PDA

View Full Version : مختلف اشعار



تانیہ
12-07-2010, 04:08 PM
اس قدر قرض ہے محبت کا
سوچتا ہوں تو ہول اٹھتا ہے
عشق کے واجبات کیسے دوں
تم نے کیا میرے پاس چھوڑا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔
میں کہیں گم ہوں
تم کہیں گم ہو
پھر بھی لگتا ہے
ہر جگہ میں ہوں
ہر جگہ تم ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ملتے رہتے ہیں بہت لوگ تمھارے جیسے
یہ سمجھ میں نہیں آتا کہ تم ہی میں کیا ہے
میں نے یہ سوچ کے روکا نہیں جانے سے اسے
بعد میں بھی یہی ہو گا ، تو ابھی سے کیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بے چین کیئے رکھتی ہے ہر آن یہ دل کو
کم بخت محبت کے بھی آزار بہت ہیں
مٹی کے کھلونے ہیں تیرے ہا تھ میں ہم لوگ
اور گر کے بکھر جانے کے آثار بہت ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہونٹ میرے ایسے پتھرائے عرضِ حال پہ دکھ ہوتا ہے
اتنا ضبط کمال ہے کہ اب تو کمال پہ دکھ ہوتا ہے
میں نے عشق اور دنیا داری دونوں کے دکھ جھیلے ہیں
کوئی مجھے مجنوں کہدے تو مجھے مثال پہ دکھ ہوتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسکو کچھ تو بنا دیا ہے
ہم نے تھوڑا سا دھیان دیکر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کہا نہیں تھا کہ ایسی چپ سے گریز کرنا
کہ جس سے اندر کا شور بڑھ جائے
اور سماعت کو چھید ڈالے
۔۔۔۔۔۔
ہر ایک اپنی اذیت کے شور میں گم ہے
کسے خبر کوئی چیخا ، کوئی کراہا کیوں
جو ہماری ستائش کی بل پہ زندہ ہے
اسے یہ دکھ کہ کسی نے ہمیں سراہا کیوں
۔۔۔۔۔۔۔
حادثہ بھی نہیں ہوا کوئی
پھر بھی دل میں رکا نہیں کوئی
ایک تو آندھیوں کی زد میں ہیں
اور پھر آسرا نہیں کوئی
۔۔۔۔۔۔
خدا کے بعد ہر لمحہ تِرا اظہار کرتے تھے
وہ دن بیتے کہ جب ہم تم سے اتنا پیار کرتے تھے
وہ چاہے جس سے بھی سر زد ہوا کرتا تھا لیکن ہم
تمھارے واسطے ہر جرم کا اقرار کرتے تھے
۔۔۔۔۔
جو جو دشمن میرے بس سے باہر تھا
میں نے اسکو اپنے اندر مار دیا