PDA

View Full Version : محبت سے بھی نفرت ہو گئ ہے



عبادت
09-22-2011, 03:01 AM
محبت سے بھی نفرت ہو گئی ہے



محبت سے بھی نفرت ہو گئی ہے
یہ کیسی وحشت ہو گئی ہے

فنا کر ڈالوں خود کو اور سب کو
میری یہ کیسی فطرت ہو گئی ہے

جہاں مطلب وہاں محبت ملے گی
محبت نہیں کہ تجارت ہو گئی ہے

مجھے وحشت تھی جس دیوانگی سے
وہی پھر میری قسمت ہو گئی ہے

بےباک
09-22-2011, 10:08 AM
محبت سے بھی نفرت ہو گئی ہے
یہ کیسی وحشت ہو گئی ہے

فنا کر ڈالوں خود کو اور سب کو
میری یہ کیسی فطرت ہو گئی ہے

جہاں مطلب وہاں محبت ملے گی
محبت نہیں کہ تجارت ہو گئی ہے

مجھے وحشت تھی جس دیوانگی سے
وہی پھر میری قسمت ہو گئی ہے

بہت خؤب ،بہت خؤب

این اے ناصر
03-31-2012, 01:12 PM
واہ بہت خوب۔ شکریہ

نگار
01-31-2013, 12:01 AM
فنا کر ڈالوں خود کو اور سب کو
میری یہ کیسی فطرت ہو گئی ہے

زبردست ، کیا بات ہے ، مجھے یہ شعر بیحد پسند آیا ۔
شکریہ آپ کا

ملہار
02-03-2014, 02:55 PM
محبت سے بھی نفرت ہو گئی ہے
یہ کیسی وحشت ہو گئی ہے

فنا کر ڈالوں خود کو اور سب کو
میری یہ کیسی فطرت ہو گئی ہے

جہاں مطلب وہاں محبت ملے گی
محبت نہیں کہ تجارت ہو گئی ہے

بہت خوب۔۔!!