PDA

View Full Version : لیاری کے مظلوم عوام



سید انور محمود
10-14-2012, 04:00 PM
از طرف: سید انور محمود
ویسے تو پورا کراچی ہی ایک آفت زدہ شہر بنا ہوا ہے جہاں موت کا رقص ہر روز ہورہا ہے۔ ابلیں بھی حیران اور پریشان ہوگا کہ یہ کون ہیں جو میرا کام مجھ سے زیادہ کررہے ہیں۔ اسی آفت زدہ شہر میں ایک علاقہ لیاری کا بھی ہے۔لیاری جو پیپلز پارٹی کا گڑھ تھا یا ہے کچھ عرصے کی خاموشی کے بعد دوبارہ گینگ وار کی وجہ سے آجکل پھر خبروں میں اجاگر ہے- لیاری میں رہنے والوں کی اکثریت بلوچ ہے- یہ بہت محبت کرنے والے لوگ ہیں، آپ صرف ان کو واجا یعنی بھای کہہ کر پکاریں یہ واقعی آپکے ساتھ بھای والا سلوک کرینگے مگر بدنصیبی کہ جہالت اور بےروزگاری نے ان میں سے کچھ کو برایوں میں دھکیل دیا ہے-
لیاری ٹاؤن شہر کے جنوب مغربی حصے میں واقع ہے۔ یہ رقبے کے لحاظ سے کراچی کا سب سے چھوٹا قصبہ ہے تاہم کثافت آبادی یہاں سب سے زیادہ ہے۔ 1998ء کی مردم شماری کے مطابق یہاں کی آبادی تقریبا 6لاکھ 8 ہزار ہے۔ اس کی سرحدیں مشرق میں صدر اور جمشید ٹاؤن سے ملتی ہیں جبکہ شمال مغرب میں سائٹ ٹاؤن واقع ہے۔ جنوب و جنوب مغرب میں کیماڑی ٹاؤن واقع ہے۔ لیاری کراچی کا ایک بہت پرانا اور بدنصیب وہ علاقہ ہے جہاں اکژیت میں غریب لوگ رہتے ہیں – لیاری کے 11علاقے آگرہ تاج کالونی، بہار کالونی ، رانگیواڑہ، سنگولین، علامہ اقبال کالونی، چاکیواڑہ، شاہ بیگ لین، دریا آباد، نوا آباد، کھڈا میمن، بغدادی ہیں- آپ ان میں سے کسی علاقے میں بھی چلے جایں آپکو ہر طرف غربت، جہالت اور لاچاری دیکھنے کو ملے گی- لیاری کیوں ایسا ہے ؟ اس کا جواب ہے کہ لیاری کا سیاسی استھسال ہمیشہ سے کیا گیا- پہلےاس علاقے پر ہارون خاندان نے راج کیا پھر 1970 میں یہ غربت اور جہالت کا مارا علاقہ روٹی، کپڑا اور مکان کا نعرہ لگانے والے جناب بھٹو کے ساتھ ہوگیا- یہ علاقہ 1970 سے آج تک پاکستان پیپلز پارٹی کا گڑھ ہے مگر آج تک اس علاقے میں کچھ بھی تبدیل نہ ہوا – اور تو اور لیاری کے لوگوں کو پینے کا صاف پانی بھی ایم کیوایم کے سابق سٹی ناظم جناب مصطفی کمال نے پہنچایا- جناب بھٹو سے لیکر آج تک پیپلز پارٹی کی چوتھی حکومت ہے مگر ویسے تو پورے پاکستان کا ہی کچھ نہیں بدلا بلکہ پاکستان پیچھے چلا گیا مگر آج جو لیاری کا حال ہے اُس پر ہر پاکستانی کو فکر ہے- لیاری میں جرائم پیشہ عناصرتو ہمیشہ سے ہی رہے ہیں مگر آج جیسی صورتحال کبھی نہ تھی- سندھ کےسابق صوبائی وزیرداخلہ ڈاکٹر ذوالفقار مرزا نے لیاری پر جو کمال مہربانی کیا آج لیاری میں رہنے والے اُس کی بھرپور قیمت ادا کررہے ہیں - رحمان ڈکیت جیسے لوگ ذوالفقار مرزا کی ہی پیداوار ہیں اور گینگ واربھی ان ہی کی مہربانی ہے - جرائم پیشہ عناصر کے خلاف گزشتہ دنوں قانون نافذ کرنے والے اداروں نے پانچ بڑے آپریشن کیے جن میں 22ہلاکتیں ہوئیں مگر حالات جوں کے توں ہیں۔ چار مرتبہ پاکستان پر حکومت کرنے اور روٹی، کپڑا اور مکان کا نعرہ لگانے والی پیپلز پارٹی آج لیاری کے غریب عوام کوگولی، کفن اور بےگھر ہونے کا تحفہ دے رہی ہے اور دوسری طرف زرداری اسی حلقے سے آئندہ انتخابات میں بلاول بھٹو زرداری کو انتخابات لڑانے کی خواہش بھی ظاہر کر چکے ہیں۔ اب لیاری لوگ جلدہی کچھ اسطرح سے نعرہ لگاینگے:
کل بھی بھٹو زندہ تھا – کل بھی میں بھوکا تھا –
آج بھٹو کا داماد زندہ ہے – آج بھی میں بھوکا ہوں –
اللہ تعالی لیاری کے غریبوں کی مشکلات دور کرے اور وہاں جلد امن وسکون ہو – آمین
___________________________________
نوٹ: اس تحریر کو پڑھنے پر میں آپکا شکرگذار ہوں۔ آپ کی راےَ میری آیندہ تحرریوں میں میری مددگار ہوگی-

شاہنواز
10-14-2012, 04:19 PM
بہت پر اثر تحریر دل کی آواز جب تک آپ جیسیے لوگ نہیں سامنے نہیں آئیں گے تو تقدیر نهیں بدلے گی ایک لیاری فورم بنایا جائۓ