میں اور بادل

شام کا بادل نئے نئے انداز دکھایا کرتا ہے
کبھی وہ ننھا بچہ بن کر میرے سامنے آتا ہے
کبھی وہ اپنا خون بہا کر میرے جی کو ڈراتا ہے
کبھی کسی ہنس مکھ عورت کی طرح مجھے بہلاتا ہے
پھر آنکھوں سے اشارہ کر کے کمرے میں چھپ جاتا ہے
اسی طرح وہ نئے نئے انداز دکھایا کرتا ہے
جب کوئی اس کو گھور کے دیکھے ناز دکھایا کرتا ہے
منیر نیازی