تلاش:

Type: Posts; رکن: حبیب صادق

صفحہ 1 از 20 1 2 3 4

تلاش: تلاش 0.06 سیکنڈ تک جاری رہی۔

  1. موضوع: اشارے

    از حبیب صادق
    جوابات
    0
    مناظر
    1

    اشارے

    اشارے


    شہر کے مکانوں کے

    سرد سائبانوں کے

    دل ربا تھکے سائے

    خواہشوں سے گھبرائے
  2. موضوع: خلش

    از حبیب صادق
    جوابات
    0
    مناظر
    1

    خلش

    خلش

    وہ خوبصورت لڑکیاں
    دشت وفا کی ہرنیاں
    شہر شب مہتاب کی
    بے چین جادو گرنیاں
    جو بادلوں میں کھو گئیں
    نظروں سے اوجھل ہو گئیں
    اب سرد کالی رات کو
    آنکھوں میں گہرا غم لیے
  3. موضوع: کلپنا

    از حبیب صادق
    جوابات
    0
    مناظر
    1

    کلپنا

    کلپنا

    رات ہے کتنی گہری کالی
    دکھ کی بات سجھانے والی
    دور دور کی آوازوں کو
    اجڑے گھروں میں لانے والی
    سر پر ہے گھنگھور بدریا
    دل میں لگن پریتم کے ملن کی
    شور مچاتی بڑھتی آئے
    تیز ہوا سونے...
  4. جوابات
    0
    مناظر
    1

    اپنے گھر میں

    اپنے گھر میں

    منہ دھو کر جب اس نے مڑ کر میری جانب دیکھا
    مجھ کو یہ محسوس ہوا جیسے کوئی بجلی چمکی ہے
    یا جنگل کے اندھیرے میں جادو کی انگوٹھی دمکی ہے
    صابن کی بھینی خوشبو سے مہک گیا دالان
    اف ان...
  5. موضوع: تو

    از حبیب صادق
    جوابات
    0
    مناظر
    1

    تو

    تو

    وہاں جس جگہ پر صدا سو گئی ہے
    ہر اک سمت اونچے درختوں کے جھنڈ
    ان گنت سانس روکے ہوئے چپ کھڑے ہیں
    جہاں ابرآلود شام اڑتے لمحوں کو روکے ابد بن گئی ہے
    وہاں عشق پیچاں کی بیلوں میں لپٹا ہوا اک...
  6. جوابات
    0
    مناظر
    1

    خواہش کے خواب

    خواہش کے خواب

    گھر تھا یا کوئی اور جگہ جہاں میں نے رات گزاری تھی
    یاد نہیں یہ ہوا بھی تھا یا وہم ہی کی عیاری تھی
    ایک انار کا پیڑ باغ میں اور گھٹا متواری تھی
    آس پاس کالے پربت کی چپ کی دہشت طاری...
  7. وُضو و نَماز بیماریوں سے بچاتے ہیں، نماز کے 21 بڑے فوائد

    وُضو و نَماز بیماریوں سے بچاتے ہیں، نماز کے 21 بڑے فوائد

    نماز کے فوائد

    پیارے بھائیو! نماز میں جس طرح مصیبتوں کا علاج ہے اِسی طرح اِس میں بیماریوں کا بھی علاج ہے، خود طبیبوں کواِعتراف ہے کہ وضو...
  8. موضوع: حقیقت

    از حبیب صادق
    جوابات
    0
    مناظر
    2

    حقیقت

    حقیقت

    نہ تو حقیقت ہے اور نہ میں
    اور نہ تیری میری وفا کے قصے
    نہ برکھا رت کی سیاہ راتوں میں
    راستہ بھول کر بھٹکتی ہوئی سجل ناریوں کے جھرمٹ
    نہ اجڑے نگروں میں خاک اڑاتے
    فسردہ دل پریمیوں کے...
  9. جوابات
    0
    مناظر
    1

    دشمن کی طرف دوستی کا ہاتھ

    دشمن کی طرف دوستی کا ہاتھ

    میرے جسم میں زہر ہے تیرا
    میرا دل ہے تیرا گھر
    تو موجود ہے ساتھ ہمیشہ
    خوف سا بن کر شام و سحر
    تیرا اثر ہے میرے لہو پر
    جیسے چاند سمندر پر
    اتنی زرد ہے رنگت تیری ...
  10. جوابات
    0
    مناظر
    1

    میں اور بادل

    میں اور بادل

    شام کا بادل نئے نئے انداز دکھایا کرتا ہے
    کبھی وہ ننھا بچہ بن کر میرے سامنے آتا ہے
    کبھی وہ اپنا خون بہا کر میرے جی کو ڈراتا ہے
    کبھی کسی ہنس مکھ عورت کی طرح مجھے بہلاتا ہے
    پھر...
  11. جوابات
    0
    مناظر
    1

    وطن میں واپسی

    وطن میں واپسی

    کل وہ ملی جو بچپن میں میرے بھائی سے کھیلا کرتی تھی
    جانے تب کیا بات تھی اس میں مجھ سے بہت ہی ڈرتی تھی
    پر کیا ہوا؟ وہ کہاں گئی؟ اب کون یہ باتیں جانتا ہے
    کب اتنی دوری سے کوئی...
  12. جوابات
    0
    مناظر
    1

    پہلی بات ہی آخری تھی

    پہلی بات ہی آخری تھی

    پہلی بات ہی آخری تھی
    اس سے آگے بڑھی نہیں
    ڈری ہوئی کوئی بیل تھی جیسے
    پورے گھر پہ چڑھی نہیں
    ڈر ہی کیا تھا کہہ دینے میں
    کھل کر بات جو دل میں تھی
    آس پاس کوئی اور نہیں...
  13. ان لوگوں سے خوابوں میں ملنا ہی اچھا رہتا ہے

    ان لوگوں سے خوابوں میں ملنا ہی اچھا رہتا ہے

    تھوڑی دیر کو ساتھ رہے کسی دھندلے شہر کے نقشے پر
    ہاتھ میں ہاتھ دیے گھومے کہیں دور دراز کے رستے پر
    بے پردہ استھانوں پر دو اڑتے ہوئے گیتوں کی طرح
    غصے...
  14. موضوع: جادوگر

    از حبیب صادق
    جوابات
    0
    مناظر
    1

    جادوگر

    جادوگر

    جب میرا جی چاہے میں جادو کے کھیل دکھا سکتا ہوں
    آندھی بن کر چل سکتا ہوں بادل بن کر چھا سکتا ہوں
    ہاتھ کے ایک اشارے سے پانی میں آگ لگا سکتا ہوں
    راکھ کے ڈھیر سے تازہ رنگوں والے پھول اگا...
  15. جوابات
    0
    مناظر
    1

    ایک لڑکی

    ایک لڑکی

    ذرا اس خود اپنے ہی
    جذبوں سے مجبور لڑکی کو دیکھو
    جو اک شاخ گل کی طرح
    ان گنت چاہتوں کے جھکولوں کی زد میں
    اڑی جا رہی ہے
    یہ لڑکی
    جو اپنے ہی پھول ایسے کپڑوں سے شرماتی
    آنچل سمیٹے...
  16. جوابات
    0
    مناظر
    1

    اک اور گھر بھی تھا مرا

    اک اور گھر بھی تھا مرا

    اک اور گھر بھی تھا مرا
    جس میں میں رہتا تھا کبھی
    اک اور کنبہ تھا مرا
    بچوں بڑوں کے درمیاں
    اک اور ہستی تھی مری
    کچھ رنج تھے کچھ خواب تھے
    موجود ہیں جو آج بھی
    وہ گھر...
  17. جوابات
    0
    مناظر
    1

    میں اور وہ

    میں اور وہ

    روز ازل سے وہ بھی مجھ تک آنے کی کوشش میں ہے
    روز ازل سے میں بھی اس سے ملنے کی کوشش میں ہوں
    لیکن میں اور وہ ہم دونوں
    اپنی اپنی شکلوں جیسے لاکھوں گورکھ دھندوں میں
    چپ چپ اور حیران...
  18. جوابات
    0
    مناظر
    1

    میں اور شہر

    میں اور شہر

    سڑکوں پہ بے شمار گل خوں پڑے ہوئے
    پیڑوں کی ڈالیوں سے تماشے جھڑے ہوئے
    کوٹھوں کی ممٹیوں پہ حسیں بت کھڑے ہوئے
    سنسان ہیں مکان کہیں در کھلا نہیں
    کمرے سجے ہوئے ہیں مگر راستہ نہیں ...
  19. جوابات
    0
    مناظر
    1

    صدا بصحرا

    صدا بصحرا

    چاروں سمت اندھیرا گھپ ہے اور گھٹا گھنگھور
    وہ کہتی ہے کون
    میں کہتا ہوں میں
    کھولو یہ بھاری دروازہ
    مجھ کو اندر آنے دو
    اس کے بعد اک لمبی چپ اور تیز ہوا کا شور
    منیر نیازی
  20. خوبصورت زندگی کو ہم نے کیسے گزارا

    خوبصورت زندگی کو ہم نے کیسے گزارا

    آج کا دن کیسے گزرے گا کل گزرے گا کیسے
    کل جو پریشانی میں بیتا وہ بھولے گا کیسے
    کتنے دن ہم اور جییں گے کام ہیں کتنے باقی
    کتنے دکھ ہم کاٹ چکے ہیں اور ہیں کتنے...
  21. جوابات
    0
    مناظر
    1

    ایک لڑکی

    ایک لڑکی

    ذرا اس خود اپنے ہی
    جذبوں سے مجبور لڑکی کو دیکھو
    جو اک شاخ گل کی طرح
    ان گنت چاہتوں کے جھکولوں کی زد میں
    اڑی جا رہی ہے
    یہ لڑکی
    جو اپنے ہی پھول ایسے کپڑوں سے شرماتی
    آنچل سمیٹے...
  22. موضوع: دوری

    از حبیب صادق
    جوابات
    0
    مناظر
    1

    دوری

    دوری

    دور ہی دور رہی بس مجھ سے
    پاس وہ میرے آ نہ سکی تھی
    لیکن اس کو چاہ تھی میری
    وہ یہ بھید چھپا نہ سکی تھی
    اب وہ کہاں ہے اور کیسی ہے
    یہ تو کوئی بتا نہ سکے گا
    پر کوئی اس کی نظروں کو ...
  23. جوابات
    0
    مناظر
    1

    سپنا آگے جاتا کیسے

    سپنا آگے جاتا کیسے

    چھوٹا سا اک گاؤں تھا جس میں
    دیئے تھے کم اور بہت اندھیرا
    بہت شجر تھے تھوڑے گھر تھے
    جن کو تھا دوری نے گھیرا
    اتنی بڑی تنہائی تھی جس میں
    جاگتا رہتا تھا دل میرا
    بہت قدیم...
  24. جوابات
    0
    مناظر
    2

    آخری عمر کی باتیں

    آخری عمر کی باتیں

    وہ میری آنکھوں پر جھک کر کہتی ہے ''میں ہوں''
    اس کا سانس مرے ہونٹوں کو چھو کر کہتا ہے ''میں ہوں''
    سونی دیواروں کی خموشی سرگوشی میں کہتی ہے ''میں ہوں''
    ''ہم گھائل ہیں'' سب...
  25. جوابات
    0
    مناظر
    2

    وصال کی خواہش

    وصال کی خواہش

    کہہ بھی دے اب وہ سب باتیں
    جو دل میں پوشیدہ ہیں
    سارے روپ دکھا دے مجھ کو
    جو اب تک نادیدہ ہیں
    ایک ہی رات کے تارے ہیں
    ہم دونوں اس کو جانتے ہیں
    دوری اور مجبوری کیا ہے
    اس کو...
نتائج کی نمائش 1 تا: 25 از: 500
صفحہ 1 از 20 1 2 3 4