PDA

View Full Version : کلام غالب سرائیکی میں



پاکستانی
08-22-2011, 02:01 AM
ایہہ نہ ہئی اساڈی قسمت جو وصال یار ہوندا
یہ نہ تھی ہماری قسمت جو وصال یار ہوتا

جو بیا وی جیندے رہندے ایہو انتظار ہوندا
اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا

تیڈے وعدے تے ہیں جیندے، تاں ایہہ جانی کوڑ سمجھی
ترے وعدے پر جئے ہم، تو یہ جاں جھوٹ جانا

ایں خوشی توں مر نہ ویندے جو کجھ اعتبار ہوندا
کہ خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا

تیڈی نازکی توں سمجھم کہ ہا قول تیڈا کچا
تیری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا قول بودا

نہ تروڑ اینویں سگدا، جو ایہہ پکی تار ہوندا
کبھی تو نہ توڑ سکتا، اگر استوار ہوتا

کوئی میڈے دل توں پچھے، تیڈے تیر ادھ پڈے کوں
کوئی میرے دل سے پوچھے تیرے تیر نیم کش کو

اینویں چبھدا ایہہ نہ رہندا، جو جگر دے پار ہوندا
یہ خلش کہاں سے ہوتی جو جگر کے پار ہوتا

ایہہ انوکھی دوستی ہے، جو بنڑے نیں دوست ناصح
یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست ناصح

کوئی چا کریندا چارہ، کوئی غمگسار ہوندا
کوئی چارہ ساز ہوتا، کوئی غمگسار ہوتا

رگ سنگ توں جو وگدا، تاں لہو ایہہ ول نہ کھڑدا
رگ سنگ سے ٹپکتا وہ لہو کہ پھر نہ تھمتا

جیکوں غم سمجھدے پئے ہو، ایہہ جو کوئی چنگار ہوندا
جسے غم سمجھ رہے ہو یہ اگر شرار ہوتا

ایہو دکھ تاں جان گھنسی، ایہو دل تاں بچ نینہ سگدے
غم اگرچہ جاں گسل ہے پہ کہاں بچیں کہ دل ہے

ہوندا عشق دا جو دکھ نہ، دکھا روزگار ہوندا
غم عشق گر نہ ہوتا، غم روزگار ہوتا

آکھاں میں تاں کیکوں آکھاں، دکھی رات ہک بلا ہے
کہوں کس سے کہ کیا ہے شب غم بری بلا ہے

نہ مرنڑ میکوں برا ہا، جو ایہہ ہکی وار ہوندا
مجھے کیا برا تھا مرنا اگر ایک بار ہوتا

تھیم مر تے وی جو رسوا، تھیم کیوں نہ غرق دریا
ہوئے مر کے ہم جو رسوا، ہوئے کیوں نہ غرق دریا

نہ کداہیں چودا مردہ، نہ کوئی مزار ہوندا
نہ کبھی جنازہ اٹھتا، نہ کہیں مزار ہوتا

اوکوں دیکھ کون سگدا، جو ہے ہک دا ہک، تے وکھرا
اسے کون دیکھ سکتا، کہ یگانہ ہے وہ یکتا

جو بیئے دی بو وی ہوندی، تاں ملنڑ وچار ہوندا
جو دوئی کی بو بھی ہوتی تو کہیں دوچار ہوتا

ایجھے مسلے، ایہہ تصوف، تیڈا ایہہ بیان غالب
یہ مسائلِ تصوّف، یہ ترا بیان غالب

تیکوں تاں ولی سمجھدے، جو نہ بادہ خوار ہوندا
تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ بادہ خوار ہوتا


Sariaki سرائیکی (http://sariaki.blogspot.com/2006/05/blog-post_11.html)

--------------------------------------------

بےباک
08-22-2011, 10:25 PM
یہ سرائیکی میں ان کی نظم پہلے بھی پڑھ چکا ہوں ،
اس کے لکھنے والے کے بارے کچھ بتائیے ،
ویسے مزے دار اور شاندار ترجمہ کیا ہے ،


ایہہ نہ ہئی اساڈی قسمت جو وصال یار ہوندا
یہ نہ تھی ہماری قسمت جو وصال یار ہوتا

جو بیا وی جیندے رہندے ایہو انتظار ہوندا
اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا

بہت ہی خوب ،ایک دم زبردست ،

مرزا غالب کا اصل کلام بھی لکھ دیتا ہوں . آپ نے ایک مصرعہ غالب کا اور ایک سرائیکی کا لکھا ہے ،



یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا
اگر اور جیتے رہتے یہی انتظار ہوتا

تیرے وعدہ پر جیے ہم تو یہ جان جھوٹ جانا
کہ خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا

تیری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا عہد بودا
کبھی تو نہ توڑ سکتا اگر استوار ہوتا

کوئی میرے دل سے پوچھے تیرے تیرِ نیم کش کو
یہ خلش کہاں سے ہوتی جو جگر کے پار ہوتا

یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست ناصح
کوئی چارہ ساز ہوتا کوئی غم گسار ہوتا

رگِ سنگ سے ٹپکتا وہ لہو کہ پھر نہ تھمتا
جسے غم سمجھ رہے ہو یہ اگر شرار ہوتا

غم اگرچہ جاں گسل ہے پہ کہاں بچیں کہ دل ہے
غمِ عشق گر نہ ہوتا غمِ روزگار ہوتا

کہوں کس سے میں کہ کیا ہے! شبِ غم بری بلا ہے
مجھے کیا برا تھا مرنا اگر ایک بار ہوتا؟

ہوئے مر کے ہم جو رسوا ہوئے کیوں نہ غرق دریا
نہ کبھی جنازہ اٹھتا نہ کہیں مزار ہوتا

اسے کون دیکھ سکتا کہ یگانہ ہے وہ یکتا
جو دوئی کی بو بھی ہوتی تو کہیں دو چار ہوتا

یہ مسائلِ تصوف یہ تیرا بیان غالبؔ!
تجھے ہم ولی سمجھتے جو نہ بادہ خوار ہوتا
۔

پاکستانی
08-28-2011, 12:12 PM
جی جناب اس کا سرائیکی ترجمہ پاکستانی کا ہے، کسی زمانے میں شوق چڑھا تھا اس کا، غالب کی تین چار غزلوں کا ترجمہ سرائیکی میں پیش کیا تھا، جسے وقتا فوقتا یہاں پوسٹ کر دوں گا.

بےباک
08-29-2011, 08:40 AM
بہت ہی زبردست کاوش تھی ،
میں کبھی کبھی اس کو شوق سے پڑھتا ہوں ،
جو جو آپ نے لکھا ہے سب پیش کریں ،
آپ نے شوق بڑھا دیا ہے ،

پاکستانی
08-29-2011, 02:12 PM
شکریہ ..... انشاءاللہ جلد حاضر کر دوں گا.