نتائج کی نمائش 1 تا: 2 از: 2

موضوع: حضرت عمر رضی اللہ عنہ اور گویا

  1. #1
    منتظم اعلی بےباک کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    پيغامات
    6,134
    شکریہ
    2,100
    1,211 پیغامات میں 1,583 اظہار تشکر

    حضرت عمر رضی اللہ عنہ اور گویا

    ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﮧ ﻋﻨﮧ ﮐﮯ ﺩﻭﺭ ﺧﻼﻓﺖ ﻣﯿﮟ
    ﻣﺪﯾﻨﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﮔﻮﯾﺎ یعنی شاعر ﺗﮭﺎ ﺟﻮ ﮔﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ
    ﻃﺒﻠﮧ ﺳﺎﺭﻧﮕﯽ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ
    ﺍﺱ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺑﮭﺖ ﻣﻌﯿﻮﺏ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ
    ﺟﺐ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ 80 ﺳﺎﻝ ﮬﻮ ﮔﺌﯽ ﺗﻮ ﺁﻭﺍﺯ ﻧﮯ ﺳﺎﺗﮫ
    ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ
    ﺍﺏ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮔﺎﻧﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻨﺘﺎ ﺗﮭﺎ
    ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻓﻘﺮ ﻭ ﻓﺎﻗﮯ ﻧﮯ ﮈﯾﺮﮮ ﮈﺍﻝ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮐﺮ ﮐﮯ
    ﮔﮭﺮ ﮐﺎ ﺳﺎﺭﺍ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺑِﮏ ﮔﯿﺎ
    ﺁﺧﺮ ﺗﻨﮓ ﺁ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺟﻨﺖ ﺍﻟﺒﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ
    ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﭘﮑﺎﺭﺍ
    ﮐﮧ
    ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ! ﺍﺏ ﺗﻮ ﺗﺠﮭﮯ ﭘﮑﺎﺭﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺍﺳﺘﮧ
    ﻧﮩﯿﮟ۔۔۔۔۔ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﻮﮎ ﮬﮯ
    ﻣﯿﺮﮮ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮬﯿﮟ
    ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ! ﺍﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻨﺘﺎ
    ﺗﻮ ﺗﻮ ﺳﻦ
    ﺗﻮ ﺗﻮ ﺳﻦ
    ﻣﯿﮟ ﺗﻨﮓ ﺩﺳﺖ ﮨﻮﮞ ﺗﯿﺮﮮ ﺳﻮﺍ ﻣﯿﺮﮮ ﺣﺎﻝ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ
    ﻭﺍﻗﻒ ﻧﮩﯿﮟ
    ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺳﻮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺧﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ
    ﺁﻭﺍﺯ ﺁﺋﯽ
    ﻋﻤﺮ ! ﺍﭨﮭﻮ ﺑﮭﺎﮔﻮ ﺩﻭﮌﻭ ۔۔
    ﻣﯿﺮﺍ ﺍﯾﮏ ﺑﻨﺪﮦ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﭘﮑﺎﺭ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ
    ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﻨﮕﮯ ﺳﺮ ﻧﻨﮕﮯ ﭘﯿﺮ ﺟﻨﺖ
    ﺍﻟﺒﻘﯿﻊ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﻭﮌﮮ
    ﮐﯿﺎ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺟﮭﺎﮌﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﯿﺠﮭﮯ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ
    ﺩﮬﺎﮌﯾﮟ ﻣﺎﺭ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺭﻭ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ
    ﺍﺱ ﻧﮯ ﺟﺐ ﻋﻤﺮ ﮐﻮ ﺁﺗﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﺑﮭﺎﮔﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﮐﮧ
    ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺎﺭﯾﮟ ﮔﮯ
    ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺭﮐﻮ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺁﺅ
    ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺁﯾﺎ ﮨﻮﮞ
    ﻭﮦ ﺑﻮﻻ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮐﺲ ﻧﮯ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮨﮯ؟
    ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺟﯿﺲ ﺳﮯ ﻟﻮ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮨﻮ ﻣﺠﮭﮯ
    ﺍﺱ ﻧﮯ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﮭﯿﺠﺎ ﮬﮯ
    ﯾﮧ ﺳﻨﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﮔﭩﮭﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻞ ﮔِﺮﺍ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ
    ﭘﮑﺎﺭﺍ
    ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ !
    ﺳﺎﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺗﯿﺮﯼ ﻧﺎ ﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﮐﯽ ،
    ﺗﺠﮭﮯ ﺑﮭﻼﺋﮯ ﺭﮐﮭﺎ
    ﯾﺎﺩ ﺑﮭﯽ ﮐﮩﺎ ﺗﻮ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ
    ﺍﻭﺭ ﺗﻮ ﻧﮯ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ " ﻟﺒﯿﮏ " ﮐﮩﺎ
    ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺗﻨﮯ ﻋﻈﯿﻢ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﺑﮭﯿﺠﺎ
    ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺮﺍ ﻣﺠﺮﻡ ﮨﻮﮞ
    ﯾﺎ ﺍﻟﻠﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﮮ
    ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﮮ
    ﯾﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﮐﮩﺘﮯ ﻭﮦ ﻣﺮ ﮔﯿﺎ
    ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻤﺮ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﺟﻨﺎﺯﮦ
    ﭘﮍﮬﺎﺋﯽ
    ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﯿﺖ ﺍﻟﻤﺎﻝ ﺳﮯ ﻭﻇﯿﻔﮧ
    ﻣﻘﺮﺭ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ
    ﺳﺒﺤﺎﻥ ﺍﻟﻠﮧ
    ﺑﮯ ﺷﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﮍﺍ ﻏﻔﻮﺭ ﺍﻟﺮﺣﯿﻢ ﮬﮯ
    ﺣﯿﺎۃ ﺍﻟﺼﺤﺎﺑﮧ
    ہم کو کمال حاصل ہے غم سے خوشیاں نچوڑ لیتے ہیں ۔
    اردو منظر ٰ معیاری بات چیت

  2. اس مفید مراسلے کے لئے درج ذیل رُکن نے بےباک کا شکریہ ادا کیا:

    تانیہ (07-13-2015)

  3. #2
    ناظم خاص تانیہ کا اوتار
    تاريخ شموليت
    Nov 2010
    مقام
    گجرات
    پيغامات
    7,860
    شکریہ
    949
    877 پیغامات میں 1,102 اظہار تشکر

    جواب: حضرت عمر رضی اللہ عنہ اور گویا

    سبحان اللہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔



آپ کے اختيارات بسلسلہ ترسيل پيغامات

  • آپ نئے موضوعات پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ جوابات نہیں پوسٹ کر سکتے ہیں
  • آپ اٹیچمنٹ پوسٹ نہیں کر سکتے ہیں
  • آپ اپنے پیغامات مدون نہیں کر سکتے ہیں
  •  
Cultural Forum | Study at Malaysian University