PDA

View Full Version : میں ورق ورق ترے سامنے ترے روبرو ترے پاس ھوں



نگار
07-10-2014, 05:46 AM
وہ جو دعویدار ھے شہر میں کہ سبھی کا نبض شناس ھوں
کبھی آ کے مجھ سے تو پوچھتا کہ میں کس کے غم میں*اداس ھوں


یہ مری کتاب حیات ھے اسے دل کی آنکھ سے پڑھ ذرا
میں ورق ورق ترے سامنے ترے روبرو ترے پاس ھوں


یہ تری امید کو کیا ھوا کبھی تو نے غور نہیں *کیا
کسی شام تو نے کہا تو تھا تری سانس ھوں تری آس ھوں


یہ جو شہر فن میں *قیام ھے سو ترے طفیل ھی نام ھے
مرے شعر کیوں نہ گداز ھوں کہ ترے لبوں کی مٹھاس ھوں


یہ تری جدائی کا غم نہیں کہ یہ سلسلے تو ھیں*روز کے
تری ذات اس کا سبب نہیں کئی دن سے یونہی اداس ھوں

کسی اور کی آنکھ سے دیکھ کر مجھے ایسے ویسے لقب نہ دے
ترا اعتبار ھوں جان من نہ گمان ھوں نہ قیاس ھوں

1578

saba
07-10-2014, 09:42 AM
یہ مری کتاب حیات ھے اسے دل کی آنکھ سے پڑھ ذرا
میں ورق ورق ترے سامنے ترے روبرو ترے پاس ھوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ واہ زبردست۔

نگار
07-10-2014, 04:52 PM
واہ زبردست کہنے کا بہت بہت شکریہ