PDA

View Full Version : رحمان بابا کا ایک خوبصورت شعر اردو ترجمہ کے ساتھ



abrarhussain_73
05-29-2012, 08:43 PM
دَ کعبہ پہ بزرگے کہ میں شک نشتہ
ولے خر بہ حجی نشی پہ طواف

ترجمہ:
کعبہ کی بزرگی میں مجھے کوئی شک نہیں لیکن گدھا طواف سے حاجی نہیں بن جاتا۔


تشریح کیجئے :

بےباک
05-29-2012, 09:41 PM
رحمٰن بابا کا اصل نام عبدالرحمٰن تھا اور وہ 1653ء کے لگ بھگ پشاور کے قریب مہمند قبیلے میں پیدا ہوئے اور ان کا انتقال 1715ء کے ارد گرد ہوا۔

رحمٰن بابا نہ صرف پشتو زبان کے عظیم شاعرہیں بلکہ ان کا مقام پاکستان کے عظیم صوفی شعرا شاہ عبدالطیف بھٹائی، وغیرہ سے کسی لحاظ سے کم نہیں۔

آدمیت سہ بہ دولت نہ دے رحمانہ
بت کہ جوڑ شی د سرو زرو نہ انسان شہ

ترجمہ:
انسانیت دولت سے پیدا نہیں ہوتی اے رحمان
بت سونے کا ہو توبھی انسان نہیں بن جاتا
،،،،،،،،،
کتنا خوبصورت کلام ہے رحمن بابا کا
دیکھیں ذرا


کرد گلونہ کڑہ چی سیمہ دی گلزار شی
اغزی مہ کرہ پہ خپو کے بہ دے خار شی

ترجمہ:
پھولوں کی فصل اگاؤ کہ راستے گلزار ہو جائیں
کانٹے مت بوؤ کہ پیروں میں چبھیں


دَ کعبہ پہ بزرگے کہ میں شک نشتہ
ولے خر بہ حجی نشی پہ طواف

ترجمہ:
کعبہ کی بزرگی میں مجھے کوئی شک نہیں لیکن گدھا طواف سے حاجی نہیں بن جاتا۔
آپ کا بہت بہت شکریہ ، آپ نے عظیم شاعر کا خوبصورت شعر لکھا ، جزاک اللہ

abrarhussain_73
05-30-2012, 12:52 AM
ماشاءاللہ آپ نے رحمان بابا کا تعارف اور شاعری بڑی ہی خوبصورت طور پر پیش کی۔ شکریہ۔

عالی شان
08-05-2012, 07:34 PM
آپ سب نے رحمان بابا پہ کافی اچھی معلومات فراہم کی ہیں
انشاءاللہ میں پشتو سلسلہ آگے بڑھانے کی کوشش کرونگا

نذر حافی
08-06-2012, 03:25 PM
ماشا اللہ ۔۔۔۔۔۔۔کیا کہنے۔۔۔۔۔
پھولوں کی فصل اگاؤ کہ راستے گلزار ہو جائیں
کانٹے مت بوؤ کہ پیروں میں چبھیں

nazar afghan
03-02-2013, 10:26 PM
آپ سب نے رحمان بابا پہ کافی اچھی معلومات فراہم کی ہیں
انشاءاللہ میں پشتو سلسلہ آگے بڑھانے کی کوشش کرونگا

الله آپ کو زياده سی زياده حوصله عطا کری
جوانی تجهـ کو نصيب هو
نظر افغان

ٹیکسٹ ماسٹر
03-02-2013, 11:04 PM
رحمان بابا کی صوفیانہ شاعری میں ہم جیسے نادانوں کے لئے بہت نصیحت ہے انکے اشعار آج بھی صدیاں گزرنے کے باوجودایسے معلوم ہوتے ہیں جیسےاج ھی کہے گئے ہوں آج کے حالات کے مطابق لگتے ہیں اچھے شاعروں کی پہچان یہی ھے کہ انکا کلام پرانا نہیں ہوتا ہے ہر مرتبہ پڑھنے پر نیا محسوس ھوتا ہے ایسے بزرگوں کے اشعار پڑھتے ہوئے اپنی شخصیت کو سامنے رکھ کر پڑھا کیجئیے اس سے آپکو بہت سے فوائد حاصل ہونگے اور آپ اپنی زندگی میں بہت سے امور میں رہنمائی حاصل کر سکیں گے انشآء اللہ تعالیٰ
(ٹیکسٹ ماسٹر)

نگار
03-07-2013, 02:59 PM
رحمان بابا غزل •-

خوی که په دا شان وي دل ازار ستا
څه ښادي به کاندي طلبګار ســــتا

حيف چې اورېدی شي ليدی نشي
حسن لطافت دې پريوار ستا

بيا دوباره نه ګوري وبل ته
هر چا چې ليدلی دې رخسار ستا

خدای زده چې ته يار د کوم يوه يې
هر طرف ياران دي صد هزار ستا

ځای د پښو ايښودو مونده نشي
هومره عاشقان دي په دربار ستا

بل هسې نه وي که يې خدای کا
ما غوندې خاکسار او هوادار ستا

عشق له حسنه، حسن دی له عشقه
ته نګار زما يې، زه نګار ستا

ته زما مطلوب يې زه طالب يم
ته زما طبيب يې زه بيمار ستا

ته که تازه ګل د نوبهار يې
زه يم عندليب په لاله زار ستا

جور که جفا ده که ستم دی
واړه مې منلي دي يکبار ستا

جور په چا څوک په بها پيري
زه يم د جورونو خريدار ستا

يو تار که ضايع شي ستا د زلفو
ځان به صدقه کړم تر هر تار ستا

سل ازمايښتونه دې راوکړه
حيف دی چې لا نشي اعتبار ستا

تېر يم زه “رحمان ” له هره کاره
اوس مې ملا تړلې ده په کار ستا