PDA

View Full Version : غزل جب محفل ِ یاراں کے گل پرخار ہو جائیں



سیدہ سارا غزل
03-09-2012, 11:59 AM
سخن کا پیرہن پہنا دیا کس نے خموشی کو
ترستی ہے زباں گونگے دلوں کی گرمجوشی کو

ہوئے آرائش ِ جاں کی بدولت کو بہ کو رسوا
کہ عریانی سمجھتے ہیں ہم اپنی جامہ پوشی کو

جب اپنا دم گھٹا ہر دم فصیل ِ شہر کے اندر
نکل آئے ہیں صحراؤں میں ہم خانہ بدوشی کو

شریک ِ جرم بھی اپنا نہیں اپنے سوا کوئی
تو پھر کیوں کر برا کہئیے خود اپنی چشم پوشی کو

مہک اٹھے گی تنہائی گئے لمحوں کی خوشبو سے
مری خلوت میں جب آئیں گے کانٹے گل فروشی کو

برستے آنسوؤں سے بھیگتی پلکوں سے آ بیٹھے
ستاروں کی گھنی چھاؤں میں شغل ِ بادہ نوشی کو

غزل جب محفل ِ یاراں کے گل پرخار ہو جائیں
دعائیں دوستوں کو دیں کہ اپنی سخت کوشی کو

سیدہ سارا غزل ہاشمی

admin
03-09-2012, 04:47 PM
واہ واہ بہت خوبصورت غزل۔۔۔۔۔۔۔۔۔:christmas:

سیما
03-10-2012, 03:22 AM
بہت اچھا لکھا آپ نے شکریہ سسٹر