PDA

View Full Version : بلبل نہ گل نہ حسن ہیں باغ و بہار کے



فاروق درویش
03-03-2012, 03:37 AM
فیض احمد فیض کی غزل '' دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے ۔۔۔۔ وہ جا رہا ہے کوئی شبِ غم گزار کے'' کی زمین میں میری طرحی غزل، سخن اورعلم العروض میں دلچسبی رکھنے والے احباب اور نئے لکھنے والوں کی راہنمائی کیلئے اس غزل کی بحر، ہندسی اوزان اور تقطیع ساتھ دے رہا ہوں۔ امید ہے احباب کو یہ میری غزل کے ساتھ عروضی نوٹس کا یہ سلسلہ پسند آئے گا ۔

بلبل نہ گل نہ حسن ہیں باغ و بہار کے
صحرائے غم میں ورد ہیں پروردگار کے

مسند نشیں نے بھیجے ہیں پھرجام زہر کے
لکھیں گے سوئے دار ستم تاجدار کے

آفت رسیدہ بستیوں کے لٹ گئے مکیں
دریا میں خواب ڈوب گئے ہونہار کے

رقصاں ہیں آج خلق کے چہرے پہ وحشتیں
دیکھے ہیں ہم نے رنگِ فتن اقتدار کے

اس شہر بے چراغ کی صبحیں بھی ہیں سیاہ
پڑھتی ہے شام نوحے شبِ اشک بار کے

آب ِ حیات مانگ کے لائے خضر سے کون
پیاسے ہیں لب فرات پہ ہر شیر خوار کے

تاریخ لکھ رہی ہے چمن کی جو داستاں
دیں گے گواہی سوختہ گل مرغزار کے

دشت ِ جہاں سے امرت ِ خوباں تلاش کی
درویش ہم فقیر ہوئے کوئے یار کے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بحر - بحر مضارع مثمن اخرب مکفوف محذوف

ارکان ۔۔۔۔۔ مَفعُول ۔۔۔۔۔ فاعِلات ۔۔۔۔۔۔ مَفاعِیل ۔۔۔۔۔ فاعِلُن
۔نوٹ ۔۔۔۔ آخری رکن میں* فاعلن ۔۔۔ ۲۱۲ ۔۔۔۔ کی جگہ فاعلان ۔۔۔ ۱۲۱۲۔۔۔۔ استعمال کرنا بھی عین درست ہے جیسا کہ پانچویں شعر میں ’’ سیاہ’’ کا ، ہ اور اور چھٹے شعر میں کون کا نون اضافی اسی اصول کے تحت باندھا گیا ہے ۔۔۔۔۔۔

ہندسی اوزان ۔۔۔۔۔۔ 122 ۔۔۔۔۔۔۔ 1212 ۔۔۔۔۔۔ 1221۔۔۔۔۔۔۔۔ 212 یا 1212

نئے لکنے والوں کی راہنمایی کیلئے تقطیع کے اشارات

بل بل نہ ۔۔۔۔۔ ۱۲۲
گل نہ حس ن۔۔۔۔۔۔ ۱۲۱۲
ہیں باغو ب ۔۔۔۔۔۔ ۱۲۲۱
ہار کے۔۔۔۔۔۔ ۲۱۲

صح را ئے۔۔۔۔۔۔۱۲۲
غم میں ور د۔۔۔۔ ۱۲۱۲
ہیں پر ور د۔۔۔۔۔۱۲۲۱
گا ر کے ۔۔۔۔۔ ۲۱۲

فاروق درویش

سیما
03-04-2012, 08:48 PM
السلام علیکم
بہت بہت شکریہ اپکا بہت اچھا لکھا آپ نے

فاروق درویش
03-04-2012, 10:02 PM
السلام علیکم
بہت بہت شکریہ اپکا بہت اچھا لکھا آپ نے


جزاک اللہ سیما بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سدا خوش آباد سدا سلامت رھیں ۔۔۔۔۔۔