PDA

View Full Version : اداس کن پشتواشعار مع اردو ترجمہ



نورالعین عینی
04-10-2013, 04:55 AM
دَ چا پہ زړہ کے ارمانونہ پہ سلګو پراتہ وی
دَ چا قسمت کے راحتونہ پہ دلو پراتہ وی

څوک کوی خوب لاپہ چمن کي انتخاب دَ ګلو
څوک سر بربری لیونی وی پہ ازغو پراتہ وی

د چاخوخیګی نہ چہ کومہ جوړا واغوندمہ
څوک پہ کفن پورے حیرانہ پہ تختو پراتہ وی

د چا جونگړہ‘ پکښي نشتہ دہ د تیلو ډیوہ
وایہ قسمتہ پہ تیروکے بہ ترسو پراته وی




٭٭٭





کسی کے دل میں ارمان سسک رہے ہیں
کسی کی قسمت میں راحتوں کے ڈھیر لگے ہیں
کوئی چمن میں پھولوں پر سو رہا ہے



اور بکھرے بالوں والے دیوانے کانٹوں پر پڑے ہیں
کسی کی سمجھ میں نہیں آرہا کہ کون سا جوڑا پہنے
کوئی تختہ پر کفن کے لیے حیران و پریشان پڑا ہے
( یاکسی کو کفن تک دستیاب نہیں )
کسی کی جھونپڑی میں تیل کا دیا تک نہیں
بتا اے تقدیر!۔یہ کب تک تیرگی میں پڑے رہیں گے؟؟
ترجمہ: ابو سعدخان

بےباک
04-10-2013, 09:28 AM
بہت ہی خوب ، شاندار شاعری ۔۔۔شکریہ

ناز گُل
04-10-2013, 10:20 AM
ڈیر خائستہ شعرونہ دی او زہ خو ڈیرہ خوشحالہ شومہ چی پہ یو اردو فورم کئ ہم پشتو ادب تہ برخہ ورکڑی دہ
زہ بہ ہم کوشش کومہ چی ستا سرہ سہ نہ سہ لیکل کومہ۔یو زل بیہ ستا سو ڈیرہ ڈیرہ مننہ خوشحالہ اوسی

نگار
04-10-2013, 03:26 PM
کسی کی سمجھ میں نہیں آرہا کہ کون سا جوڑا پہنے
کوئی تختہ پر کفن کے لیے حیران و پریشان پڑا ہے

بہترین شاعری ارسال کرنے پہ آپ کا شکریہ

سقراط
04-10-2013, 04:02 PM
کسی کے دل میں ارمان سسک رہے ہیں
کسی کی قسمت میں راحتوں کے ڈھیر لگے ہیں
کوئی چمن میں پھولوں پر سو رہا ہے



اور بکھرے بالوں والے دیوانے کانٹوں پر پڑے ہی


بہت خوب جی پشتو شاعری بھی کمال کی ہوتی ہے
بہت چن چن کر شعروں انتخاب کیا گیا ہے

سرحدی
04-11-2013, 11:43 AM
ستاسو دہ پوسٹونہ بہ مونگ تہ انتظار وی، ستا سو ہم ڈیرہ مننہ چی خپل قیمتی وقت ہم راکو

ناز گُل
04-12-2013, 03:50 PM
ستا سو پہ نظر کی دہ رحمان بابا سہ شعرونہ عرض کومہ


خوي له بد خواهانو بې پروا یم  په
لکه اوبه د اور سزا یم  په نرم
م رگندي  و هر چا ته پخپل شکل
آئینه غوندي بې رویه بې ریا یم
قناعت مي تر خرقې لاندي اطلس دي
د درست جهان پادشاه ظاهر گدا یم  پ
ير په شل ژبو خاموش یم  د غنچې په
ه خوله گویا یم  لکه بوي هسي په پ
م هم په دا سپينو جامو معلومي
لکه ابر هم گوهر يم هم دريا يم
دراز عمر مي حاصل شوله راستیه
لکه سر و مدام سبز و تازه پایم
ې ده ورکه ک  که چا لار د عاشق
زه رحمان د گمرهانو رهنما یم

تانیہ
04-12-2013, 05:08 PM
واہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خوبصورت شیئرنگ کے لیے بہت شکریہ

نورالعین عینی
04-17-2013, 04:53 PM
ستا سو پہ نظر کی دہ رحمان بابا سہ شعرونہ عرض کومہ


خوي له بد خواهانو بې پروا یم  په
لکه اوبه د اور سزا یم  په نرم
م رگندي  و هر چا ته پخپل شکل
آئینه غوندي بې رویه بې ریا یم
قناعت مي تر خرقې لاندي اطلس دي
د درست جهان پادشاه ظاهر گدا یم  پ
ير په شل ژبو خاموش یم  د غنچې په
ه خوله گویا یم  لکه بوي هسي په پ
م هم په دا سپينو جامو معلومي
لکه ابر هم گوهر يم هم دريا يم
دراز عمر مي حاصل شوله راستیه
لکه سر و مدام سبز و تازه پایم
ې ده ورکه ک  که چا لار د عاشق
زه رحمان د گمرهانو رهنما یم

واہ۔۔۔۔زبردست! ناز گل۔۔۔میدان مو یوؤڑ۔۔۔۔ڈیر خائستہ کلام مو شریک کڑی دے د رحمان بابا۔۔

نورالعین عینی
04-17-2013, 04:54 PM
آپ سب کا بہت شکریہ کلام پسند کرنے کے لیے۔۔

سیما
04-17-2013, 09:23 PM
بہت شکریہ

ناز گُل
04-18-2013, 10:24 AM
سیما خورے تاسو ہم دا شعرونو پہ شمول برخہ واخلئ ستا سو بہ ڈیرا مننہ وی رور بے باک وائی چہ ستا سو ہم مادری ژبہ پشتو دہ منگ ستا سو نہ
ہم دا حیلہ لرو چہ پہ دی کئ ثہ نہ ثہ شامل کڑئ مننہ ستا سو خوشحالہ اوسئ

بےباک
04-18-2013, 07:20 PM
ناز گل خور بلکل ٹھیک لیکلی دی
تاسو لازمی اخپلہ برخہ واچوی
ڈیرہ مننہ ۔۔۔۔
اوکے یواہ خبرہ بلہ، چہ شعر غمجن نہ وی بس۔

ناز گُل
04-19-2013, 11:17 AM
زہ بہ کوشش کومہ چی غمگین شعرونہ نہ پوسٹ کوم ستا سو ہم ڈیرا ڈیرا مننہ گرانہ بے باک

ناز گُل
04-19-2013, 11:17 AM
سمیع الدین افغانی


داتريو تندی د پردي کورپه سړي بد لګيږي

بل نغری دبل چا اورپه سړي بد لګيږي



چې موژوندون دبل په کلواو کوڅو تيريږي

محتاج وختونه د پيغور په سړي بد لګيږي



بدې شيبې د محتاجي په اجنبي ملکو کې

دا محنتونه سپکې سپور په سړي بد لګیږي



د ژوند نا خوالو ستړي ستړي کړوچاره نلرو

داسې فضا د ظلم ، زورپه سړي بد لګیږي



د زړګي اه! مو تر اسمانه فريادونه کوي

دا بيغوري نا حقه تور په سړي بد لګیږي



نشته چاره دې بدحالت نه د خلاصون چرته کې

عذاب وختونه لور په لورپه سړي بد لګیږي



ربه يو لاس کړيدا خواره او مرورافغانان

د بل په لمسه وژل ورورپه سړي بد لګیږي



څو به مهاجر يو د وطن ارمان په زړه کې لرو

د غه اوږد لاس بل ته د پور په سړي بد لګیږي



نه خوشالي شته پدې سيمه نه درمان د زړګو

دا لباسي خندا د زور په سړي بد لګیږي

سقراط
04-19-2013, 02:04 PM
شئیرنگ کا شکریہ
مگر مجھے سمجھ نہیں آتا
میرے ان بھائیوں اور بہنوں کی طرف سے شکریہ جو پشتو سمجھ لیتے ہیں

سرحدی
04-20-2013, 09:18 AM
بہت اچھی شاعری ہے! بہت شکریہ شیئر کرنے کے لیے ۔
ویسے ایک بات سمجھ میں نہیں آتی سوچا آپ بزرگوں سے پوچھ لوں!
آج کل رحمان بابا، خوشحال خان خٹک، فراز اور دیگر شعراء کے اصل کلام اور شعر میں تمیز کرنا بہت مشکل ہوگیا ہے۔
بہت سارے اشعار ایسے ہوتے ہیں جو کہ کسی مشہور و معروف شاعر کے نہیں ہوتے لیکن آخر میں ان کی طرف نسبت کرکے کہہ دیا جاتا ہے کہ یہ ان کا ہے۔
مجھے یہ معلوم کرنا ہے کہ ہم یہ تمیز کیسے کریں گے؟؟
جیسے علامہ محمد اقبال ٌ کا ایک شعر ہے جس کا دوسرا مصرعہ ہے:
تو اگر میرا نہیں بنتا نہ بن اپنا تو بن
اس کو کسی نے تبدیل کرکے یہ کردیا ہے کہ:

دو بجے تھے رات کے ہر سمت تھا گہرا سکوت
اور میں فرمارہا تھا شوق سے مشقِ سخن
جاگ اُٹھی بیگم اچانک چیخ کر اس نے کہا
تو اگر میرا نہیں بنتا نہ بن اپنا تو بن

یا اسی طرح کے دیگر اشعار ہیں جیسے فراز کے اشعار ہوتے ہیں
مثلاً
فراز تیرے جانے سے دل بہت روتا ہے
اوپر پنکھا چلتا ہے نیچے مُنا سوتا ہے
وغیرہ
وغیرہ

ناز گُل
04-21-2013, 03:11 PM
پردېسي- لطف الله مشعلزه د شپې په زړه كې اوسم
د رڼا، ښكلا نه لرې
چې سبا ته ورنږدې شم
نو بيا شپې شي راته سترې

تيندكونه خورم هرګام كې
هره خوا غورځم او پرځم
په يوه خوا چې لږ لاړ شم
بيا راستون شم، بيا راګرځم

تور تمونه را خواره دي
رانه ورك لار او ګدر دى
دمنزل تم ځاى مې نشته
په ماتنګ سمه او غر دى

دغمو له لاسه تنګ يم
له ژوندونه يم بېزاره
تورو شپو يمه تنګ كړى
چېرته لاړلې سهاره
پردېسۍ كې مې ژوندون دى
له خواږه هېواده لرې
شين لوګى رانه جګيږي
وسوم زه په اور دسرې

نه د ژوند په خوږو پوى شوم
نه شوم پوى په راز دمينې
بس هر لور ته مې وحشت دى
او بهيږي هر لور وينې

خدايه! كله به سبا شي
چې پيدا شي مشعلونه
رڼا هره خوا خوره شي
او ژوندون مو شي خوندونه

نگار
04-22-2013, 12:23 AM
ایک لفظ کی بھی سمجھ نہیں آئی جب تک اس کا اردو ترجمہ نہیں کرتیں آپ
ایسے ہی بنا سمجھے پڑھتے رہینگے اور فائدہ کچھ بھی نہیں ہوگا
اس کا اردو ترجمہ کر دیں