PDA

View Full Version : روزہ ایک مؤثر علاج



تانیہ
07-14-2013, 04:31 PM
ارشاد باری تعالیٰ ہے کہ(یٰاَیُّھَاالَّذِیْنَ آمَنُوْا کُتِبَ عَلَیْکُمُ الصِّیَامُ کَمَا کُتِبَ عَلٰی الَّذِیْنَ مَنْ قَبْلِکُمْ لَعَلَّکُمْ تَتَّقُوْنَ) ''
اے ایمان والو! تم پر روزے فرض کر دیے گئے ہیں جیسا کہ تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیے گئے' تاکہ تم پرہیز گار بن جائو۔ (البقرة : ١٨٤)ایک اور آیت میں ہے کہ ''جو شخص اس مہینے میں موجود ہو وہ اس کے روزے رکھے۔'' (البقرة : ١٨٥)

حدیث نبوی ہے کہ'' جب تم اسے (یعنی ہلال رمضان کو) دیکھ لوتو روزے رکھو۔'' (بخاری (١٩٠٠))
ایک اور حدیث میں ہے کہ روزہ ارکان اسلام میں سے ایک ہے ۔(بخاری (٨))

روزہ کے فوائد :
حدیث نبوی ہے کہ ''روزے رکھو صحت مند ہو جاؤگے ۔''(الترغیب والترھیب (٨٣٢)) عصرحاضر کی جدید سائنسی تحقیق یہ کہتی ہے کہ جسم انسانی پر سال بھر میں لازما کچھ وقت ایسا آنا چاہیے جس میں اس کا معدہ کچھ دیر فارغ رہے ۔کیونکہ مسلسل کھاتے رہنے سے معدے میں مختلف قسم کی رطوبتیں پیدا ہو جاتی ہیں جو آہستہ آہستہ زہر کی صورت اختیار کر لیتی ہیں ۔لیکن روزے سے یہ رطوبتیں اور ان سے پیدا ہونے والے کئی مہلک امراض ختم ہو جاتے ہیں اور نظام انہضام پہلے سے قوی تر ہو جاتا ہے ۔روزہ شوگر 'دل اور معدے کے مریضوں کے لیے نہایت مفید ہے اور مشہور ماہر نفسیات سگمنڈ نرائیڈ کا کہنا ہے کہ روزے سے دماغی اور نفسیاتی امراض کا کلی خاتمہ ہو جاتا ہے ۔(مزید تفصیل کے لیے ملاحظہ ہو : سنت نبوی اور جدید سائنس (١٦٢١))
ڈاکٹر عبد الحمید دیان (Abdul-Hamid Dian)اور ڈاکٹر احمد قاراقز (Ahmad Qara Quz)اپنے ایک آرٹیکل "Medicine in the Glorious Qur'an."میں لکھتے ہیں کہ
''روزہ انسان کی جسمانی 'نفسیاتی اور جذباتی بیماریوں کے لیے مؤثر علاج ہے ۔یہ آدمی کی مستقل مزاجی کو بڑھاتا ہے ' اس کی تربیت کرتا ہے اور اس کی پسند اور عادات کو شاندار بنانے میں اہم کردار ادا کرتا ہے ۔روزہ انسان کو طاقتور بناتا ہے اور اس کے اچھے اعمال کو پختہ عزم دیتا ہے ۔تاکہ وہ لڑائی وفسادات کے کاموں 'چڑچڑے پن اورجلد بازی کے کاموں سے اجتناب کر سکے ۔یہ تمام چیزیں مل کر اس کو ہوشمند اور صحت مند انسان بناتی ہیں ۔ علاوہ ازیں اس کی ترقی 'قوت مدافعت اور قابلیت کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کرتا ہے تاکہ وہ مشکل حالات کا سامنا کر سکے ۔روزہ انسان کو کم کھانے کا عادی بناتا ہے اور اس کے موٹاپے کو کنٹرول کرتا ہے جس سے اس کی شکل وشباہت میں نکھار پیدا ہو جاتا ہے ۔
روزے کی وجہ سے انسان کی صحت پر جو اثرات وفوائد مرتب ہوتے ہیں وہ یہیں ختم نہیں ہوتے بلکہ روزہ انسان کو بہت سی مہلک بیماریوں سے بھی محفوظ رکھتا ہے جن میں اہم و قابل ذکر نظام انہضام کی بیماریاں ہیں مثلاجگر کی بیماریاں 'بدہضمی وغیرہ ۔علاوہ ازیں موٹاپا 'بلڈ پریشر 'دمہ'خناق اور ان جیسی دیگر بہت سی بیماریوں کا علاج ہے ۔ روزے کی حالت میں بھوک کی وجہ سے انسان کے جسم میں موجود خون کے خراب خلیوں کے ٹوٹنے کا عمل شروع ہو جاتا ہے او ران کی جگہ خون کے نئے خلیے بننے شروع ہو جاتے ہیں ۔''
ڈاکٹر شاہد اطہر (Shahid Athar)جو کہ امریکہ کی ایک یونیورسٹی''انڈیانا یونیورسٹی سکول آف میڈیسن'' کے ایسوسی ایٹ پروفیسر ہیں وہ فوائد رمضان کے متعلق اپنے ایک آرٹیکل :"The Spiritual and Health Benefits of Ramadan Fasting"میں لکھتے ہیں کہ
''روزہ ان لوگوں کے لیے بہت مفید ہے جو نرم مزاج 'اعتدال پسند اور مثالی بننا چاہتے ہیں ۔1994ء میں ایک بین الاقوامی کانفرنس ''رمضان اور صحت ''جو کہ' کاسابلانکہ 'میں منعقد ہوئی ۔اس میں طبی حوالے سے روزے کی وسعت و پھیلاؤ کے بارے میں 50اہم نکات پر روشنی ڈالی گئی ۔جس سے نظام طب کے حوالے سے بہت سے اچھے اثرات سامنے آئے حتی کہ یہ چیز بھی سامنے آئی ہے کہ روزہ مریضوں کے لیے کسی بھی طریقے سے نقصان دہ نہیں ہے ۔جو لوگ روزہ رکھتے ہیں وہ اس میں سکون اور صبر وتحمل کا درس لیتے ہیں ۔روزہ کی حالت میں انسان کی نفسانی بیماریاں کم ہو جاتی ہیں اور انسان کئی اور دوسرے جرموں سے بچ جاتا ہے ۔''