PDA

View Full Version : بادل برس رہا تھا وہ جب مہماں ہوا



ایم-ایم
11-27-2013, 10:08 AM
بادل برس رہا تھا وہ جب مہماں ہوا
کل شام وہ مجھ پہ عجب مہرباں ہوا

شاخِ گُلِ انار کُھلی بھی تو سنگ میں
وہ دل ترا ہوا یا لبِ خونفشاں ہوا

مرغ سحر کی تیز صدا پچھلی رات کو
ایسی تھی جیسے کوئی سفر پر رواں ہوا

ٹھنڈی ہوا چلی تو جلیں مشعلیں ہزار
جو غم نظر میں چمکا تھا اب کہکشاں ہوا

مَے بھی حریفِ دردِ تمنّا نہیں ہوئی
اپنے ہی غم کے نشے سے میں سرگراں ہوا

زردی تھی رُخ پہ ایسی کہ میں ڈر گیا منیر
کیا عطر تھا کہ صرف قبائےِ خزاں ہوا

تانیہ
11-27-2013, 07:05 PM
واہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔واہ