PDA

View Full Version : اب کون ہمیں دیکھے



حبیب صادق
06-16-2014, 12:51 AM
اب کون ہمیں دیکھے
ہم لوگ کہ رستوں کی مٹی میں ہوئے مٹی!
اشکوں سے بھری آنکھیں دیکھیں تو کہاں دیکھیں
اب درد کے صحرا سے آواز نہیں آتی
رازوں سے بھرا رستہ خاموش ہے صدیوں سے
ہر سمت اُداسی ہے ہر سمت ہے ویرانی
عُمروں کی پریشانی
اس خاک پہ رکھی ہے وہ چاند سی پیشانی
جس کی تب و تابش نے صدیوں کو کیا روشن
وہ ہاتھ ہیں بے مایہ
تھیں جن کی قلم رو میں قرنوں کی جہانگیری
وہ پاؤں نہیں اُٹھتے
تھا جن کے تسلط میں امکاں کا ہر رستہ!

ہم لوگ کہ رستوں کی مٹی میں ہوئے مٹی
اب کون ہمیں دیکھے!
۔۔۔۔۔۔۔