PDA

View Full Version : ﻭﺳﻄﯽ ﺍﯾﺸﯿﺎﺀ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺰﺭﮒ ﺗﮭﮯ



گلاب خان
01-17-2014, 01:21 AM
ﻭﺳﻄﯽ ﺍﯾﺸﯿﺎﺀ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺰﺭﮒ ﺗﮭﮯ۔۔۔
ﻣﻠﮏ ﻣﯿﮟ ﻗﺤﻂ ﭘﮍﺍ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔۔ ﺧﻠﻘﺖ
ﺑﮭﻮﮎ ﺳﮯ ﻣﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔۔ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺯ ﯾﮧ
ﺑﺰﺭﮒ ﺍﺱ ﺧﯿﺎﻝ ﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﺧﺮﯾﺪﻧﮯ ﺑﺎﺯﺍﺭ
ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﻧﮧ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ
ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ﻣﻠﮯ ، ﺑﺎﺯﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ
ﻏﻼﻡ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺟﻮ ﮨﻨﺴﺘﺎ ﮐﮭﯿﻠﺘﺎ ﻟﻮﮔﻮﮞ
ﺳﮯ ﻣﺰﺍﻕ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔۔
ﺑﺰﺭﮒ ﺍﻥ ﺣﺎﻻﺕ ﻣﯿﮟ ﻏﻼﻡ ﮐﯽ ﺣﺮﮐﺎﺕ
ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺟﻼﻝ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮔﺌﮯ۔۔۔ ﻏﻼﻡ ﮐﻮ
ﺳﺨﺖ ﺳﺴﺖ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻟﻮﮒ ﻣﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ
ﺍﻭﺭ ﺗﺠﮭﮯ ﻣﺴﺨﺮﯾﺎﮞ ﺳﻮﺟﮫ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ۔۔
۔
ﻏﻼﻡ ﻧﮯ ﺑﺰﺭﮒ ﺳﮯ
ﮐﮩﺎ۔۔۔ ﺁﭖ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﺍﻟﮯ ﻟﮕﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔۔ ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﮐﻮ
ﻧﮩﯿﮟ ﭘﺘﮧ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻥ ﮨﻮﮞ؟
ﺑﺰﺭﮒ ﺑﻮﻟﮯ ﺗﻮ ﮐﻮﻥ ﮨﮯ؟
ﻏﻼﻡ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﻓﻼﮞ ﺭﺋﯿﺲ ﮐﺎ
ﻏﻼﻡ ﮨﻮﮞ۔۔ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻟﻨﮕﺮ ﺳﮯ ﺩﺭﺟﻨﻮﮞ
ﻟﻮﮒ ﺭﻭﺯﺍﻧﮧ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔۔ ﮐﯿﺎ ﺁﭖ
ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺟﻮ ﻏﯿﺮﻭﮞ ﮐﺎ ،ﺍﺱ
ﻗﺤﻂ ﺳﺎﻟﯽ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﭧ ﺑﮭﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ۔۔ﻭﮦ
ﺍﭘﻨﮯ ﻏﻼﻡ ﮐﻮ ﺑﮭﻮﮐﺎ ﻣﺮﻧﮯ ﺩﮮ ﮔﺎ۔۔۔ ﺟﺎﺋﯿﮟ
ﺁﭖ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﯾﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﯾﺴﯽ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺯﯾﺐ
ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﯽ۔۔۔
ﺑﺰﺭﮒ ﻧﮯ ﻏﻼﻡ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﺠﺪﮮ
ﻣﯿﮟ ﮔﺮ ﮔﺌﮯ۔۔۔ ﺑﻮﻟﮯ ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺗﻮ
ﯾﮧ ﺍﻥ ﭘﮍﮪ ﻏﻼﻡ ﺑﺎﺯﯼ ﻟﮯ ﮔﯿﺎ۔۔۔ ﺍﺳﮯ ﺍﭘﻨﮯ
ﺁﻗﺎ ﭘﺮ ﺍﺗﻨﺎ ﺑﮭﺮﻭﺳﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﻢ ﺍﺳﮯ
ﻏﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﮕﺘﺎ۔۔۔
ﺍﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺗﯿﺮﯼ ﻏﻼﻣﯽ ﮐﺎ ﺩﻡ ﺑﮭﺮﺗﺎ
ﮨﻮﮞ۔۔ ﯾﮧ ﻣﺎﻧﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮧ۔۔۔ ﺗﻮ ﻣﺎﻟﮏ
ﺍﻟﻤﻠﮏ ﺍﻭﺭ ﺫﻭﻟﺠﻼﻝ ﻭﻻﺍﮐﺮﺍﻡ ﮨﮯ۔۔ ﺍﻭﺭ
ﺗﻤﺎﻡ ﮐﺎﺋﻨﺎﺕ ﮐﺎ ﺧﺎﻟﻖ ﺍﻭﺭ ﺭﺍﺯﻕ ﮨﮯ ۔۔ ﻣﯿﮟ
ﮐﺘﻨﺎ ﮐﻢ ﻇﺮﻑ ﮨﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﺎ ﺍﺛﺮ ﻟﮯ ﮐﺮ
ﻧﺎ ﺍﻣﯿﺪ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ۔۔۔ ﺑﮯ ﺷﮏ ﻣﯿﮟ ﮔﻨﺎﮦ
ﮔﺎﺭ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﮫ ﺳﮯ ﺗﯿﺮﯼ ﺭﺣﻤﺖ ﻣﺎﻧﮕﺘﺎ
ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﻨﺎﮨﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻓﯽ ﻣﺎﻧﮕﺘﺎ
ﮨﻮﮞ۔۔۔۔

گلاب خان
01-17-2014, 01:22 AM
شیخ سعد ی بیان کرتےہیں اُنہیں بچپن میں عبادت کا بہت شوق تھا.میں اپنےوالد محترم کےساتھ ساری ساری رات جاگ کر قرآن پاک کی تلاوت اور نماز میں مشغول رہتاتھا.ایک رات میں اور والد محترم
حسب معمول عبادت میں مشغول تھےہمارےپاس ہی کچھ لوگ غافل پڑےفرش پہ سو رہےتھے،میں نےاُن کی یہ حالت دیکھی تواپنےوالد صاحب سے کہا کہ ان لوگوں کی حالت پہ افسوس ہے ان سے اتنا بھی نہ ہو سکا کہ اُ ٹھ کےتہجد کی نفلیں ہی ادا کر لیتے.
والد محترم نے میری یہ بات سُنی تو فرمایا: کہ بیٹا دوسروں کو کم درجہ خیال کرنے اور بُرائی کرنےسے بہتر تھا کہ تو بھی پڑ کے سو جاتا.

بےباک
01-17-2014, 04:49 AM
جزاک اللہ ۔

تانیہ
01-21-2014, 09:30 PM
جزاک اللہ محترم