PDA

View Full Version : صرف بالغ لڑکیوں کیلئے ،پلیز پلیز اس کو مرد حضرات نہ پڑھیں



سقراط
11-23-2012, 11:04 AM
یہ بات تو سہی ہے کہ ہر بات ہرایک کیلئے نہیں ہوتی بعض باتوں میں پردہ داری بھی ہوتی ہے کچھ ایسا پڑھنے والا مواد بھی ہوتا ہے جسے بالغ لڑکیاں ہی پڑھ سکتی ہیں اور وہ بالغ یا نا بالغ مردوں یا نا بالغ لڑکیوں کے پڑھنے والا نہیں ہوتا راز داری بھی کوئی شے ہوتی ہے ۔

اس سے پہلے کہ میں آپ کوجو لکھنا چاہ رہا ہوں اس کی طرف لے جاؤں آپکو میں پہلے ایک مثال سمجھاتا ہوں آپ کو یہ جان کر شاید حیرانگی ہو گی کہ گدھے کو جب کشتی میں سوار کرنا ہوتا ہے تو یہ دیہاتی لوگ کشتی کو کنارے سے لگا کر گدھے کا پچھلا حصہ کشتی کی طرف کرتے ہیں اور گدھے کا منہ اپنی طرف رکھ کر گدھے کو کانوں سے پکڑ کر اپنی طرف کھینچتے ہیں تو گدھا اپنی فطرت سے مجبور خود کو پیچھے کی طرف یعنی گدھا مخالف سمت میں پیچھے کو یکدم کھینچتا ہے تو اس طرح وہ پیچھے کشتی میں جا پڑتا ہے چونکہ گدھے کی فطرت ہے کہ اس نے الٹ کرنا ہوتا ہے ۔

بالکل یہاں بھی کچھ ایسا ہی معاملہ ہے جس بات سے جتنا منع کیا جاتا ہے لڑکے لوگ وہ کام اتنا ہی مزید زور شور سے کرتے ہیں ۔میں نے بھی جب پہلی دفعہ یہ لکھا ہواپڑھا تھا کہ صرف بالغ لڑکیوں کیلئے اور اس کو مرد حضرات نہ پڑھیں تو میں نے بھی سوچا اسے ضرور پڑھنا چاہیے ضرور کوئی بات ہو گی مگر یہ تو صرف لڑکیوں کیلئے ہے ؟اپنے پاس تو لگے ہاتھ کوئی بالغ لڑکی بھی دستیاب نہیں تھی آخر کر یہ گنجائش نکالی کہ چلو اسے عینک لگا کر پڑھتے ہیں براہ راست آنکھوں کو گنہگار نہیں کرتے پھر ہم نے جونہی پڑھنا شروع کیا تو اس وقت میری بھی غصے میں وہی کیفیت تھی جوکہ اب آپ کی ہو رہی ہو گی کیونکہ میرے ساتھ ہاتھ ہو چکا تھا ۔

دراصل وہ کسی بالغ لڑکے کی طرف سے رشتے کیلئے اشتہار تھا جس کو ظاہر ہے اپنی شادی کیلئے صرف بالغ لڑکی کی ہی ضرورت تھی اور اس لیے وہ بالغ لڑکیوں سے ہی مخاطب تھا اور اس نے مردوں کو پڑھنے سے اس لیے روکا تھا کہ پلیز پلیز اس کو مرد حضرات نہ پڑھیں کیونکہ اس کو خدشہ تھا کہ کہیں میری یہ تحریر میرے ابا حضور یا کوئی تایا ،ماموں وغیرہ نہ پڑھ لیں خاص طور پر وہ اپنے ماموں سے بچنا چاہتا تھا کیونکہ اس نے اپنے ماموں کی بے ڈھنگی سی لڑکی سے منگنی کر رکھی تھی مگر وہ اس سے شادی نہیں کرنا چاہتا تھا آخر میں جاتے ہوئے یہی کہونگا پلیز غصہ نہیں کرنا ذرا مسکرا دیجیے نا ۔:tongue38::tongue38:

منقول از دی نیوز اردو (http://www.thenewsurdu.com/urdu-columns/2012/01/28/7668.html)

بےباک
11-25-2012, 08:25 AM
ٹھیک ہے جناب ، صرف مسکرانے پر ہی اکتفا کیا ہے ،
:smiley-happy120:

سقراط
04-24-2013, 09:58 PM
:smiley-chores004:

تانیہ
04-25-2013, 10:13 PM
ہاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سرحدی
05-01-2013, 08:38 AM
بہت خوب سقراط بھائی!
میں نے بھی ٹوہ لگانے کی کوشش کی کہ آخر بالغوں کے لیے اس میں کیا لکھا ہوگا لیکن! ایسا کچھ نہ ملا اور پھر لگ گئے اپنے کام میں:
:smiley-chores017:

طوفانی
06-24-2014, 06:48 PM
ہاہاہاہا ہی لکھ کر کچھ بھی پڑھایا جا سکتا ہے