PDA

View Full Version : بے دام ہم بکے سر ِ بازار عشق میں



فاروق درویش
03-15-2012, 02:53 PM
بے دام ہم بکے سر ِ بازار عشق میں
رسوا ہوئے جنوں کے خریدار عشق میں

زنجیریں بن گئیں میری آزادیاں حضور
زندان ِ شب ہے کوچہ ء دلدارعشق میں

درپیش پھر سے عشق کو صحرا کا ہے سفر
نیزوں پہ سر سجے سوئے دربارعشق میں

خون ِ جگر سے لکھیں گے مقتل کی داستاں
روشن ضمیر و صاحب ِ اسرارعشق میں

خورشید و ماہتاب سے در کی تلاش میں
دشت ِ سفر میں یار ہوئے خوارعشق میں

دیتے ہیں بت کدوں میں اذاں لا الہ کی ہم
رقصاں ہیں ہُو کی تال پہ سرشارعشق میں

جلتے ہوئے فراق سے روشن ہوئے چراغ
آتش فشاں سے لوگ ہیں بیدارعشق میں

پوشاک ِ فقر اوڑھے دو عالم شناس لوگ
ٹھہرے ہیں سوئے دار سزاوارعشق میں

درویش ہم سخن وہ قلندر ہیں وقت کے
لے کر چلے جو پرچم ِ احرارعشق میں

فاروق درویش

این اے ناصر
03-15-2012, 04:27 PM
بے دام ہم بکے سر ِ بازار عشق میں
رسوا ہوئے جنوں کے خریدار عشق میں

واہ ۔ بہت خوب۔

سیما
03-22-2012, 02:12 AM
بہت خوب
شکریہ آپکا