PDA

View Full Version : زندگی نے ہم کو جینے نہیں دیا



نگار
07-06-2014, 02:47 AM
دِل کی لگی نے ایک تو جینے نہیں دیا
زاہد نے بھی شراب کو پینے نہیں دیا

اُس کے ستم سے گو مجھے کم ہی لگے زخم
لیکن کسی بھی زخم کو سینے نہیں دیا

ساقی تُو نے کیا واعظ مجھے جانا
جام ِ مئے ناب جو پینے نہیں دیا

سکوں سے اِک یتیم کی جھولی تو سب نے بھر دی
لیکن سہارا اُس کو کسی نے نہیں دیا

شاہیں دُعا قضا کی مقبول نہ ہوئی
اور زندگی نے ہم کو جینے نہیں دیا