PDA

View Full Version : کینسر کاعلاج لیمو ؟!



بےباک
11-26-2011, 04:31 AM
کینسر کاعلاج لیمو ؟!
http://img4.sunset.com/i/2007/01/lemon-meyers-m-m.jpg?300:300http://silviahartmann.com/background-tile/images/01-lemon-tree-background.jpg

ایک غیر معمولی خبر اس ہفتے انٹر نیٹ پر دیکھی ۔ اپنے متن کے اعتبار سے تو خبر غیر معمولی ہے ہی خبر کا منبع بھی غیر معمولی ہے یعنی وہ امریکہ کا ایک دوا ساز Pharmaceuticalتحقیقی ادارہ ہے کیونکہ امریکہ اور یورپ کے دوا ساز ادارے تو آج بیشتر ’ دوا مافیا‘ کے طور پر کام کر رہے ہیں ۔ بالٹی مور امریکہ کے انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ اینڈ سائنسز نے جو اپنی نئی تحقیق جاری کی ہے وہ ’ نیچر‘ جیسے کسی بین الاقوامی سائنس جریدے میں اور پھر اس کے حوالے سے دنیا بھر کے میڈیا میں شائع ( اور نشر ) ہونی چاہئے تھی خبر کا تعلق کینسر جیسے مہلک مرض سے ہے جو آج بھی پہلی اسٹیج سے نکلنے کے بعد ناقابل علاج ہی ہے ۔ خبر یہ ہے کہ انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ اینڈ سائنسز بالٹی مور کے مطابق ’’لیمو‘‘ ( جسے لوگ لیموں اور اکثر ’ نیبو‘ بولتے ہیں) کینسر کے خلیوں کو ختم کر نے میں معجزاتی کردارا دا کر تا ہے یعنی لیمو نہ صرف کینسر سے بچاتا ہے بلکہ کینسر کی دوا بھی ہے ۔ رپورٹ کے مطابق ’’ لیموکیمو تھیراپی (Chemotherapy) سے دس ہزار گنا زیادہ طاقت ور اور متاثر کن ہے ۔ ریسرچ کے مطابق لیمو سے ہر طرح کے کینسر کا شافی علاج ممکن ہے ۔ لیمو، مثانے ، بیضہ دانی، سینے ( بریسٹ) کینسر او رہر طرح کے سرطانی ٹیومر کا خاتمہ کر نے کی صلاحیت رکھتا ہے ۔
جراثیم کے ذریعے پھیلے ہو ئے کینسر کے علاج میں بھی لیمو مؤثر ترین ذریعہ ہے ۔ یہ بلند فشار خون ( ہائی بلڈ پریشر) کو کنٹرول کر تا ہے اور ڈپریشن ( اضمحلال ، مایوسی) کے شکار مریضوں کو اس سے نجات دلاتا ہے اور نروس بریک ڈاؤن کے مریضوں کے لئے بھی نعمت ہے ۔ رپورٹ کے مطابق 1970 سے اب تک لیباریٹری کے20 سے زائد ٹیسٹوں کے ذریعہ جو حیران کن نتائج سامنے آئے ہیں وہ یہ ہیں کہ لیمو کینسر کے خلیوں( Cells) کو تباہ کردیتا ہے ۔ اور کم از کم12 قسم کے کینسر سے لیمو کے ذریعے نجات حاصل کی جاسکتی ہے ۔ ان میں کولون، چھاتی،پروسٹیٹ، پھیپھڑے اور لبلبے(Pancreas) کے کینسر بھی شامل ہیں ۔ کیموتھیراپی میں جو دوا استعمال ہو تی ہے لیمو اس دوا سے دس ہزار گنا زیادہ مؤثر ثابت ہو ا ہے ۔
حیرت انگیز بات یہ ہے لیمو کے علاج سے ‘ صرف کینسر سے متاثرہ خلیے (Cells) تبا ہ ہو تے ہیں ، تندرست خلیوں کو کو ئی نقصان نہیں پہنچتا۔ لیمو آپ کئی طریقے سے استعمال کر سکتے ہیں اس کا عرق( لیمن جوس) تو سب سے زیادہ استعمال میں آتا ہی ہے جس میں Citric Acid ہو تا ہے ۔ رپورٹ کے مطابق آپ لیمن جوس کے مسلسل استعمال سے کینسر کے پھیلاؤ ہی کو نہیں اس بیماری ہی کو جڑ سے ختم کر سکتے ہیں، اس کا ذائقہ تو خوشگوار او رفرحت بخش ہو تا ہی ہے اس کے اثرات کیمو تھیراپی کے خوفناک اثرات کے برعکس ہو تے ہیں۔ کیمو تھیراپی سے تو بھنوؤں سمیت بدن کے تمام بال گر جاتے ہیں او رمریض ٹُنڈ مُنڈ ہو جاتا ہے ۔ لیمو سے‘ظاہر ہے کہ ایسا کچھ نہیں ہو تا ۔
یہ بات حیر ت انگیز ہے کہ اربوں کھربوں کا کاروبار کر نے والی دوا ساز کمپنیوں نے بالٹی مور کے انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ اینڈ سائنسز( جس کا پتہ 819ا ین ،ایل،ایل،سی چارلس اسٹریٹ، بالٹی مور، ایم ڈی 1202یو ایس اے ‘ ہے ) کی یہ رپورٹ جاری ہو جانے دی ، کیونکہ انہیں تو یہ کر نا چاہئے تھا کہ وہ لیمو کے عرق سے کو ئی ’ دوا ‘ بنا کر بازار میں لاتے لیکن ایسا لگتا ہے کہ سائٹرک ایسڈ کے استعمال سے وہ فائدہ نہیں ہو تا جو براہ راست لیمو کے عرق( لیمن جوس) سے پہنچتا ہے ۔ حمید اختر نے ایکسپریس ڈاٹ کام پر اپنے مضمون میں لکھا ہے:۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ’’بالٹی مور کے تحقیقاتی دوا ساز ادارے کی یہ رپورٹ بادی النظر میں اتنی حیرت انگیز ہے کہ اس پر آسانی سے اعتبار نہیں ہو تا لیکن بظاہر اس پر اعتبار نہ کر نے کی کو ئی معقول وجہ بھی نظر نہیں آتی۔‘‘
اس کے باوجود کہ اس رپورٹ کو جب تک عالمی میڈیا کی مکمل کوریج حاصل نہیں ہوتی ا س کے مطلوبہ اثرات بھی مرتب نہیں ہوسکتے کیونکہ جدید مغربی تہذیب نے پوری دنیا کو ذہنی طور پر غلام بنا رکھا ہے اور ہم اس ’ کارپوریٹ کلچر‘ کے بندۂ بے دام ہیں جو اس تہذیب مغرب کا ساختہ و پر داختہ ہے ۔ فرد کی آزادی کے ڈھونگ کے پردے میں ’ فی الواقع‘ بقول شاہنواز فاروقی آج فرد کے پاس اشیا ء کو خریدنے او رصرف کرنے کی قوت اور آزادی یعنی ’ صارفیت‘ کے سوا اور کچھ نہیں ہے ‘‘ بہر حال جو لوگ اس کالم کو پڑھیں گے (بھلے ہی ان کی تعداد بہت زیادہ نہ ہو ) کم از کم وہ تو لیمو کی متذکرہ صفات سے استفادہ کر ہی سکتے ہیں۔٭

این اے ناصر
04-03-2012, 11:18 AM
مفیدمعلومات کے لیے بہت بہت شکریہ۔