PDA

View Full Version : قرارِ جاں بھی تمھی، اضطرابِ جاں بھی تمھی



تانیہ
12-07-2010, 04:14 PM
قرارِ جاں بھی تمھی، اضطرابِ جاں بھی تمھی
مرا یقیں بھی تمھی ہو، مِرا گماں بھی تمھی

تمھاری جان ہے نکہت، تمھارا جسم بہار
مِری غزل بھی تمھی، میری داستاں بھی تمھی

یہ کیا طِلسم ہے، دریا میں بن کے عکسِ قمر
رُکے ہوئے بھی تمھی ہو، رواں دواں بھی تمھی

خدا کا شکر، مرا راستہ معیّن ہے
کہ کارواں بھی تمھی، میرِ کارواں بھی تمھی

تمھی ہو جس سے ملی مجھ کو شانِ استغنا
کہ میرا غم بھی تمھی، غم کے رازداں بھی تمھی

نہاں ہو ذہن میں وجدان کا دُھواں بن کر
افق پہ منزلِ ادراک کا نشاں بھی تمھی

تمام حُسنِ عمل ہوں، تمام حُسنِ بیاں
کہ میرا دل بھی تمھی ہو، مرِی زباں بھی تمھی

نگار
04-01-2012, 01:17 PM
یہ کیا طِلسم ہے، دریا میں بن کے عکسِ قمر
رُکے ہوئے بھی تمھی ہو، رواں دواں بھی تمھی

بہت خوب

این اے ناصر
04-01-2012, 02:47 PM
قرارِ جاں بھی تمھی، اضطرابِ جاں بھی تمھی
مرا یقیں بھی تمھی ہو، مِرا گماں بھی تمھی

تمھاری جان ہے نکہت، تمھارا جسم بہار
مِری غزل بھی تمھی، میری داستاں بھی تمھی

واہ بہت خوب۔ شکریہ