PDA

View Full Version : بڑی آگ ہے، بڑی آنچ ہے، ترے میکدے کے گلاب میں



نگار
07-13-2014, 01:33 AM
بڑی آگ ہے، بڑی آنچ ہے، ترے میکدے کے گلاب میں
کئی بالیاں ، کئی چوڑیاں یہاں گھل رہی ہیں شراب میں

وہی لکھنے پڑھنے کا شوق تھا ، وہی لکھنے پڑھنے کا شوق ہے
ترا نام لکھنا کتاب پر، ترا نام پڑھنا کتاب میں

وہ بدن سخن کا جمال ہے، وہ جمال اپنی مثال ہے
کوئی ایک مصرعہ نہ کہہ سکا، کبھی اس غزل کے جواب میں

یہ نوازشیں یہ عنایتیں، ترا شکر کیسے ادا کروں
سرِ راہ پھول بچھا دیے، مرے آنسوؤں کے جواب میں

مرے زرد پتوں کی چادریں بھی ہوائیں چھین کے لے گئیں
میں عجب گلاب کا پھول ہوں‘جو برہنہ سر ہے شباب میں

یہ دُعا ہے ایسی غزل کہوں ‘کبھی پیش جس سے میں کرسکوں
کوئی حرف تیرے حضور میں‘کوئی شعر تیری جناب میں