PDA

View Full Version : حکمران



گلاب خان
11-28-2010, 11:04 PM
حکمراں
جب نعرے لگتے ہیں ووٹوں کے
تو کہتے ہیں طالب۔۔
ہم تم کو ۔۔ روٹی ۔۔ کپڑا۔۔۔ مسکن دیں گے ۔۔۔
تم سے بس۔۔۔ کاغذ کا ٹکڑا ۔۔۔لیں گے۔۔
***
کچھ جاہل ۔۔ جاہل کو دیتے ہیں ووٹ
کچھ پر چلتے ہیں نوٹ۔۔۔
رشوت خوری
سینہ زوری
سب ہوتی ہے
پھرحاکم کی کرسی جب سج جاتی ہے۔۔
مجلس لگ جاتی ہے۔۔
حصے بانٹے جاتے ہیں ۔۔
صوبہ تیرا صوبہ میرا
خلقت کے حصے میں
بس افلاس آیا
خلقت روتی ہے
بھوکی سوتی ہے
بجلی پانی
سب کچھ رخصت
جو وعدے تھے۔۔۔ کاغذ کا ٹکڑا تھے
***
وعدہ کرکے توڑو۔۔۔
رسی کاٹو تنہا چھوڑو۔۔
بانہیں موڑو۔۔ سب کچھ چھینو ۔۔۔
چوسو۔۔۔
قطرہ خوں کا نہ بچ پائے
مسکیں بندہ مرجائے ۔۔۔۔
مٹی میں رچ جائے۔۔۔
حاکم کا بیٹا کہتا ہے
کب ہیں میری باتیں قرآنی باتیں؟؟
سچ کہتا ہے۔۔۔باتیں اس کی غیر انسانی باتیں
***
گر کہتا ہوں۔۔
روٹی کپڑا مسکن مانگو۔۔
کہتا ہے حاکم۔۔
پکڑو اس کو۔۔الٹا ٹانگو۔۔
لوگوں کو یہ بھڑوا۔۔۔
بھڑکاتا ہے۔۔۔
دہشت پھیلاتا ہے۔۔۔
***
ہم نے جب مانگا اپنا حق
ٹھہرے بھڑوے ۔۔۔ دہشت گرد
اوکے۔۔۔ اوکے
ہم بھڑوے۔۔ ہم دہشت گرد
پر اے حاکم
تم ہمارے سر پر لٹکی تلوار
تم ہی ہو ہمارے سردار

بےباک
11-30-2010, 03:09 AM
بہت ہی زبردست ، شکریہ گلاب خان جی، ایسی چیزیں پیش کرتے رہیں ،

تانیہ
11-30-2010, 11:22 PM
بہت خوب شیئرنگ ہے...شکریہ

سقراط
12-27-2010, 01:41 AM
http://www.friendskorner.com/forum/signaturepics/sigpic111171_3.gif