PDA

View Full Version : سیاروں کاایک نیا نظام دریافت



گلاب خان
12-14-2010, 09:07 PM
ماہرین فلکیات نے موجودہ نظام شمسی کے علاوہ پانچ سیاروںپر مبنی ایک ایسا نظام دریافت کیا ہے جو سورج نما ’ایچ ڈی‘ نامی ستارے کے مدار میں اس کے چکر لگاتا ہے۔سائنسدانوں نے اجرام فلکی کا مشاہدہ کرنے والی یوروپی رصد گاہ کے ذریعے پتہ چلایا ہےکہ سیاروں کے اس نظام سے روشنی باہر نکل رہی ہے۔ان کا کہنا ہے کہ یہ نظام ہمارے نظام شمسی کے مدار کے باہر سیاروں کا ایک اور نظام ہے۔جنیوا یونیورسٹی میں ماہرین کہتے ہیں کہ اس دریافت سے پہلے سائنسدانوں کی تمام تر توجہ انفرادی سیاروں سے متعلق معلومات جمع کرنے پر مرکوز تھی۔ تاہم اس نئی دریافت سے ہماری تحقیق ایک نئے دور میں شامل ہورہی ہے جو سیاروں کے پیچیدہ نظام کے بارے میں ہے۔تازہ تحقیق سائنسی جریدے اسٹرانومی اور ایسٹروفیزکس میں شائع کردی گئی ہے۔یہ مشاہدہ یورپی رصدگاہ میں ہوا ہے۔ اس کے سائنسدانوں کاکہنا ہے کہ نئی تحقیق میں سیاروں کے حرکت پر نظر رکھنے والے ’ہارپس‘ نامی آلے کی مدد لی گئی ہے۔ایک ماہر ڈاکٹر لویزکا کہا ہے کہ سورج نما ’ایچ ڈی‘ ستارے کے مدار میں کئی سیاروں کے یکجا ہو کر چکر لگانے کی وجہ سے یہ عمل بہت پیچیدہ نظر آتا ہے۔ ڈاکٹر لویز کہتے ہیں کہ ان کی ٹیم نے ہارپس کی مدد سے یہ معلوم کیا ہے کہ اس گھومتے ہوئے پورے نظام میں کتنے سیارے ہیں، ماہیت میں کتنے بڑے ہیں اور مدار میں پورے نظام کے ساتھ چلتے ہوئے سیارے کا اپناانفرادی راستہ کونسا ہے۔انھوں نے کہا ہے کہ مجموعی طور پر یہ نظام ’نیپچون کے طرز کے پانچ سیاروں مشتمل ہے جو ایک دوسرے سے مریخ کے برابر فاصلے پر واقع ہیں، یہ سب ہی سیارے بناوٹ میں دائرہ نما ہیں‘۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ سیاروں کا یہ نظام یکتا، کئی پہلوؤں سے منفرد اور موجودہ نظام شمسی کے اندورنی مدار سے زیادہ گنجان نظر آتا ہے۔ڈاکٹر لویز کہتے ہیں کہ اس مشاہدے سے ایک ایسے نئے نظام کا پتہ چلا ہے جو ہمارے موجودہ مدار سے باہر واقع ہے۔ ان دو نظاموں کے درمیان پائی جانے والی پیچیدہ کشش ثقل کے ذریعے نظام شمسی کے ارتقائی عمل کے بارے معلومامات ملی ہیں۔
اس کے بارے میں برطانیہ کے ایک ماہر فلکیات مارٹن ڈومین کہتے ہیں کہ’ سیاروں کا یہ نظام اپنی پیچیدہ ماہیت کی وجہ سے ایک بہت ہی معلوماتی اور دلچسپ دریافت ہے۔‘اس سے ملنے والی معلومات سے خود ہمارے وجود کے بارے میں خلائی تناطر میں سمجھنے کا موقع ملے گا۔تاہم انھوں نے کہا کہ تمام سائینسی مشاہدوں اور تحقیقات کی طرح یہ نئی تحقیق بھی اگر چند سوالوں کا جواب دیتی ہے تو کئی اور سوالوں کو جنم دیتی ہے۔اور شائد یہ ہی سوال آگے بڑھنے کا جواز فراہم کرتے ہیں۔

بےباک
12-14-2010, 11:56 PM
خوب خوب معلوماتی مضمون ھے ،
شکریہ

علی عمران
12-19-2010, 10:38 AM
واہ گلاب خان بہت خوبببببببببببببببببببببب

تانیہ
12-20-2010, 11:09 PM
تھینکس فار شیئرنگ