PDA

View Full Version : چاند گرہن



بےباک
06-16-2011, 12:25 AM
http://1.bp.blogspot.com/_6s1b8J75s7o/TQrekkGGoFI/AAAAAAAABCA/eJ8HmYpkDx4/s400/lunar-eclipse-1999-almost-total-ANON.gif
http://sociable.co/wp-content/uploads/2010/12/total-lunar-eclipse1.jpg
سائنسدانوں کے مطابق آج کا مکمل چاند گرہن گیارہ سالوں بعد ہورہا ہے ۔یہ صدی کا سب سے طویل دورانیے کا مکمل چاند گرہن ہے۔ گہن کے دوران چاند کا رنگ تانبے کی طرح سرخ مائل ہوجائے گا اور یہ زمین سے ایک سرخ بال کی طرح دکھائی دے گا۔ یہ رواں سال کا پہلا مکمل چاند گرہن ہے جبکہ اگلا چاند گرہن اسی سال 10 دسمبر کو ہو گاتاہم وہ جزوی چاند گرہن ہوگا۔مکمل چاند گرہن27جولائی 2018ء میں ہونے کے امکانات ہیں۔
چاند گرہن پاکستان سمیت مشرقی افریقہ کے آدھے حصے، مشرق وسطیٰ، خلیجی ممالک ، وسط ایشیاء ، جنوبی ایشیاء اور مغربی آسٹریلیا میں بھی دیکھا جاسکے گا ۔ گرہن کا دورانیہ 50 منٹ ہے۔پاکستان کے محکمہ موسمیات کی جانب سے جاری کردہ تفصیلات کے مطابق گرہن پاکستانی وقت کے مطابق رات 10 بجکر 25 منٹ سے صبح 4 بجے تک ہوگا جو پاکستان میں بھی دیکھا جاسکے گا۔
چاند گرہن کا آغاز رات 10 بجکر 25 منٹ پر ہوگا جبکہ 11 بجکر 23 منٹ سے جزوی چاند گرہن شروع ہوگا اور رات 12 بجکر 22 منٹ سے مکمل چاند گرہن کا آغاز ہوگا۔ اس طرح رات ایک بجکر 13 منٹ پر یہ اپنے عروج پر ہوگا جبکہ 2 بجکر 3 منٹ پر چاند گرہن ختم ہونا شروع ہوجائے گا۔رات 3 بجکر 2 منٹ پر چاند گرہن میں جزوی طور پر کمی آجائے گی اور صبح تقریباً 4 بجے چاند گرہن مکمل طور پر ختم ہوجائے گا۔
سائنس دانوں کے مطابق رواں صدی میں کل 85چاند گرہن ہوں گے ۔ ان میں سے دو مکمل اور طویل ترین دورانئے کے چاند گرہن ہوں گے جن میں سے بدھ اور جمعرات کی درمیانی رات کو پہلا جبکہ 27جولائی 2018ء کو دوسرا مکمل چاند گرہن ہوگا۔ آج ہونے والا چاند گرہن دوہزار اٹھارہ کو ہونے والے چاند گرہن سے تین منٹ چھوٹا ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


نماز کسوف وخسوف (سورج و چاند گرہن کے وقت کی نماز)


یہ نماز سورج یا چاند گرہن کے وقت پڑھی جاتی ہے۔

ابومسعودرضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ : قال النبی: (إن الشمس والقمر لا ینکسفان لموت أحد من الناس ولکنھما آیتان من آیات اﷲ فإذا رائیتموھا فقوموا فصلوا) (صحیح بخاری:۱۰۴۱)

’’بے شک سورج اور چاند لوگوں میں سے کسی کی موت کی وجہ سے گرہن میں نہیں آتے وہ دونوں تو اللہ کی نشانیوں میں دو نشانیاں ہیں پس جب تم اس کو دیکھو تو نماز کی طرف بڑھو۔‘‘

عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہ کہتے ہیں: انخسفت الشمس علی عہد النبی ! فصلی رسول اﷲ ! فقام قیاما طویلا نحوا من قراء ۃ سورۃ البقرۃ ثم رکع رکوعا طویلا ثم رفع فقام قیاما طویلا وھو دون القیام الاول ثم رکع رکوعا طویلا وھو دون الرکوع الاول ثم سجد ثم قام قیاما طویلا وھو دون القیام الاول ثم رکع رکوعا طویلا وھو دون الرکوع الاول ثم رفع فقام قیاما طویلا وھو دون القیام الاول ثم رکع رکوعا طویلا وھو دون الرکوع الاول ثم سجد ثم انصرف وقد تجلت الشمس

’’ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ میں سورج گرہن ہوا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے (باجماعت) دو رکعت نماز ادا کی آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سورہ بقرہ کی تلاوت جتنا لمبا قیام کیا پھر لمبا رکوع کیا پھر اٹھے اور لمبا قیام کیا اور وہ پہلے قیام سے ذرا کم تھا پھر لمبا رکوع کیا اور وہ پہلے رکوع سے ذرا کم تھا پھر سجدہ کیا پھر کھڑے ہوگئے اور لمبا قیام کیا اور وہ پہلے قیام سے ذرا کم تھا پھر لمبا رکوع کیا اوروہ پہلے رکوع سے ذرا کم تھا پھر اٹھے اور لمبا قیام کیا اور وہ پہلے قیام سے ذرا کم تھا پھر لمبا رکوع کیا اور وہ پہلے رکوع سے ذرا کم تھا پھر سجدہ کیا اور پھر (سلام پھیر کر) کھڑے ہوئے تو سورج صاف ہوچکا تھا۔‘‘(صحیح بخاری:۱۰۵۲ )