PDA

View Full Version : لفظ زندگی پہ شعر کہیں



تانیہ
06-27-2011, 02:01 PM
آج سے ہم ایک نیا سلسلہ شروع کررہے ہیں کھیل کھیل ہی کھیل میں اس میں آپکو لفظ"زندگی" پہ شعر لکھنا ہو گا
تو پھر ہو جائیں شروع ، آپ سب ساتھیوں کو دعوت دی جاتی ہے
پہلا شعر میری طرف سے
زندگی سے نمٹ رہے ہیں ابھی تو
موت کیا ہے میری بلا جانے

اوشو
06-27-2011, 03:53 PM
زندگی تو ہی بتا کیسے تجھے پیار کروں
تیری ہر سانس میری عمر گھٹا دیتی ہے

اوشو
06-27-2011, 09:38 PM
زندگی کو قریب سے دیکھو
اس کا چہرہ تمہیں رلا دے گا

بلال جٹ
06-29-2011, 09:26 PM
میری زندگی میں بس ایک کتاب ہے،
ایک چراغ ہے،
ایک خواب ہے،
اورتم ہو......! :heart::heart:

تانیہ
06-29-2011, 11:42 PM
اب کے اک عمر میں بھی جینے کا نہ انداز آیا
زندگی چھوڑ دے پیچھے میرا، میں باز آیا

tabi
06-30-2011, 04:49 PM
[attachment=41] (زندگی )

سقراط
06-30-2011, 05:48 PM
ساغر کی زندگی پہ کوئی تبصرے نہ کر
اک شمع جل رہی ہے سررہگزار زیست

تانیہ
06-30-2011, 06:49 PM
ایسا لگتا ہے ہر امتحاں کے لیے
زندگی کو ہمارا پتہ یاد ہے

پاکستانی
08-23-2011, 01:47 PM
ساعات عمر من همگی غرق غم گذشت
دست مرا بگیر که آب از سرم گذشت
مانند مرده ای متحرک شدم بیا
بی تو تمام زندگی ام در عدم گذشت
میخواستم که وقف تو باشم تمام عمر
دنیا خلاف آنچه که میخواستم گذشت
دنیا که هیچ جرعه آبی که خورده ام
از راه حلق تشنه من مثل سم گذشت
بعد از تو هیچ رنگ تغزل ندیده ایم
از خیر شعر گفتن ، حتی قلم گذشت
تا کی غروب جمعه ببینم که مادرم
یک گوشه بغض کرده که این جمعه هم گذشت
مولا شمار درد دلم بی نهایت است
تعداد درد من بخدا از رقم گذشت
حالا برای لحظه ای آرام میشوم
ساعات خوب زندگی ام در حرم گذشت


نامعلوم فارسی شاعر




دلِ ویراں ہے، تری یاد ہے، تنہائی ہے
زندگی درد کی بانہوں میں سمٹ آئی ہے

ایم-ایم
12-18-2011, 06:45 PM
اپنا انجام تو معلوم ہے سب کو پھر بھی
اپنی نظروں میں ہر شخص سکندر کیوں ہے
زندگی جینے کے قابل ہی نہیں اب فاخر
ورنہ ہر آنکھ میں اشکوں کا سمندر کیوں ہے

راجہ صاحب
04-19-2012, 06:13 PM
ایک دو دن کی زندگی کے لئے
ہم نے احسان ہر کسی کے لئے
جیسے ہر آگ میں جلے کوئی
چند لمحوں کی روشنی کے لئے

راجہ صاحب
04-20-2012, 04:29 PM
زندگی جبر مسلسل کی طرح کاٹی ہے
جانے کس جرم کی پائی ہے سزا یاد نہیں
ساغر صدیقی

راجہ صاحب
04-20-2012, 06:34 PM
کیا ہے پیار جسے ہم نے زندگی کی طرح
وہ آشنا بھی ملا ہم سے اجنبی کی طرح

راجہ صاحب
04-23-2012, 06:16 PM
دائم پڑا ہُوا ترے در پر نہیں ہُوں میں
خاک ایسی زندگی پہ کہ پتھر نہیں ہُوں میں

بےلگام
05-25-2012, 09:37 PM
بہت خوب جناب :Ghelyon::Ghelyon::Ghelyon:

نگار
05-30-2012, 05:32 PM
زندگانی کی بات کیا کرتے
نقشِ فانی کی بات کیا کرتے

بڑھ گئی جس سے تشنگی دل کی
اس کہانی کی بات کیا کرتے

آنکھ اپنی تھی خوگرِ طوفاں
بہتے پانی کی بات کیا کرتے

دل کا موسم اُداس تھا جاناں
رُت سہانی کی بات کیا کرتے

ابوسفیان
06-28-2012, 02:27 AM
میں شہیدِ وفا ہو گیا ہوں تو کیا
زندگی میرے گھر سے کہاں جائے گی

اوشو
07-02-2012, 06:27 AM
زندگی کی راہوں میں رنج و غم کے میلے ہیں
بھیڑ ہے قیامت کی اور ہم اکیلے ہیں

روشن خیال
07-16-2012, 05:24 AM
زندگی زندہ دلی کا نام ہے !
مردہ دل کیا خاک جیا کرتے ہیں

روشن خیال
07-16-2012, 05:27 AM
زندگی تجھے جینا ہوگا اپنی روش پر زندہ دلی سے
ہم تو وہ ہیں غموں کو خوشیوں میں بدل دیتے ہیں

روشن خیال
07-16-2012, 05:33 AM
اے زندگی ہمیں دے وہ مثالی موت !
بعد مرنے کہ ہم زندہ رہے اپنے کلام میں

بےلگام
07-16-2012, 05:37 AM
بہت خوب خیال بھائی

اوشو
07-19-2012, 03:13 AM
زندگی کی راہوں میں رنج و غم کے میلے ہیں
بھیڑ ہے قیامت کی اور ہم اکیلے ہیں

بےلگام
07-19-2012, 04:31 AM
زندگی کا زندگی سے فاصلہ رہ جائے گا
صورتیں کھو جائیں گی بس آئینہ رہ جائے گا

نگار
10-28-2012, 04:02 PM
کوئی تم سے اگر پوچھے کہ میری زندگی کیا ہے
ہتھلی پہ خاک ذرا سی رکھنا اور اڑا دینا

سیما
02-02-2013, 06:15 AM
آج تک یہ مسئلہ سلجھا نہیں
میں خفا ہوں کہ خفا ہے زندگی

انجم رشید
02-02-2013, 09:42 AM
پیاری بہن کوئی آسان کام بتایا کریں ھا ھا ھا ھا ھا

محمداشرف يوسف
02-03-2013, 05:44 AM
زندگی آمد برائے بندگی
زند گی بے بندگی شرمندگی
کس کس کی نظرکوہم دیکھیں،ہم سب کی نظرمیں رہتے ہیں
قسمت ہی کچھ ایسی پائی ہے ،ہروقت سفرمیں رہتے ہیں

سیما
02-03-2013, 05:50 AM
یوں تو گزر رہا ہے ہر ایک پل خوشی کے ساتھ
پھر بھی کوئی کمی سی ہے کیوں زندگی کے ساتھ

تمہارے ساتھ یہ موسم فرشتوں جیسا ہے
تمہارے بعد یہ موسم بہت ستائے گا

نگار
02-06-2013, 03:18 PM
یارو کہاں تلک یہ محبت نبھاؤں میں
دو مجھ کو بددعا کہ اسے بھول جاؤں میں

دل تو جلاگیا ہے وہ شعلہ سا آدمی
اب کس کو چھو کے ہاتھ اپنا جلاؤں میں

سنتا ہوں اب کسی سے وفا کررہا ہے وہ
اے زندگی خوشی سے کہیں مر نہ جاؤں میں

تانیہ
02-02-2014, 08:12 PM
زندگی خاک نہ تھی ۔۔۔۔خاک اڑا تے گزری

محمدانوش
02-03-2014, 02:21 PM
زندگی سے نظر ملاؤ کبھی
ہار کے بعد مسکراؤ کبھی

ترکِ اُلفت کے بعد اُمید وفا
ریت پر چل سکی ہے ناؤ کبھی!

اب جفا کی صراحتیں بیکار
بات سے بھرسکا ہے گھاؤ کبھی

شاخ سے موجِ گُل تھمی ہے کہیں !
ہاتھ سے رُک سکاہے بہاؤ کبھی

اندھے ذہنوں سے سوچنے والو
حرف میں روشنی ملاؤ کبھی

بارشیں کیا زمیں کے دُکھ بانٹیں
آنسوؤں سے بُجھا الاؤ کبھی

اپنے اسپین کی خبر رکھنا
کشتیاں تم اگر جلاؤ کبھی!

شاعرہ : پروین شاکر

شاہنواز
03-10-2014, 12:41 AM
بہت خوب عمدہ اچھا کللکشن ہے۔

اوشو
06-07-2014, 03:15 AM
زندگی کیا ہے عناصر کا ظہور ترتیب
موت کیا ہے ، انہی اجزاء کا پریشاں ہونا
پنڈت چکبست لکھنوی

تانیہ
06-07-2014, 10:33 AM
آگہی کا عذاب ڈس لے گا
زندگی بھر کتاب سے بچنا

تانیہ
06-07-2014, 10:36 AM
مُجھے زندگی میں قدم قدم، تیری رضا کی تلاش ہے
تیرے عشق میں اے میرے اللہ مُجھے انتہا کی تلاش ہے

نگار
07-06-2014, 03:52 AM
اک تمنا تھی جو آج آرزو بن گئی
کبھی دوستی تھی آج محبت بن گئی

کچھ اس طرح شامل ہوئے آپ زندگی میں
کہ آپ کو سوچتے رہنا ہماری عادت بن گئی