PDA

View Full Version : ہم عشق زدہ سوختہ جاں ہجر گزیدہ



فاروق درویش
05-16-2012, 04:25 AM
ہم عشق زدہ، سوختہ جاں، ہجر گزیدہ
وہ کعبہ ء جاں حسن کہ دیدہ نہ شنیدہ

زلفوں کے حجاب اٹھے کہ میخانے کھلے ہیں
آتش ہے شب ِ وصل کہ مشروب ِ کشیدہ

نورنگی ء دوراں ہے کہ نیرنگ ِ زمانہ
ہر شکل ہے صد چہرہ مگر عکس ندیدہ

اک شہر ِ مقفل ہے جہان ِ شب ِ جاناں
دل دشت میں بھٹکا ہوا آہوئے رمیدہ

ہم کوفہ ء احباب کے صحرا کے مسافر
کہتے ہیں ہمیں اہل ِجنوں اشک چکیدہ

نکلے ہیں سوئے دار غزالان ِ سحر خیز
دل راکھ ،جگر چاک، گریبان دریدہ

درویش قتیل عشق کے مر کر نہیں مرتے
بنتی ہے شجر خاک میں مل شاخ ِ بریدہ

فاروق درویش

نگار
05-16-2012, 07:55 PM
درویش قتیل عشق کے مر کر نہیں مرتے
بنتی ہے شجر خاک میں مل شاخ ِ بریدہ

واہ بہت خوب اور لاجواب
بہت شکریہ

تانیہ
05-18-2012, 11:20 AM
درویش قتیل عشق کے مر کر نہیں مرتے
بنتی ہے شجر خاک میں مل شاخ ِ بریدہ

واہ واہ :roseanimr:
زبردست
th_smilie_schild