سحر کو تو آنا ہے آ کر رہے گی
کٹے کیسے لیکن یہ شب‘ کون جانے
ستاروں سے آگے بہت کچھ ہے مانا
زمیں پر بھی جینے کے ہوں کچھ بہانے