PDA

View Full Version : ایمان کے محافظوں سے



حبیب صادق
06-11-2014, 12:04 AM
میں خُداوندِ بر تر کی تخلیق ہوں
جس نے پھولوں کو خوشبو، درختوں کو چھاؤں
سمندر کو پانی ہواؤں کو چلنے کی طاقت عطا کی
ستارے زمیں چاند سورج بنائے
میں کہتا ہوں سب آدمی ،آدمی ہیں
نہیں کوئی بہتر کسی سے
سوا اُن کے جو متقین ہیں،
میں کہتا ہوں اس خاک پر زندہ رہنے کا حق سب کو ہے
سب کو حق ہے کہ محنت کی تخلیق سے اپنے دامن بھریں
اس زمیں پر چلیں، آبرو سے رہیں، دل کی باتیں کہیں
مسکرا بھی سکیں
جس کی خواہش کریں اُس کو پا بھی سکیں
میں کہتا ہوں سب ابنِ آدم ہیں تو
کیوں نہ سب کو برابر کی عزت ملے
کیوں کوئی کج کلاہی کے نشے میں ہو
کیوں کسی کو فقط مرگِ تہمت ملے
میں اُن تیرہ بختوں ، سہی قسمتوں کے لئے روشنی مانگتا ہوں
جنہیں تم نے صدیوں تک اپنی غرض اور انا کی بقا کے لئے

پتھروں کی طرح بے حقیقت گنا ہے
میں اُن کے لئے بولتا ہوں جنہیں
تم نے اپنی فصاحت کے طوقِ توہم میں جکڑا ہوا ہے
جسے تم نے ہر دور میں ظلم کے ہاتھ بیچا ہے
میرا خُدا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔

بےباک
06-11-2014, 06:09 AM
میں خُداوندِ بر تر کی تخلیق ہوں
جس نے پھولوں کو خوشبو، درختوں کو چھاؤں
سمندر کو پانی ہواؤں کو چلنے کی طاقت عطا کی
ستارے زمیں چاند سورج بنائے
میں کہتا ہوں سب آدمی ،آدمی ہیں
نہیں کوئی بہتر کسی سے
سوا اُن کے جو متقین ہیں،

بہت ہی اچھی شاعری ، امجد اسلام امجد کے اعلی کلام سے چناؤ کیا گیا ہے آپ کا ذوق بھی اعلی ہے