PDA

View Full Version : غزل



ساجد پرویز آنس
06-06-2014, 06:12 PM
سلام عاجزانہ
ایک تحریر لے کر حاضر ہوا ہوں ارباب محفل سے گزارش ہے کہ اپنی راۓ کا اظہار کریں اگر تحریر میں کوئی غلطی ہے تو مجھے آگاہ کریں
مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن کے وزن پہ یہ تحریر لکھنے کی کوشش کی ہے

نہاں رازِ خُدائی جس جری خاکی کے اندر ہے
وہی مردِ خدا بھی ہے وہی مردِ قلندر ہے
اگرچہ خاک صورت ہو مگر جو خوب سیرت ہو
زمانے کی نگاہوں میں وہی صلصال سندر ہے
نگاہِ خاص سے تو دیکھ سلطانِ زمن کو بھی
کہ بس انداز ہے بدلا وہی شانِ سکندر ہے
تماشا گر دکھاتے تھے کبھی جو کرتبِ بندر
وہ اب انساں مداری ہے وہی صلصال بندر ہے
یہ ہمّت ہےکسی میں اب کہ کردےجو اسےٹکڑے
سرِ بام ِ فلک آنس وہی پُر نُور چندر ہے


نہاں...چھپا ہوا
جری....بہادر
خاکی....خاک بنا ہوا مراد انسان
سندر....خوبصورت
سلطانِ زمن....وقت کا بادشاہ.زمانے کا بادشاہ
کرتب....کھیل تماشا
سرِ بام فلک....سر سے اوپر آسمان پر
چندر....چاند

بےباک
06-06-2014, 10:28 PM
نظم بے حد پسند آئی ، ماشاء اللہ ، چشم بد دور



نہاں رازِ خُدائی جس جری خاکی کے اندر ہے
وہی مردِ خدا بھی ہے وہی مردِ قلندر ہے
اگرچہ خاک صورت ہو مگر جو خوب سیرت ہو
زمانے کی نگاہوں میں وہی صلصال سندر ہے
نگاہِ خاص سے تو دیکھ سلطانِ زمن کو بھی
کہ بس انداز ہے بدلا وہی شانِ سکندر ہے


اچھی اٹھان ہے ، آپ کی شاعری پڑھ کر دلی خوشی ہوئی ،
جزاک اللہ

جاذبہ
06-08-2014, 10:40 PM
وعلیکم اسلام
بہت اچھی لکھی ہے آپ نے یہ غزل ماشاءاللہ!!!
پہلا شعر پڑھنے والے کی تمام تر توجہ حاصل کر لیتا ہے چونکہ میں کوئی شاعرہ نہیں صرف پڑھنے کا شوق رکھتی ہوں تو زیادہ گہرائی اور غزل کہنے کے رموز و اوقاف سے نا واقف ہوں ۔ پر اتنا محسوس کیا کہ ایک لفظ کی تکرار بھلی معلوم نہیں ہوتی اور نہ ہی میں نے اچھے شاعروں کی غزلیات میں ایسا دیکھا ہے . جیسے آپکی غزل میں لفظ "صلصال" دو جگہ استعمال ہوا اگر الفاظ کے چناؤ میں یکسانیت ہو تو غزل کا حسن ماند پڑتا ہے .
ویسے آپکی غزل کا مضمون بہت اچھا ہے ۔ :smiley027::smiley027::smiley026::smiley026:

ساجد پرویز آنس
06-09-2014, 01:33 PM
سلام عاجزانہ
جاذبہ صاحبہ ہم آپ کے شکر گزار ہیں ہیں آپ نے ہماری تحریر پڑھی اور اپنی راۓ کا اظہار کیا اور ہمیں غلطی سے آگاہ کیا
چونک ابھی ہم طفل مکتب ہیں اسلئے شاید الفاظ کی تراکیب میں غلطی کر گۓ
لفظ صلصال عربی زبان کا لفظ ہے جس لفظی معنی کنکھتی ہوئی مٹی کے ہیں جبکہ بعض لغات میں اس کے معنی مٹی سے بنا ہوا انسان
اور صلصال انسان کے تخلیقی مراحل میں سے ایک مرحلے کا نام ہے
یہاں پہ میں نے لفظ صلصال انسان کیلئے استعارۃ استعمال کرنے کی کوشش کی جو کہ شاید اچھے طریقے سے استعمال نہیں کرسکا تصیح کرنے کی کوشش کروں گا
ہم امید کرتے ہیں کرتے ہیں کہ آیندہ بھی ہماری تحروں پہ اپنی راۓ کا اظہار کرتی رہیں گے
دعا ہے خدا آپ کو خوش اور آباد رکھے
مجھے اپنی دعاؤں میں یاد رکھئے
فی امان اللہ

saba
07-04-2014, 11:29 PM
بہت عمدہ غزل شئیر کی آپ نے،بہت اچھی لگی،نائس آیندہ بھی اپنی غزل شئیر کرتے رہیے گا۔