PDA

View Full Version : دل اک خواب نگر ہے



حبیب صادق
06-13-2014, 10:12 PM
دل اک خواب نگر ہے جس میں لمحہ لمحہ
اُس کے سپنے بند آنکھوں میں نئے دریچے وا کرتے ہیں
ہر چہرے میں اُس کا چہرہ رکھ دیتے ہیں
میرے اُس کے بیچ ہزاروں دیواریں ہیں
رسموں اور رواجوں کی
بیگانوں کی قاتل نظروں اور اپنوں کی باتوں کی
اُس کی بے پروائی کی اور اپنی پاگل سوچوں کی
کالی دُشمن راہوں کی
میں اس ظالم اندھی اور منہ زور فضا میں اک بے مایہ ذرہ تھا
جو اپنے سے لاکھوں میں گُم تھا
اُس کے خواب نے میری آنکھیں روشن کی ہیں
خاموشی میں جادو ہے تو پھر وہ جادو گر ہے
اُس کی چُپ نے میرے دل کو نطق دیا ہے
میں قطرہ تھا اُس کی ذات سمندر ہے
اُس کی محبت نے مجھ کو تخلیق کیا ہے
ارمانوں کی بانجھ ہوائیں
آنکھوں کے گُمنام جزیروں میں چلتی ہیں
اور خواہش کے خُشک درختوں کی شاخوں میں
سائیں سائیں کرتی ہیں
موسم آنکھیں پھیر کے دل کے درد نگر سے چل دیتے ہیں
بادل ویرانے پہ گھر کر بن برسے چل دیتے ہیں
اُس کے بنا آواز کی کرنیں۔ آنکھیں۔ پھول، ستارے، پتھر
دل اک شہرِ سنگ ہے جس میں گلیاں ،باغ، منارے، پتھر
خواہش جادو کی بستی ہے، مُڑ کے دیکھو، سارے پتھر
دریاؤں کے دھارے پتھر
وہ آئے تو پتھر کو آواز ملے
شہرِ سنگ کے دروازوں کو وا کرنے کا راز ملے
دل اک خواب نگر ہے اس کے خوابوں کو آغاز ملے
۔۔۔۔۔

بےباک
06-14-2014, 08:11 PM
اور خواہش کے خُشک درختوں کی شاخوں میں
سائیں سائیں کرتی ہیں
موسم آنکھیں پھیر کے دل کے درد نگر سے چل دیتے ہیں
بادل ویرانے پہ گھر کر بن برسے چل دیتے ہیں

بہت ہی خؤب ،
شاندار شاعری پیش کرنے پر شکریہ