PDA

View Full Version : ہجر آلودہ شبوں کو جان ِ جاناں چاہیئے



فاروق درویش
01-15-2012, 04:45 PM
ہجر آلودہ شبوں کو جان ِ جاناں چاہیئے
وصل کے تشنہ جنوں کو ابر ِ باراں چاہیئے

رات کی مدہوشیوں کا ہرجنوں آتش فشاں
قربتوں کی آتشوں کو موج ِ طوفان چاہیئے

ساقئ محفل نے بھیجے ہیں پیالے زہر کے
عشق کے تشنہ لبوں کو جام ِ مژگاں چاہیئے

منظر ِ کشت ِ لہو ، شام ِ غریباں ہے یہاں
دشت ِ غم کی کربلوں کو مرد ِ یزداں چاہیئے

کالے کالے پانیوں کی بارشیں اتریں یہاں
ننگ ِ ملت رہبروں کو خون ِ انساں چاہیئے

رونق ِ دربار و مسند فتنہ ء اغیار ہے
کاذب ِ مطلق فتن کو ضرب ِ ایماں چاہیئے

خامشی میں جلتے رہنا ہے رواج ِ عاشقاں
اپنے زندانی لبوں کو جام ِ عرفاں چاہئے

موم کی بستی کے باسی پوجتے ہیں آفتاب
کفر کے خوگر دلوں کو ننگ ِ ایواں چاہیئے

دیکھئے کیا گل کھلاتی ہیں ہوس کی تتلیاں
مسند ِ شاہ ِ بتاں کو رقص ِ عریاں چاہیئے

چھپ رہی ہے مفلسی زندہ حجاب ِ گور میں
خود کشی کے سانحوں کو چشم ِ گریاں چاہیئے

عشق صحرا کا سفر ہے منزل ِ درویش ہے
آبلہ پا عاشقوں کو سنگ ِ دوراں چاہیئے


فاروق درویش

تانیہ
01-15-2012, 07:41 PM
واہ۔۔۔۔
بہت خوب زبردست
ایک ایک شعر دل کو چھوتا ہوا ہے لگ رہا ہے
منظر ِ کشت ِ لہو ، شام ِ غریباں ہے یہاں
دشت ِ غم کی کربلوں کو مرد ِ یزداں چاہیئے
بہت خوب

محمدمعروف
01-15-2012, 11:35 PM
بہت خوب ماشاء اللہ