کیا آس لگائے بیٹھے ہو.؟


جو ٹوٹ گیا، سو ٹوٹ گیا


کب اشکوں سے جڑ سکتا ہے


جو ٹوٹ گیا، سو چھوٹ گیا