ساقیا ایک نظر جام سے،،،،،،، پہلے پہلے
ہم کو جانا ہے کہیں شام سے، پہلے پہلے

نو گرفتار وفا،،،،،،،،،،، سعی رہائی ہے عبث
ہم بھی الجھے تھے بہت دام سے، پہلے پہلے

خوش ہو اے دل کہ محبت تو نبھا دی تو...