جب دل میں کوئی راز چھپا ہوتا ہے
تو درد تڑپنے کی دوا ہوتا ہے
آتا ہے کبھی حشر بداماں وہ مقابل
اک قلب کا انبار لگا ہوتا ہے
عرفاؔن عبث یہ کہ ہے تقدیر کا لکھا
سوچو کہ عمل اچھا بُرا ہوتا ہے
علی عرفان عابدی