PDA

View Full Version : ایم ایم عالم کے ہندوستانی ایرفورس سے معرکے کا آنکھوں دیکھا حال



واصف حسین
09-07-2011, 12:40 PM
ایم ایم عالم کے ہندوستانی ایرفورس سے معرکے کا آنکھوں دیکھا حال
راوی: ونگ کمانڈر محمد عارف اقبال ریٹائرڈ

1965 کی جنگ شروع ہونے پر میں سرگودھا ایر بیس پر تھا جوکہ انڈین ایر فورس کا مرکزی نشانہ تھا۔میں ایف 104 جہاز میں بیٹھا اپنی باری کا انتظار کر رہا تھا کہ کب مجھے جہاز اڑانے کا حکم ملے گا۔دشمن کے ایک حملے سے نمٹنے کے لیے میرے ساتھی پرواز کر چکے تھے۔دیادہ دیر نہیں گزری تھی کہ ہمیں معلوم ہو گیا کہ دشمن کا حملہ ناکام ہو گیا ہے اور اس کے 6 میں سے 4 جہاز گرا دیے گئے ہیں۔
جب دوسرے حملے کا معلوم ہوا تو میرے چار ساتھی جوکہ ایف86 جہازوں میں تھے اور مجھے اپنے ایف104 میں پرواز کا حکم ملا۔ہم منٹوں میں ہوا کے دوش پر اپنے "دوستوں کی تواضع" کے لیے روانہ ہو گئے۔سکارڈن لیڈر ایم ایم عالم اپنے ونگ مین کے ساتھ جنوب مشرقی حصہ دیکھ رہے تھے جبکہ فلائٹ لیفتیننٹ بھٹی ان سے مذید مشرق میں تقریباً 15000 فٹ کی بلندی پر تھے۔شمال کی طرف جاتے ہوئے میں نے دشمن کے چار جہاز جنوب مشرق کی طرف دیکھے۔ میں نے ریڈیو پر اعلان کیا اور دشمن کی سمت مڑنا شروع کیا۔جب میں دشمن کے جہازوں کے پیچھے پہنچا تو اپنے چار جہاز دو ایم ایم عالم کے اور دو بھٹی کے دشمن کے تعاقب میں موجود تھے۔
دشمن طیارے ہنٹر ہمارے سیبر طیاروں سے زیادہ تیز ہیں۔ان کے نزدیک پہنچنے کے لیے سیبر کو بیرونی فیول ٹینک گرا کر ڈائیو کرنا پڑتا ہے۔بھٹی نے اپنے فیول ٹینک گرانے کی کوشش کی تو ایک فیول ٹینک نہ گرا۔اب بھٹی کے لیے یہ ناممکن تھا کہ وہ اپنے شکار کو پہنچ سکے اس لیے اس نے شکار کو ایم ایم عالم کے جہازوں کے رحم و کرم پر چھوڑنے کا درست فیصلہ کیا۔عالم اور اس کا ونگ مین دشمن سے قریب ہونے لگے۔اگرچہ ایف 104 کے لیے دشمن تک پہنچ جانا ممکن تھا مگر میں نے فیصلہ کیا کہ پہلے ایم ایم عالم کو موقع دیا جائے اور اگر کوئی جہاز اس سے بچ نکلنے میں کامیاب ہونے لگے تو اس کا میں پیچھا کروں۔میں دشمن پر نظر رکھ کر عالم کے پیچھے رہا۔ ایم ایم عالم کی مہارت اور جذبے کو جانتے ہوئےمیرے دل میں یہ خدشہ موجود تھا کہ عالم مجھے موقع نہیں دے گا۔ جلد ہی مجھے محسوس ہو گیا کہ میرے خدشات درست تھے۔
میری طرح ایم ایم عالم نے بھی چار ہی جہاز دیکھے تھے ۔اس نے دائیں طرف والے جہاز پر حملہ کرنے کا فیصلہ کیا۔اسی وقت اسے مذید دائیں ایک پانچواں جہاز نظر آ گیا۔عالم نے پہلے اس نئے دریافت ہونے والے جہاز سے نمٹنے کا فیصلہ کیا۔ چند سیکنڈ ہی گزرے ہوں گے کہ عالم کی 6 گنوں نےدشمن کے ہنٹر پر آگ اگلنا شروع کی اور میں نے ایک آگ کا گولہ زمین سے ٹکراتے دیکھا۔اور ایم ایم عالم کی گنیں دوسرے ہنٹر کی خبر لینے لگیں اور ایک اور آگ کا گولہ زمین سے جا ٹکرایا۔عالم جب تیسرے جہاز پر فائر کر رہا تھا تو اینڈین ہنٹرز نے ایک مایوسانہ دفاعی مینور کی مگر اس اثنا میں تیسرا گولہ زمین پر پہنچا مگراس جہاز کا پائلٹ ایجیکٹ کرنے میں کامیاب رہا۔آخری دو سے نمٹنا بھی عالم کے لیے لمحوں کا کھیل ثابت ہوا اور وہ بھی آگ کے گولوں کی شکل میں زمیں بوس ہوئے۔ مجھے کسی قدر مایوسی ہوئی کہ عالم نے میرے لیے کچھ نہیں چھوڑا تھا اور انڈین جہازوں پر بھی مایوسی ہوئی کہ ان میں سے کوئی عالم سے بھاگ جاتا تو میری گنوں کو بھی آگ اگلنے کا موقع ملتا۔
میں نے اپنا فاصلہ دیکھا تو میں سرگوھا سے 37 میل دور تھا۔یہ تاریخ میں پہلا موقع تھا کہ کسی بھی پائلٹ اپنے سے بہتر لیول کے پانچ طیارے ایک منٹ سے بھی کم وقت میں مار گرائے ہوں۔یہ نہ صرف پاکستان ایر فورس کی تاریخ کا ایک نیا باب رقم ہوا تھا بلکہ دنیا کی ہوائی تاریخ کا نیا باب تھا۔

سورس: http://www.pakdef.info/pids/paf/maiqbal1.html

بےباک
09-07-2011, 09:03 PM
بہت خوب جناب واصف صاحب ،

http://img2.allvoices.com/thumbs/image/609/480/34434874-squadron-leader.jpgایم ایم عالم صاحب (محمد محمود عالم ) واقعی ایک بہادر ایر کمانڈور تھا ،وہ چھ جولائی 1935 کو کلکتہ میں پیدا ہوئے بعد میں مشرقی پاکستان چلے گئے تھے ، 1982 میں ایر فورس سے ریٹائرڈ ہوئے ، اب کراچی میں سکونت پذیر ہیں ، ایم ایم عالم روڈ گلبرگ ۔لاہور میں ان کے نام سے منسوب کی گئی ہے ،

1965 کی جنگ میں انہوں نے نوطیارے تباہ کیے تھے جن میں سے پانچ ایک ہی دن تباہ کیے تھے۔ اس کی ویڈیو دیکھیے ،http://www.youtube.com/watch?v=J9Cklwkr-u0

اس لنک کو خود دیکھیے ، محمد محمود عالم کو خراج تحسین پیش کیا گیا ہے ،عربی زبان میں لکھا ھے کہ پانچ طیاروں کو ایک منٹ کے اندر تباہ کرنے والا پاکستانی ایر فورس کا کمانڈور ایم ایم عالم تھا جس کا ورلڈر ریکارڈ ہے ، کہ اس نے اپنے کم رفتار والے طیارے سے ھندوستان کے 5 ہائی رفتار طیاروں کو تباہ کر دیا ، جہازوں کی فوٹو بھی دیکھیے ، اس سڑک کو بھی دیکھیے جو اس کے نام سے منصوب کی گئی ہے ، اس نے دشمن کے جو جہاز گرائے تھے ان کے پائلٹوں کے نام بھی دیکھیے ، اور ایک تباہ شدہ طیارہ بھی دیکھیے ،
محمد محمود عالم کا سیبر طیارہ کراچی میں نمائش گاہ پر کھڑا ہے ،۔
http://defense-arab.com/vb/showthread.php?t=27025

انجینئرفانی
10-07-2012, 06:14 AM
پاک فضائیہ کافخر۔۔ایم ایم عالم