PDA

View Full Version : یہ عمر تمہاری ایسی ہے



ایم-ایم
11-20-2011, 10:28 AM
یہ عمر تمہاری ایسی ہے
جب آسمان سے تارے توڑ کے لے آنا بھی
سچ مچ ممکن لگتا یے
شہر کا ہر آباد علاقہ
اپنا آنگن لگتا ہے
یوں لگتا ہے جیسے ہر دن،ہر اک منظر
تم سے اجازت
لیکر اپنی شکل معین کرتا ہے
جو چاہو وہ ہو جاتا ہے
جو سوچو وہ ہو سکتا ہے
لیکن ! اے اس کچی عمر کی بارش میں مستانہ پھرتی
چنچل لڑکی!
یہ بادل جو آج تمہاری چھت پر رک کر تم سے
باتیں کرتا ہے
اک سایہ ہے
تم سے پہلے اور تمہارے بعد کے ہر اک موسم میں یہ
ہر اک چھت پر ایسے ہی اور اسی طرح سے
دھوکے بانٹتا پھرتا ہے
صبح ازل سے شام ابد تک
ایک ہی کھیل اور ایک ہی منظر
دیکھنے والی آنکھوں کو ہر بار دیکھایا جاتا ہے
اے سپنوں کی سیج پر سونے جاگنے والی لڑکی!
تیرے خواب جیئں
لیکن اتنا دھیان میں رکھنا جیون کی اس
خواب سرا کے سارے منظر
وقت کے قیدی ہوتے ہیں جو اپنی رو میں
ان کو ساتھ لیے جاتا ہے اور مہمیز کیے جاتا ہے
دیکھنے والی آنکھیں پیچھے رہ جاتی ہیں

سیما
11-20-2011, 02:36 PM
اس شعری میں کتنی گہرائ ہے :(
اس کے لیے تو بہت سارے دماغ چاہیے تاکہہ سمجھ میں بھی آجائے اس کی گہرائ ۔۔

شکریہ ایم ایم بھائ یا بہن اپ جو بھی ہیں آپ نے تعارف تو کرایا نہں آپ بھائ ہو ہا بہن:huh:

این اے ناصر
04-16-2012, 10:01 AM
واہ بہت خوب جناب ۔ شئیرنگ کاشکریہ۔