شرمندگی ہوئی کہ میں شرم سے مر گئی۔

“ کاش تم ڈیپ فریزر کھول کر دیکھ لیتی تو نہ تم مرتی اور نہ میں “ دوسری لڑکی نے غمزدہ لہجے میں کہا ;)
.............................
حاکم شہر نے اعلان کروایا کہ تمام شادی شدہ مرد دو قطاروں میں*کھڑے ہوں*گے۔ ایک قطار میں وہ جو بیوی سے ڈرتے ہیں اور ایک میں وہ جو بیوی سے نہیں ڈرتے۔ بیوی سے ڈرنے والوں*کی طویل قطار تھی جبکہ بیوی سے نہ ڈرنے والوں کی قطار میں*صرف ایک شخص تھا۔ حاکم اس شخص کے پاس آیا اور اسے شاباش دی اور پوچھا آپ یہ کیسے سمجھتے ہیں کہ آپ بیوی سے نہیں ڈرتے۔ اس نے جواب دیا۔۔۔۔۔ معلوم نہیں بیوی کہہ کر گئی ہے کہ اس قطار میں*کھڑ ے رہو ۔۔۔۔۔۔

اذان
07-26-2011, 12:57 AM
ایک شخص اپنے کسی عزیز کے گھر ہر روز چلا جاتا تھا وہ میاں بیوی اس سے بہت تنگ تھے ۔
ایک دن اس مہمان نے آکر دروازہ کھٹکٹا یا ، اندر سے پوچھا کیا کون ۔
اُس شخص نے اپنا نام بتایا ، اندر دونوں میاں نیوی نے مشورہ کیا کی ہم دونوں لڑائی کریں گے اور وہ چھڑانے آئے گا تو اس کی پٹائی کریں گے۔
ڈرامہ شروع ہوگیا وہ مہمان چھڑانے کیلئے آگے بڑھا تو اسے اندازہ ہوا کہ کام خراب ہے ،
وہ باہر بھاگ نکلا ۔ اب میاں اپنی روتی ہوئی بیوی کو چپ کرواتا ہے اور کہتا
چپ ہوجا میں نے کونسا سچ مچ میں مارا ہے
بیوی : میں کونسا سچ مچ میں رو رہی ہوں۔
اتنی بات کے بعد مہمان پھر آجاتا ہے اور کہتا ہے کہ میں کونسا سچ مچ میں گیا ہوں

سقراط
11-26-2011, 02:48 PM
ایک گائیڈ آبشار کے پاس سیاحوں کو اس کے بارے میں بتارہاتھا:
خواتین و حضرات یہ دنیا کے چند مشہور ترین آبشاروں میں سے ایک ہے۔ اس کے گر نے کی آواز کئی میل دو ر تک سنائی دیتی ہے۔
!!!
اب میں خواتین سے درخواست کروں گا کہ وہ تھوڑی دیر کے لئے خاموش ہوجائیں تاکہ آبشار کی آواز سنائی دے سکے

اذان
11-28-2011, 02:26 AM
ایک جگہ ایک بس خراب ہو گئی مالک نے کنڈیکٹر سے بس ٹھیک کرنے کو کہا ۔ کافی دیر ہو گئی مگر بس ٹھیک نہ ہوئی اس پر تھک ہار کر کنڈیکٹر نے کہا !
میں تو اب بہت تھک گیا ہوں اب تو میری بس ہو گئی ہے""
مالک یہ سن کر جلدی سے بولا""بس تو میری ہے ۔ تمہاری کیسے ہو گئی ""

سقراط
11-28-2011, 02:48 PM
آپ کے کہنے کا مطلب خواتین کی آواز اتنی پیاری ہوتی ہے کہہ آبشار کی آواز بھی دب جاتی ہے ان کے سامنے واھ واھ واھ کیا بات کی آپ نے

سیما جی میرے کہنے کا مطلب یہ نہیں بلکہ یہ مطلب تو آپ نے خوش فہمی کے تحت اخذ کیا ہے میرے کہنے کا مطلب تو صرف سیانے ہی سمجھ سکتے ہیں:P:P:P:P

اذان
03-17-2012, 08:50 PM
ایک راہگیر: (دیہاتی سے) یہ آپ کے حقّے کا پائپ اتنا لمبا کیوں ہے؟
دیہاتی: ڈاکٹر صاحب نے مجھے تمباکو سے دور رہنے کے لیے کہا ہے۔

اذان
07-24-2012, 05:24 AM
http://urdulook.info/imagehost/?di=RYP9

pervaz khan
07-24-2012, 12:00 PM
بہت خوب جناب

بےلگام
07-24-2012, 11:15 PM
بہت اچھے جناب

اذان
10-01-2012, 08:19 PM
http://urdulook.info/imagehost/?di=YNML
قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران پی پی پی کے ایک رکن نے اپنی تقریرکے دوران ایک کہانی سُنائی
ایک باپ نے اپنے تین بیٹوں کو ایک ایک سو روپیہ دیا ۔ اور کہا کہ ایسی چیز خرید کر لاؤ کہ اس سے یہ
کمرہ بھر جائے۔ ایک بیٹا 100روپے کی کپاس خرید لایا۔ لیکن اس سے کمرہ نہ بھر سکا۔
دوسرابیٹا 100 روپے کا بھوسہ خرید لایا مگر اس سے بھی کمرہ نہ بھرسکا۔
تیسرا بیٹا بہت ذہین تھا وہ گیا اور ایک روپے کی موم بتی لے آیا۔۔!!!
اسے جلا کر کمرے میں رکھ دیا تو اس کی روشنی سے سارا کمرہ بھر گیا ۔
اس کے بعد پی پی پی کے رُکن قومی اسمبلی نے کہا۔
ہمارے صدر زرداری صاحب تیسرے بیٹے کی طرح ہیں۔
جس دن سے صدربنے ہیں مُلک کو خوشحالی کی روشنی سے منور کردیا ہے
اسمبلی حال کی پچھلی نشستوں سے کراچی سے منتخب ایک رُکن کی آواز آئی،، وہ سب تو ٹھیک ہے۔
http://urdulook.info/imagehost/?di=GDNZ
باقی 99 روپے کہاں ہیں ؟؟؟
http://urdulook.info/imagehost/?di=DNP8
http://urdulook.info/imagehost/?di=DF3E

ملہار
02-01-2014, 11:16 PM
:sarcasm::smiley027:th_smilie_schild